02 اکتوبر, 2014 | 6 ذوالحجہ, 1435
ڈان نیوز پیپر

کابل میں بم دھماکہ، آٹھ افراد ہلاک

افغانستان میں لوگ تباہ حال گھر کے قریب کھٹرے ہیں۔ اے ایف پی فوٹو

کابل: طالبان عسکریت پسندوں کی طرف سے نصب کیے گئے ایک ریمورٹ کنٹرول بم سے افغانستان کے دارلحکومت میں منگل کے روز آٹھ افراد ہلاک ہوگئے۔

کابل پولیس کے سربراہ جنرل ایوب نے اے ایف پی کو بتایا کہ صبح پانچ بجے پکھامان ضلع میں ریمورٹ کنٹرول بم سے ایک سویلین بس پر حملہ کیا گیا جس کے نتیجے میں آٹھ افراد ہلاک اور ایک زخمی ہوا۔

جنرل ایوب کا کہنا تھا کہ بم نصب کرنے والے آدمی کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔

انھوں نے بتایا کہ اس شخص کا تعلق طالبان سے ہے۔

انھوں نے مزید بتایا کہ ہلاک ہونے والے مرد ہیں جو صبح اپنے اپنے کاموں پر پہنچنے کے لیئے جارہے تھے۔

ویسے تو سٹرک کنارے بم نصب کرنا طالبان کی طرف سے ہونے والے حملوں کا ہی طریقہ کار ہے لیکن افغان دارلحکومت میں اس طرح کے واقعات کم ہوتے ہیں۔

نیٹو کے انٹرنیشنل سیکیورٹی اسسٹنس فورس (ایساف) جس کے ایک سو تیس فوجی افغانستان میں طالبان کے خلاف چجڑی جنگ میں افغان حکومت کی مدد کررہے ہیں، ان کا کہنا ہے کہ پچھلے کچھ مہینوں سے اس نوعیت کے حملے زیادہ دیکھنے میں آرہے ہیں۔

اس حصے سے مزید

کابل میں دو خودکش بم دھماکے، چھ ہلاک

پولیس حکام کے مطابق چھ اہلکار ہلاک ہوئے ہیں، جبکہ طالبان کا دعویٰ ہے کہ ان حملوں میں کم سے کم بیس فوجی ہلاک ہوئے ہیں۔

افغان امریکا دوطرفہ سیکیورٹی معاہدے پر دستخط

افغانستان اور امریکا نے منگل کو افغان صدارتی محل میں دوطرفہ سیکیورٹی کے معاہدے پر دستخط کردیئے۔

افغان صدر اشرف غنی اور چیف ایگزیکٹیو عبداللہ نے حلف اٹھا لیا

حلف برداری کی تقریب کے موقع پر دارالحکومت کابل میں سیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کیے گئے تھے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

جنوبی پنجاب کا کیس

پنجاب اس وقت دنیا کی سب سے بڑی وفاقی اکائیوں میں سے ہے۔ آبادی اور رقبے کے لحاظ سے یہ دنیا کے کئی ممالک سے بھی بڑا ہے۔

ماؤں اور بچوں کے قاتل ہم

پاکستان سے کم فی کس آمدنی رکھنے والے ممالک پیدائش کے دوران ماؤں اور بچوں کی اموات پر قابو پا چکے ہیں۔

بلاگ

کیا آپ کی گائے برانڈڈ ہے؟

ہرعید الاضحیٰ کے ساتھ جانوروں پر شوبازی بڑھتی ہی جارہی ہے، جس سے اس مذہبی تہوار کی روحانیت خطرے میں پڑ گئی ہے۔

غیر ملکی سرمایہ کاری: حقیقت یا سراب؟

حکومت نے کئی ارب روپے سے میٹرو بس منصوبہ شروع کر رکھا ہے مگر عوام کو سیلاب سے بچانے کے لیے کوئی منصوبہ نہیں ہے۔

گو نواز گو!

اس ملک میں پڑھے لکھے لوگوں کی قدر ہی نہیں۔ جب تک پڑھے لکھوں کو وی آئی پی پروٹوکول نہیں دیا جاتا یہ ملک ترقی نہیں کرسکتا

قدرتی آفات اور پاکستان

قدرتی آفات سے پہلے انتظامات پر ایک ڈالر جبکہ بعد میں سات ڈالر خرچ ہوتے ہیں، اس کے باوجود ہم پہلے سے انتظامات نہیں کرتے۔