22 اگست, 2014 | 25 شوال, 1435
ڈان نیوز پیپر

پارلیمان کے اختیارات کو مقدم رکھا جائیگا: حکومتی اتحاد

ایوان صدر میں حکومتی اتحدیوں کا اجلاس۔ – آئی این پی فوٹو

اسلام آباد: اتحادی جماعتوں کے ایک اہم اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ پارلیمان کے قنون سازی کے حق پر کسی بھی صورت میں سمجھوتا نہیں کیا جائے گا اور اسکے اختیار کو مقدم رکھا جائے گا۔

جمعہ کے روز ترجمان ایوان صدر فرحت اللہ بابر نے بتایا کہ صدر آصف علی زرداری کی زیر صدارت اتحادی جماعتوں کے رہنماوں کی اجلاس کے دوران سپریم کورٹ میں توہین عدالت قانون کو کالعدم قرار دئیے جانے کے بعد کی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔

اجلاس کے دوران فیصلہ کیا گیا کہ آئین نے قانون سازی کا اختیار صرف منتخب نمائندوں کو دیا ہے اور اس حق پر کسی قیمت پر سمجھوتا نہیں کیا جائے گا۔ پارلیمان کے قانون سازی کے اختیار کو ہرحال میں مقدم رکھا جائے گا۔

اجلاس میں یہ فیصلہ بھی کیا گیا کہ کراچی میں قانون شکن عناصر سے بلا تفریق نمٹا جائے اور شہرمیں موجود بھتہ خوروں اور جرائم پیشہ عناصر سے سختی سے نمٹا جائے۔

 کراچی کے تاجروں اور صنعت کاروں کو درپیش کے مسائل کے حل کیلئے خصوصی اقدامات کا فیصلہ بھی کیا گیا۔

وزیراعظم راجہ پرویز اشرف نے اجلاس کو بجل کی صورتحال پر تفصیلی بریفنگ دی۔ اس موقع پر انہوں  نے اجلاس کو بتا یا کہ بجلی کی صورتحال بتدریج بہتر ہورہی یے اور بجلی بحران پر جلد قابو پالیا جائے گا۔

اجلاس میں صدر نے ملک کے مختلف علاقوں میں چھوٹے ڈیمز کی تعمیر کے منصوبوں کو ترجیحی بنیادوں پر مکمل کرنے ہدایت کی ترجمان ایوان صدر فرحت اللہ بابر  کے مطابق صدر نے سولر پینل پر ڈیوٹی کی شرح صفر کرنے اور  منڈا ڈیم کی تعمیر میں رکاوٹیں فوری طور  پر دور کرنے کی ہدایت بھی کی۔

اجلاس میں مسلم لیگ ق کے سربراہ چوہدری شجاعت حسین، ایم کیو ایم کے رہنما ڈاکٹر فاروق ستار اور اے این پی کے رہنما حاجی عدیل سمیت کئی دوسرے نامور رہنما بھی شریک ہوئے۔

اس حصے سے مزید

ایک کے سوا تمام جماعتیں ہماری حامی ہیں، نواز شریف

وزیراعظم نے کہا کہ پارلیمنٹ میں موجود بارہ میں سے گیارہ جماعتیں ان کی پارٹی اور جمہوری عمل کی حامی ہیں۔

مظاہرین کے خلاف ایکشن ارادہ نہیں، پرویز رشید

مارچ مظاہرین کے خلاف حکومت نے کسی قسم کی کارروائی کا فیصلہ نہیں کیا اور اس سلسلے کو جاری رکھا جائے گا۔

مارچ کے شرکاء سے ریڈ زون کے ملازمین دہشت زدہ

ریڈ زون میں کام کرنے والے تمام ملازمین پی اے ٹی کی جانب سے پارلیمنٹ ہاﺅس کے ارگرد قبضہ کے فیصلے پر دہشت زدہ ہوگئے تھے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مضبوط ادارے

ریاستی اداروں پر تمام جماعتوں کی جانب سے حملہ تب کیا گیا جب وہ ابتدائی طور پر ہی سہی پر قابلیت کا مظاہرہ کرنے لگے تھے۔

آئینی نظام کو لاحق خطرات

پی ٹی آئی کی سیاست کے ساتھ مسئلہ یہ ہے کہ یہ کسی طرح موجودہ آئینی صورت حال میں ممکن سیاسی حل کیلئے تیار نہیں ہے-

بلاگ

عمران خان کے نام کھلا خط

گزشتہ ایک ہفتے کے واقعات پی ٹی آئی ورکرز کی تمام امیدوں اور توقعات کو بچکانہ، سادہ لوح اور غلط ثابت کر رہے ہیں۔

جعلی انقلاب اور جعلی فوٹیجز

تحریک انصاف اور عوامی تحریک کی غیر آئینی حرکتوں کی وجہ سے اگر فوج آگئی تو چینلز ایسی نشریات کرنا بھول جائیں گے۔

!جس کی لاٹھی اُس کا گلّو

ہر دکاندار اور ریڑھی والے سے پِٹنا کوئی آسان عمل نہیں ہوگا شاید یہی وجہ ہے کہ سول نافرمانی کوئی آسان کام نہیں۔

ہمارے کپتانوں کے ساتھ مسئلہ کیا ہے؟

اس بات کا پتہ لگانا مشکل ہے کہ مصباح الحق اور عمران خان میں سے زیادہ کون بچوں کی طرح اپنی غلطی ماننے سے انکاری ہے۔