25 جولائ, 2014 | 26 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

ایم کیو ایم کی تحریک انصاف کو اے پی سی میں شرکت کی دعوت

ایم کیوایم کے رہنما، فاروق ستار۔ فائل فوٹو اے ایف پی

لاہور: متحدہ قومی موومنٹ نے پاکستان تحریک انصاف کو آل پارتیز کانفرنس میں شرکت کی دعوت دی ہے تاہم پی ٹی آئی کے رہنمائوں کا کہنا ہے کہ وہ کوئی بھی فیصلہ اپنی پارٹی کی اعلیٰ قیادت سے مشورے کے بعد کریں گے۔

منگل کے روز متحدہ قومی موومنٹ کے وفد نے پارٹی کے ڈپٹی کنوینر ڈاکٹر فاروق ستار کی قیادت میں تحریک انصاف کے صدر جاوید ہاشمی اور وائس چیرمین شاہ محمود قریشی سے ملاقات کی۔

ایم کیو ایم کے ڈپٹی کنوینر کا کہنا تھا کہ ملک کو داخلی اور خارجی خطرات کا سامنا ہے۔ تحریک انصاف نے ڈاکٹر فاروق ستار کے موقف کی تائید کرتے ہوئے قومی امور پر سیاسی جماعتوں کے اتفاق رائے پر زور دیا۔

ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے ڈپٹی کنوینر ڈاکٹر فاروق ستار نے کہا کہ تمام سیاسی جماعتوں سے روابط کا مقصد مجوزہ گول میز کانفرنس کے لیے تمام  جماعتوں کو یکجا کر کے مسائل  کا حل ڈھونڈنا ہے۔

تحریک انصاف کے صدر جاوید ہاشمی نے کہا کہ ملک پر خوف کا سایہ ہے۔ تحریک انصاف الیکشن  تنہا ہی لڑے گی لیکن ملکی بحرانوں سے نجات کے لیے سیاسی جماعتوں سے گفتگو کرنے کے لیے تیار ہیں۔

تحریک انصاف کے رہنماؤں کا کہنا تھا کہ وہ ایم کیو ایم کا موقف پارٹی کی اعلیٰ قیادت کے سامنے رکھیں گے۔

اس موقع پر ایم کیو ایم کے وفد نے عمران خان اور تحریک انصاف کے وفد کو نائن زیرہ کا دورہ کرنے کی دعوت بھی دی۔

اس حصے سے مزید

افتخار چوہدری ن لیگ کے 'اوپننگ بیٹسمین' قرار

حکمران جماعت کی طرف سے تمام مبینہ حکمت عملی کے باوجود چودہ اگست کو اسلام آباد میں مارچ کریں گے، شیریں مزاری

بلوچستان: ڈھائی سال میں پہلا پولیو کیس

یونیسیف کے مطابق پولیو وائرس کا شکار 18 ماہ کی بچی کا خاندان رواں سال کراچی سے قلعہ عبداللہ منتقل ہوا تھا۔

اسرائیلی جارحیت: نواز شریف کا ملک میں یومِ سوگ کا اعلان

جعمہ کوسرکاری عمارتوں پر قومی پرچم سرنگوں رہے گا، وزیراعظم نے غزہ کے متاثرین کیلئے 10لاکھ ڈالرامداد کا بھی اعلان کیا ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بے وجہ پوائنٹ اسکورنگ

ہوسکتا ہے عمران خان پی ایم ایل-ن کی حکومت گرانا چاہتے ہوں لیکن کیا وہ واقعی ملک اور اسکے جمہوری اداروں کے لئے خطرہ ہیں؟

بلاگ

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔

شکایتوں کا بن جو میرا دیس ہے

شکایتی ٹٹو زنده قوم کی نشانی ہوتے ہیں۔ مستقل شکایت کرتے رہنا اب ہماری پہچان بن چکا ہے۔

کھیلنے دو: گراؤنڈز کہاں ہیں؟

سیدھی سی بات ہے، ملائی تبھی زیادہ اور بہترین ہوگی جب دودھ زیادہ ہوگا-