01 ستمبر, 2014 | 5 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

عدالت قانون سازوں کی مدد کرسکتی ہے: چیف جسٹس

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری۔—فائل فوٹو

راولپنڈی: چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا ہے کہ عدالت ، قوانین اور قواعد و ضوابط میں ترمیم کے حوالے سے قانون سازوں کو ہدایات دے سکتی ہے۔

راولپنڈی میں جوڈیشل کمپلیکس کے افتتاح کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس نے کہا کہ اس میں کوئی شبہ نہیں کہ جج صاحبان قانون سازی نہیں کرسکتے لیکن کم سے کم اپنے تجربے اور تحقیق کی بنیاد پر فیصلوں کے ذریعے قائم فرسودہ قوانین اور قوانین میں ضروری تبدیلیاں کرنے کے لئے قانون سازوں کی مدد ضرور کرسکتے ہیں۔

جسٹس افتخار کا کہنا تھا کہ عدلیہ شہریوں کے حقوق اور ان کو فراہم کی ہوئی آزادی کی محافظ ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ عدلیہ عوام کی مشکلات اور پریشانیوں سے پوری طرح واقف ہے اور اس کے لیئے اقدامات بھی کررہی ہے۔۔

چیف جسٹس پاکستان افتخارمحمد چوہدری کہتے ہیں کہ ججز اور وکلاء کو چاہیے کہ آئینی تجاوز اور من مانیوں کے خلاف دیوار بن جائیں تاکہ پاکستان کو ایک فلاحی ریاست بنا سکیں۔

انھوں نے امید ظاہر کی کہ مضبوط عدلیہ ہی تمام چھوٹے بڑے اور امیر غریب کا فرق مٹا سکتی ہے۔

چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ راولپنڈی بار ایسوسی ایشن نے عدلیہ کی آزادی کے لیئے سب سے پہلے قدم اٹھایا تاکہ اس ملک میں عدلیہ آزاد ہوسکے۔

اس موقعے پر جسٹس شاکراللہ جان نے بات کرتے ہوئے کہا کہ عدلیہ کی بحالی نے ججز کو کیسز کے فیصلے قانون کی رو سے کرنے اور حکمرانوں کی مرضی کو جانے بغیر کرنے کا حوصلہ دیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ انھوں نے بطور ایکٹینگ چیف الیکشن کمیشنر انتخابی فہرستوں سے خامیاں دور کرکے اور نئے کمپیوٹرائزڈ انتخابی فہرستوں کو پچیس جولائی تک جاری کرنے کے اقدامات کیئے ہیں۔

ادھر جسٹس عمر عطا بندھیال کا کہنا تھا کہ تقریباً تین سو جعلی وکیل لاہور ہائی کورٹ کے بار کی لسٹ میں شامل ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ وکلاء ایسوسیشن کو اپنی ہڑتال پر جانے والی پالیسی پر نظرثانی کرنی چاہیے کیوں کہ اس سے مدعیوں کو خاصہ تقصان پہنچتا ہے۔

اس حصے سے مزید

'طاقت کا استعمال وفاقی وزیر کے حکم پر ہوا'

دارالحکومت انتظامیہ، پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ ایک وفاقی وزیر کی ہدایت پر مظاہرین کیخلاف طاقت استعمال کی گئی۔

پی ٹی وی کی عمارت مظاہرین سے خالی، نشریات بحال

پی ٹی آئی اور عوامی تحریک نے کارکنوں کو پی ٹی وی سمیت کسی سرکاری عمارت میں داخل نہ ہونے کی ہدایت دی ہے۔

پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 1.3 فیصد تک کی کمی

لیوی میں اضافہ اور روپے کی قدر میں کمی سے عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں کی کمی کے اثرات ملکی صارفین کو منتقل نہ ہوسکے۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (1)

الدی حسین لاہور
18 جولائ, 2012 10:45
مدد کر سکتی ہے کہ کیونکہ وہ کسی جج کے رشتہ دار، سفارشی یا مالی فوائد والے نہی ہونگے، اور ہر کسی کو ایک معقول گروپس اف لوگو ں نے اچھا بلا چھان بین کر منتخب کیا ہوگا، اپ کی طرح اندھا بانٹے رویڑیا ں اپنوں کو، اپنے ایک مہرباں جس نے فیصلہ حق میں دیا کو رٹیائرڈ در رٹیائرڈ کو پھر جج بنانے کی کو شش در کوشش، کیو نکہ اور تو کو ی پورے ملک میں وکیل اس قابل تھا ہی نہیں، اللہ معاف کرے تمارے اس انصافی پلڑے سے.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مودی اور مسئلہ کشمیر

کیا پاکستان مسئلہ کشمیر کو ایسے ہی رہنے دینا چاہتا ہے، تاکہ کشمیر سے زیادہ اہم افغانستان کے مسئلے پر توجہ دے سکے؟

اسلام آباد کا تماشا

عمران خان کو یہ تسلیم کرنا چاہیے کہ جوڈیشل کمیشن ایک کمزور وزیر اعظم کے اثر و رسوخ سے آزاد ہو کر تحقیقات کر سکے گا.

بلاگ

نوازشریف: قوت فیصلہ سے محروم

نواز شریف اپنے بادشاہی رویے کی وجہ سے پھنس چکے ہیں، جو فیصلے انہیں چھ ماہ پہلے کرنے چاہیے تھے وہ آج کر رہے ہیں۔

حالیہ بحران پر کچھ سوالات

مستقبل میں کیا ہو گا، بحران کا کیا حل نکلے گا، ان سوالات کے جوابات موجود نہیں ہیں، پر اس حوالے سے کئی سوالات موجود ہیں۔

پکوانی کہانی- سندھی بریانی

ہر قسم کی بریانیوں میں سے یہ بریانی منفرد حیثیت رکھتی ہے جو سندھی طریقے سے بہت زیادہ مصالحوں کے ساتھ تیار ہوتی ہے۔

‫ڈرامہ ریویو: وہ۔۔۔ دوبارہ (خوف و دہشت کا احساس)

انسان چاہے بد روحوں سے جتنا بھی ڈرے مگر ان پر بنی فلموں یا ڈراموں کو دیکھنے کا شوق پھر بھی اس کا پیچھا نہیں چھوڑتا۔