16 ستمبر, 2014 | 20 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

لاہور میں دو بم دھماکے، کم ازکم بیس زخمی

بادامی باغ فروٹ منڈی میں دھماکوں کے بعد شہر میں سکیورٹی ہائی الرٹ اور اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔ – فائل فوٹو

لاہور: بدھ کے روز لاہور کے علاقے بادامی باغ میں واقع فروٹ منڈی میں یکے بعد دیگرے دو دھماکوں سے بیس سے زائد افراد زخمی ہوگئے جن میں پانچ کی حالت تشویشناک بتائی جا رہی ہے، اسکے ساتھ پورے شہر میں سکیورٹی ہائی الرٹ اور اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ پہلا بم فروٹ منڈی کے داخلی دروازے کے پاس ریڑھی کے نیچے نصب کیا گیا تھا جبکہ دوسرا دھماکہ فروٹ منڈی سےمتصل ٹرک اڈے میں ہوا۔

دھماکے کے بعد پولیس اور ریسکیو اہلکاروں کی بھاری نفری نے جائے وقوعہ کو گھیرے میں لے لیا اور زخمیوں کومیاں منشی اورمیواسپتال منتقل کردیا گیا،جبکہ اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کرکے سینئرڈاکٹرزکو بھی طلب کرلیاگیا۔

لاہور کے مختلف علاقوں میں فروٹ منڈی دھماکوں کے بعد سیکیورٹی سخت کردی گئی ہے۔

وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے دھماکے کے زخمیوں کو بہترین طبی امداد فراہم کرنے کی ہدایات کرتے ہوئے آئی جی پولیس لاہور سے واقعے کی جلد از جلد رپورٹ طلب کرلی ہے۔

اس حصے سے مزید

پنجند ہیڈورکس پر پانی کی سطح میں اضافہ، متعدد گاؤں زیرِآب

پانی کی سطح میں اضافے کے بعد حکام نے آئندہ بارہ گھنٹے اہم قرار دیے ہیں۔

چنیوٹ کے گاؤں میں کوئی سرکاری مدد نہیں پہنچی

چناب کے کنارے اس گاؤں کی ایک خاتون کا کہنا ہے کہ غریبوں کو کچھ نہیں ملے گا، سارا امدادی سامان سینئر افسران ہڑپ کرلیں گے۔

دریائے چناب کی مختلف علاقوں کی جانب پیشقدمی جاری

پنجند ہیڈورکس میں میں پانی کے اخراج کی سطح بڑھ رہی تھی تاہم پیر کی رات نو بجے یہ چار لاکھ تیرہ ہزار کیوسک ریکارڈ کی گئی۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ڈیم، کینال، بیراج، اور ماحول

ہندوستانی پنجاب میں زیادہ بارشیں ہوئیں، جسکی وجہ سے اپ سٹریم کا پانی پاکستانی چناب اور جہلم میں بہہ آیا ہے

انتخابی اصلاحات: اگلا قدم

بحیثیت قوم ہمیں اس بات کو یقینی بنانا ہوگا، کہ اس معاملے میں سچ سب کے سامنے آئے، اور کوئی شک شبہہ باقی نا رہے۔

بلاگ

کریچر - تھری ڈی: گوڈزیلا یا ڈیوی جونز کا کزن؟

یہ کہنا غلط نہ ہوگا بپاشا ہارر تھرلرز تک محدود ہوگئی ہیں جبکہ عمران عبّاس نے انکے گرد چکر کاٹنے کے سوا کچھ نہیں کیا۔

جب خاموشی بہتر سمجھی جائے

اس بات کو تسلیم کرنا ہو گا کہ برطانوی پاکستانیوں کے پاس جنسی استحصال پر بات کرنے کے لیے آزادی نہیں ہے۔

نائنٹیز کا پاکستان - 6

اندازے کے مطابق اس دور میں پاکستانی فوج ہر ماہ اوسط ساڑھے سات کروڑ ڈالر ’مجاہدین‘ پر خرچ کر رہی تھی۔

ماضی کی جھلکیاں، میرانِ تالپورکے مقبرے

یہ دیکھ کر بہت افسوس ہوتا ہے کہ مزارات کافی خراب حالت میں ہیں۔ یہ بھی نہیں کہا جا سکتا کہ کس وقت دیواریں منہدم ہوجائیں۔