25 جولائ, 2014 | 26 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

ایشوریا رائے بچن اب ایک کمرشل میں

ایشوریہ رائے بچن اپنے شوہر ابھیشیک کے ساتھ۔ اے ایف پی فوٹو

دی ٹائمز آف انڈیا کے مطابق ایشوریا رائے بچن اپنی بیٹی بی، اردھیا کی پیدائیش کے نو مہینے بعد اب کیمرے کے سامنے اپنا جلواہ دیکھانے کو تیار ہیں۔

آخری بار جب ایشوریہ کیمرے کے سامنے آئیں تھیں تب ان کی بیٹی کے پیدا ہونے میں کچھ وقت باقی تھا۔ لیکن اپنی بیٹی کی پیدائیش کے بعد انہوں نے کیمرے سے دور رہنا پسند کیا تاکہ وہ اپنی بیٹی کو پوری توجہ دے پائیں۔

ایک ذرائع کے مطابق ایش نے حال ہی میں ایک جیولری برانڈ کے لیئے فوٹو شوٹ کیا۔

ذرائع نے بتایا کہ ایشوریہ نے نہ صرف بہت زیادہ وزن کم کیا ہے بلکہ چہرے پر بھی ایک چمک تھی جس نے انہیں مزید جاذب کردیا ہے۔

شری کمار، جنہوں نے اس کمرشل کو فلمایا، ان کا کہنا تھا کہ یہ ان کا ایشوریہ کے ساتھ پہلا ایڈ ہے۔

انہوں نے بتایا کہ کمرشل میں پانی کے اندر بھی کچھ سین عکس بند کرنے تھے جنہیں ایشوریہ نے بڑی مہارت سے کیا۔

اس سے پہلے بالی وڈ کے مایہ ناز ڈائریکٹر سنجے لیلہ بھنسالی بھی ایشوریہ کی تعریف کرچکے ہیں۔ لیکن وزن کم کرنے کے لیئے نہیں بلکہ اپنا وزن بڑھ جانے سے لوگوں کی تنقید کا نشانہ بننے کے باوجود اس کی پروا نہ کرنا کی وجہ سے۔

اس حصے سے مزید

بولی وڈ سٹار زہرہ سہگل کا دہلی میں انتقال

حرکت قلب بند ہونے کے سبب مشہور اداکار 102 سال کی عمر میں جمعرات کو دہلی میں انتقال کر گئیں۔

معروف شیف فرح جہانزیب انتقال کرگئیں

فرح جہانزیب بریسٹ کینسر سے اپنی جنگ ہار کر 45 سال کی عمر میں اس دنیا سے رخصت ہوئی

پاکستانی ڈراموں کیلئے ہندوستانی مارکیٹ دروازے کھل گئے

زی انٹرٹینمنٹ انٹرپرائزز لمیٹیڈ (زیل) نے اپنے چینیل پر 'زندگی' کے نام سے ٹاپ پاکستانی ڈراموں کے سلسلے کا آغاز کیا ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بے وجہ پوائنٹ اسکورنگ

ہوسکتا ہے عمران خان پی ایم ایل-ن کی حکومت گرانا چاہتے ہوں لیکن کیا وہ واقعی ملک اور اسکے جمہوری اداروں کے لئے خطرہ ہیں؟

بلاگ

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔

شکایتوں کا بن جو میرا دیس ہے

شکایتی ٹٹو زنده قوم کی نشانی ہوتے ہیں۔ مستقل شکایت کرتے رہنا اب ہماری پہچان بن چکا ہے۔

کھیلنے دو: گراؤنڈز کہاں ہیں؟

سیدھی سی بات ہے، ملائی تبھی زیادہ اور بہترین ہوگی جب دودھ زیادہ ہوگا-