01 اکتوبر, 2014 | 5 ذوالحجہ, 1435
ڈان نیوز پیپر

صومالی قزاقوں سے رہائی، سات پاکستانی کراچی پہنچ گئے

صومالی قزاقوں کے ہاتھوں یرغمال بنائے گئے پاکستانی محمد مجتبیٰ کراچی ایئرپورٹ پر اپنی بیٹیوں کے ہمراہ ۔ اے پی تصویر

کراچی: تاوان کی ادائیگی کے بعد صومالی قزاقوں کی قید سے رہائی پانے والے سات پاکستانی کراچی پہنچ گئے، جن کا کراچی ائیر پورٹ پر شاندار استقبال کیا گیا۔

جمعرات کے روز سات پاکستانیوں کے کراچی ایئرپورٹ پہنچنے پر وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ، گورنرسندھ ڈاکٹرعشرت العباد اورمتاثرہ اہلخانہ نے ان کا استقبال کیا۔ اس موقع پر رقت آمیز مناظر بھی دیکھنے میں آئے اور رہائی پانے والے افراد نے وطن واپس پہنچنے پر خوشی کا اظہار بھی کیا۔

ایم وی ایلبیڈو نامی بحری جہاز کے عملے کو تقریباً ایک سال نو ماہ پہلے صومالی قزاقوں نے یرغمال بنایا تھا۔

گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد نے گزشتہ روز ذرائع ابلاغ کے نمائیندوں کو بتایا تھا کہ تمام پاکستانی یرغمال صومالی قزاقوں کی قید سے رہائی کے بعد اب محفوظ مقام پر ہیں اور وہ اگلے چوبیس گھنٹوں میں پاکستان آجائیں گے۔ اس خبر کے بعد یرغمال پاکستانیوں کے اہلِ خانہ میں خوشی کی لہر دوڑ گئی تھی۔

ان پاکستانیوں کوچھبیس نومبر دوہزار دس میں صومالی ساحل سے نو سو ناٹیکل میل کے فاصلے پرگرفتار کرکے  یرغمال بنایا گیاتھا۔

رہائی پانے والے افراد اور ان کے اہلخانہ کو گورنر ہاؤس  بھی لیجایا گیا جہاں گورنر اور وزیراعلیٰ سندھ، وزراء اور سیاسی شخصیات موجود تھیں۔ اس موقع پر رہائی پانے والے افراد کے اہلخانہ کی خوشی دیدنی تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ عید سے پہلے ان کی عید ہو گئی۔

رہائی پانے والے افراد نے اپنی رہائی کے لیے کی جانے والی کوششوں پر حکومت اور دیگر شخصیات کی کوششوں کو سراہتے ہوئے ان کا شکریہ ادا کیا ہے۔

اس حصے سے مزید

ممتاز بھٹو بیٹے سمیت مسلم لیگ ن سے بے دخل

سندھ نیشنل فرنٹ کے چیئرمین ممتاز بھٹو نے دعویٰ کیا ہے کہ مسلم لیگ ن نے اُنہیں بیٹے سمیت پارٹی سے نکال دیا ہے

'پاکستان میں حقیقی جدوجہد غریب اور اشرافیہ کے درمیان ہے'

آغا خان یونیورسٹی کے فکری مباحثے میں ماہرین نے سوال کیا کہ کیا ہمیں جمہوری فلاحی ریاست بننا چاہیے یا سیکورٹی اسٹیٹ؟

کراچی: فائرنگ کے مختلف واقعات، پانچ افراد ہلاک

دوسری جانب ایسٹ زون پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے چار ملزمان کو گرفتار کیا۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماؤں اور بچوں کے قاتل ہم

پاکستان سے کم فی کس آمدنی رکھنے والے ممالک پیدائش کے دوران ماؤں اور بچوں کی اموات پر قابو پا چکے ہیں۔

تبدیلی کا پیش خیمہ

اکثر ایسے بڑے واقعات پیش آتے ہیں جو تبدیلی کے عمل کو تیز کردیتے ہیں، مگر ایسے حالات کسی فرد کے پیدا کردہ نہیں ہوتے۔

بلاگ

!گو نواز گو

اس ملک میں پڑھے لکھے لوگوں کی قدر ہی نہیں۔ جب تک پڑھے لکھوں کو وی آئی پی پروٹوکول نہیں دیا جاتا یہ ملک ترقی نہیں کرسکتا

قدرتی آفات اور پاکستان

قدرتی آفات سے پہلے انتظامات پر ایک ڈالر جبکہ بعد میں سات ڈالر خرچ ہوتے ہیں، اس کے باوجود ہم پہلے سے انتظامات نہیں کرتے۔

مقابلہ خوب ہے

کوئی دنیا کے در در پر پھیلے ہمارے کشکول کی زیارت کرے، پھر اس میں خیرات ڈالنے والوں کو فتح کرنے کے ہمارے عزم بھی دیکھے۔

پاکستان میں ذہنی بیماریاں اور ہماری بے حسی

آخر ذہنی بیماریوں کے شکار کتنے اور لوگوں کو اپنے گھرانوں کی بے حسی، اور معاشرے کی جانب سے ٹھکرائے جانے کو جھیلنا پڑے گا؟