01 ستمبر, 2014 | 5 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

بیٹ مین کے پریمئیر کے دوران فائرنگ، دس ہلاک

پولیس اہلکار جائے وقوعہ کے باہر کھڑے ہوئے۔ اے پی فوٹو

ڈینور: امریکی شہر ڈینور کے ایک  سنیما گھر میں مسلح نقاب پوش شخص نے گھس کر فائرنگ کردی، جس کے نتیجے میں دس افراد ہلاک ہوگئے۔ پولیس کی ابتدائی رپورٹ میں بتایا جاتا ہے کہ فائرنگ کے اس واقعے میں کم از کم چالیس لوگ زخمی ہوئے ہیں۔

مقامی ریڈیو نے جمعے کے روز بتایا کہ واقعے کے وقت سینیما گھر میں نیو بیٹ مین کی فلم 'دی ڈارک نائٹ رائسز' دکھائی جارہی تھی۔

ریڈیو اسٹیشن کے مطابق گیس ماسک لگائے آدمی نے ارورہ کے مضافات میں واقع ایک شاپنگ مال میں گھس کر فائرنگ کی اور آنسو گیس کا استعمال بھی کیا۔

البتہ سی این این کی فوٹیج کے مطابق درجنوں پولیس اہلکار واقعے کے وقت جائے وقوہ پر موجود تھے۔

مقامی ریڈیو کے مطابق اس جگہ کو خالی کرالیا گیا ہے اور کوئی بھی تقصان پہنچانے والے آلے کی غیر موجودگی کو یقینی بنانے کے لیئے چھان بین جاری ہے۔

اس حصے سے مزید

اہم عراقی قصبے سے آئی ایس کا محاصرہ ختم

یہ آئی ایس کے خلاف عراقی حکومت کی سب سے بڑی کامیابی ہے جو رواں سال جون سے پانچ صوبوں کے بڑے حصوں پر قابض تھی۔

افغانستان: سڑک حادثے میں 23 افراد ہلاک

حادثہ ہیرات شہر اور ایرانی سرحد کے درمیان اہم شاہراہ پر پیش آیا۔

جلال آباد: طالبان کا حملہ، چھ افراد ہلاک، پچاس زخمی

افغان حکام کے مطابق زخمیوں میں زیادہ تر عام شہری ہیں، جبکہ حملہ آوروں اور سیکیورٹی فورسز کے درمیان لڑائی جاری ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

احتیاطی نظربندی کا غلط قانون

فوجی اور سویلین حکومتوں نے باقاعدگی سے احتیاطی نظربندی کو اپنے مخالفین کو خاموش کرنے اوردھمکانے کے لیے استعمال کیا ہے۔

توجہ طلب شعبہ

بجلی کی لائنیں لگانے اور مرمت کرنے کو دنیا کے دس خطرناک ترین پیشوں میں شمار کیا جاتا ہے-

بلاگ

سیاست اور اخلاقیات

پتہ نہیں وہ کون سے ملک یا قومیں ہوتی ہیں جن کے عہدیدار کسی بھی ناکامی کی صورت میں فوراً اپنے عہدے سے مستعفی ہوجاتے ہیں۔

تاریخ کی تکرار

پولیس پر تشدد اور دہشت گردی کا الزام لگانے والے کیا اپنے گھروں پر کسی ایرے غیرے نتھو خیرے کو چڑھائی کی اجازت دیں گے؟

آبی مسائل کا ذمہ دار ہندوستان یا خود پاکستان؟

پاکستان میں پانی اور بجلی کے بحران کی وجہ پچھلے 5 عشروں سے پانی کے وسائل کی خراب مینیجمنٹ ہے۔

نوازشریف: قوت فیصلہ سے محروم

نواز شریف اپنے بادشاہی رویے کی وجہ سے پھنس چکے ہیں، جو فیصلے انہیں چھ ماہ پہلے کرنے چاہیے تھے وہ آج کر رہے ہیں۔