21 ستمبر, 2014 | 25 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

توہین عدالت قانون: فل کورٹ بینچ تشکیل دینے کی استدعا مسترد

سپریم کورٹ.— فائل فوٹو اے ایف پی

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے وفاق کی جانب سے توہین عدالت قانون کے خلاف درخواستوں کی سماعت کے لیے فل کورٹ بینچ تشکیل دینے کی استدعا مسترد کردی۔

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں پانچ رکنی بینچ نے توہین عدالت کے نئے قانون کے خلاف دائر درخواستوں کی سماعت آج شروع کی تو اٹارنی جنرل  اور وفاق کے وکیل عبدالشکور پراچہ نے عدالت سے استدعا کی کہ درخواستوں کی سماعت فل کورٹ کرے۔

جس پر چیف جسٹس نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ تین رکنی بینچ نے فیصلہ دیا، 5 رکنی بینچ مقدمہ کے سماعت کرے گا۔

اٹارنی جنرل نے عدالت سے یہ استدعا بھی کی کہ انہیں دو ہفتے کا وقت دے دیا جائے، پاکستان کی تاریخ میں اس طرح کا کیس پہلے نہیں آیا۔

جس پر جسٹس خواجہ نے کہا کہ وہ درست نہیں کہہ رہے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ اسی طرح کا ایک کیس پہلے بھی زیر سماعت آچکا ہے،انیس سو چھیانوے میں چیف جسٹس اجمل میاں کی سربراہی میں چار رکنی بینچ نے اس کیس کی سماعت کی تھی۔

اس موقع پر اٹارنی جنرل نے جسٹس اجمل میاں کا فیصلہ پڑھ کر سنایا۔

وفاق کے وکیل عبدالشکور پراچہ نے عدالت سے استدعا کی کہ انہیں ایک دو ہفتے کا وقت دے دیں ، جسے عدالت نے مسترد کردیا۔

چیف جسٹس نے کہا کہ ہم کافی وقت دے چکے ہیں، مسئلہ بہت اہم ہے اوراس کا فیصلہ کیا جانا ضروری ہے۔

درخواست گزار باز محمد کاکڑ کے وکیل ایم ظفر نے اپنے دلائل میں کہا کہ عدلیہ کی آذادی آئین کے دیباچے میں لکھی ہوئی ہے، جس پر جسٹس جیلانی نے کہا کہ توہین عدالت کا قانون ، قانون کی حکمرانی کی توسیع ہے، ہمیں یقین ہے جب تک انصاف کا نظام موجود ہے توہین عدالت کا قانون رہے گا۔

عدالت نے درخواست گزاروں کو کل تک دلائل مکمل کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔

اس حصے سے مزید

تحریک انصاف کا لندن ملاقات کا اقرار، حکومت نے وضاحت مانگ لی

شاہ محمودقریشی نےکہاہےکہ عمران خان اورطاہرالقادری میں معاہدہ نہیں ہواجبکہ سعدرفیق کےمطابق ملاقات پوشیدہ کیوں رکھی گئی؟

ناقص انتخابی سیاہی کے استعمال پر اداروں کے ایک دوسرے پر الزامات

ای سی پی نے پی سی ایس آئی آر کی جانب سے فراہم کردہ سیاہی کے معیار کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

انسانی ترقی کی فہرست میں پاکستان جمود کا شکار

یو این ڈی پی کے ایک مطالعے کے مطابق پاکستان میں 44.2 فیصد گھرانے کثیر جہتی مفلسی کی زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

اب عمران خان کیا کریں گے؟

عمران خان انتخابی اصلاحات اور تحقیقات کی پیشکش کو تسلیم کر کے جیت سکتے تھے لیکن وہ مزید چیزیں داؤ پر لگائے جارہے ہیں۔

رودرہیم کا سبق

بچوں پر ہونیوالے جنسی تشدد پر ہماری شرمندگی کی سمت غلط ہے۔ شرم کی بات تو یہ ہے کہ ہم اس کو روکنے کی کوشش نہ کریں-

بلاگ

ڈرامہ ریویو: چپ رہو - حساس ترین موضوع پر بہترین پیشکش

زیادتی جیسے واقعات ہر وقت خبروں میں رہتے ہیں اس حوالے سے یہ ڈرامہ شعور اجاگر کرنے میں اہم کردار ادا کرسکتا ہے۔

میں باغی ہوں

اس ملک میں کہیں قانون کی حکمرانی نہیں، ہر جگہ لوٹ مار مچی ہے- کسی کو قانون کا پاس نہیں- تبدیلی آئی تو سب کا احتساب ہوگا-

دھرنے، عوام اور امید کی ہار

یہ میچ بھلے ہی جتنا بھی عرصہ جاری رہے، پر اس میں کھیلنے والے اور دیکھنے والے سب ہی ہارنے والے ہیں۔

مووی ریویو: دختر -- دلوں کو چُھو لینے والی کہانی

اپنی تمام تر خوبیوں اور کچھ خامیوں کے ساتھ اس فلم کو پاکستانی نکتہ نگاہ سے پیش کیا گیا ہے۔