28 جولائ, 2014 | 29 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

موسیٰ گیلانی اورمخدوم شہاب کی عبوری ضمانت میں توسیع

علی موسیٰ گیلانی ۔ فائل تصویر آن لائن

لاہور ہائیکورٹ کی راولپنڈی بینچ نے ایفی ڈرین کوٹہ کیس میں رکن قومی اسمبلی علی موسٰی گیلانی اورسابق وفاقی وزیر صحت مخدوم شہاب الدین کی عبوری ضمانت میں چھ اگست تک توسیع کردی ہے۔

سماعت کے دوران  اے این ایف کے تحقیقاتی افسر نے عدالت کو بتایا کہ علی موسٰی گیلانی، مخدوم شہاب الدین تحقیقات میں تعاون نہیں کر رہے،جس پر جسٹس شیخ نجم الحسن نے تنبیہہ اگر دونوں نے تحقیقات میں تعاون نہ کیا تو ان کی ضمانت خارج کردی جائے گی۔

بعد میں عدالت نے علی موسٰی گیلانی  اور مخدوم شہاب الدین کی ضمانت میں چھ اگست تک توسیع دیدی۔ جبکہ سابق ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ ڈاکٹر رشید جمعہ اور فارما کمپنی کے سابق ڈائریکٹر رضوان احمد نے ضمانت کی درخواستیں واپس لے لیں۔

عدالت کے استفسار پر اے این ایف حکام نے بتایا کہ ان کے وعدہ معاف گواہ بننے کے بعد ان کی ضمانت کی ضرورت نہیں رہی۔

کیس کی سماعت جسٹس شیخ نجم الحسن اور جسٹس شہزاد احمد گھیبہ پر مشتمل ڈویژنل بینچ کررہی ہے۔

اس حصے سے مزید

لانگ مارچ پر حکومت سے 'ڈیل' کی تردید

عمران خان کا کہنا ہے کہ آئی ڈی پیز کے معاملے میں وفاقی حکومت اپنی ذمہ داریاں پوری نہیں کررہی۔

راولپنڈی میں ن لیگ تقسیم

راولپنڈی میں سے سردار نسیم گروپ اور حنیف عباسی گروپ کے درمیان رقابت اب ایک کھلا راز بن چکی ہے۔

گوجرانوالہ: مبینہ توہین مذہب پر تین احمدی ہلاک

مشتعل ہجوم نے فیس بک پر مبینہ ’توہین آمیز مواد کی اشاعت‘ کے بعد احمدیوں کے 5 گھر نذرِ آتش کر دیے، رپورٹ۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

جنگ اور ہوائی سفر

پرواز کرنے کا معجزہ، جو انسانی ذہانت کا خوشگوار مظہر ہے، انسان کے انتقامی جذبات اور خون کی پیاس کی نذر ہوگیا ہے

تھوڑا سا احترام

آپ ایک مایوس، خوفزدہ بیوروکریسی سے کیا توقع کرسکتے ہیں جنہیں اپنی سمت کا علم نہ ہو؟

بلاگ

ترغیب و خواہشات: رمضان کا نیا چہرہ؟

کسی مقامی رمضان ٹرانسمیشن کو لگائیں اور وہ سب کچھ جان لیں جو اب اس مقدس مہینے کے نئے چہرے کو جاننے کے لیے ضروری ہے

نائنٹیز کا پاکستان -- 1

ضیا سے مشرف کے بیچ گیارہ سال میں کبھی کرپشن کے بہانے تو کبھی وسیع تر قومی مفاد کے نام پر پانچ جمہوری حکومتیں تبدیل ہوئیں

ٹوٹے برتن

امّی کا خیال ہے کہ ایسے برتن پورے گاؤں میں کسی کے پاس نہیں۔ وہ تو ان برتنوں کو استعمال کرنے ہی نہیں دیتی

مجرم کون؟

کچھ چیزیں ڈنڈے کے زور پہ ہی چلتی ہیں، پھر آہستہ آہستہ عادت اور عادت سے فطرت بن جاتی ہیں۔