20 ستمبر, 2014 | 24 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

ایل ایچ سی کا لوڈشیڈنگ یکساں کرنے کا حکم

لاہور ہائی کورٹ۔ فائل فوٹو

لاہور: لاہور ہائیکورٹ (ایل ایچ سی) نے چاروں صوبوں میں بجلی کی لوڈشیڈنگ یکساں کرنے کا حکم  دے دیا ہے۔

لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے آج سحر اور افطار کے اوقات میں لوڈ شیڈنگ کے خلاف اظہر صدیق ایڈوکیٹ کی درخواست کی سماعت کی۔

سماعات کے دوران چیف جسٹس نے قرار دیا کہ بجلی کی لوڈشیڈنگ کے معاملہ پر کسی بھی صوبہ سے امتیازی سلوک نہ کیا جائے اور مساوی بنیاد پر لوڈ شیڈنگ کی جائے۔

درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ دوسرے صوبوں میں پنجاب سے زیادہ بجلی چوری ہوتی ہے اس کے برعکس پنجاب کے مقابلے میں دوسرے صوبوں میں وصولی کم ہے۔ اس کے باوجود پنجاب سے امتیازی سلوک جاری ہے۔

درخواست گزار نے عدالت کو بتایا کہ پبلک اکاوئنٹس کمیٹی کے چئیرمین ندیم افضل چن کا بجلی کی غیر مساوی لوڈشیڈنگ کے معاملہ پر مستعفی ہونے کی دھمکی بھی امتیازی سلوک کا  اہم ثبوت ہے۔

عدالت نے درخواست پر وفاقی حکومت ،وزارت پانی وبجلی اور ڈسٹری بیوشن کمپنیوں کو سات اگست تک نوٹسز جاری کردیئے۔

عدالت نے پیپکو سے وی وی آئی پیز کی لوڈ شیڈنگ کا طریقہ بھی طلب کیا ہے۔

اس حصے سے مزید

عوامی تحریک کے کارکنوں کی نظربندی غیر قانونی قرار

لاہور ہائیکورٹ نے پنجاب بھر میں عوامی تحریک کے کارکنوں کی نظر بندی کو غیر قانونی قرار دیا، رہائی کے احکامات جاری۔

گلو بٹ پر پولیس پر حملے کی فردِ جرم عائد

جبکہ سانحہ ماڈل ٹاؤن کی ٹی وی فوٹیج میں اس کو ماڈل ٹاؤن میں پولیس کی موجودگی میں گاڑیوں کے شیشے توڑتے دکھایا گیا تھا۔

بلاول بھٹو زرداری کا پنجاب میں عوام سے پہلا رابطہ

چینیوٹ پہنچنے والے نوجوان بھٹو نے پیدل دورہ کرکے متاثرہ افراد تک رسائی حاصل کی اور ان میں امدادی سامان تقسیم کیا۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

رودرہیم کا سبق

بچوں پر ہونیوالے جنسی تشدد پر ہماری شرمندگی کی سمت غلط ہے۔ شرم کی بات تو یہ ہے کہ ہم اس کو روکنے کی کوشش نہ کریں-

رکاوٹیں توڑ دو

اشرافیہ تعلیمی نظام کا بیڑہ غرق کرنے پر تلی ہوئی ہے جو خاص طور سے 1970ء کی دہائی کے بعد سے بد سے بدتر ہورہاہے۔

بلاگ

مووی ریویو: دختر -- دلوں کو چُھو لینے والی کہانی

اپنی تمام تر خوبیوں اور کچھ خامیوں کے ساتھ اس فلم کو پاکستانی نکتہ نگاہ سے پیش کیا گیا ہے۔

پھر وہی ڈیموں پر بحث

ڈیموں سے زراعت کے لیے پانی ملتا ہے، پانی پر کنٹرول سے بجلی پیدا کی جاسکتی ہے اور توانائی بحران ختم کیا جاسکتا ہے۔

شاہد آفریدی دوبارہ کپتان، ایک قدم آگے، دو قدم پیچھے

اس بات کی ضمانت کون دے گا کہ ماضی کی طرح وقار یونس اور شاہد آفریدی کے مفادات میں ٹکراؤ پیدا نہیں ہوگا۔

وارے نیارے ہیں بے ضمیروں کے

ماضی ہو یا حال، اربابِ اختیار و اقتدار کی رشوت اور بدعنوانی کے خلاف کھوکھلی بڑھکوں کی حیثیت محض لطیفوں سے زیادہ نہیں۔