26 جولائ, 2014 | 27 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

ملک ریاض پر فرد جرم عائد

سپریم کورٹ کی عمارت کا ایک منظر۔۔—اے ایف پی تصویر

اسلام آباد: بحریہ ٹاؤن کے سابق چیرمین ملک ریاض کے خلاف توہین عدالت کیس میں فرد جرم عائد کردی گئی۔ البتہ اٹارنی جنرل نے فرد جرم عائد کرنے پر اعتراض کردیا ہے۔

اس کے علاوہ ملک ریاض نے بھی صحت جرم سے انکار کیا ہے۔

ملک ریاض پر یہ فرد ایک پریس کانفرنس میں عدلیہ پر الزامات لگانے پر عائد کی گئی ہے۔ کیس کی مزید سماعت انتیس اگست کو ہوگی۔

سپریم کورٹ میں ملک ریاض نے  انٹرا کورٹ اپیل دائر کردی۔

میاں جسٹس شاکراللہ جان کی سربراہی میں عدالت عظمی کے تین رکنی بنچ ملک ریاض کے خلاف تو  ہین عدالت کیس کی سماعت کر رہا ہے۔

سماعت کے دوران ڈاکٹر عبدالباسط نے عدالت کو کہا کہ انٹرا کورٹ اپیل پر فیصلے تک توہین عدالت کی کاراوئی روک دی جائے۔

اس پر بنچ  میں موجود جسٹس اعجاز افضل کا کہان تھا کہ نیا قانون اب ختم ہوگیا ہے اور موجودہ قانون میں کاوائی جاری رکھی جاسکتی ہے۔

جسٹس اعجاز افضل نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ توہین عدالت ایکٹ دوہزار بارہ کو ایسا تصور کیا جائے جیسا کہ وہ تھا ہی نہیں۔

ڈاکٹر باسط کا کہنا تھا کہ جس دن انٹرا کورٹ اپیل دائر ہوئی اس دن توہین عدالت کا نیا قانون لاگو تھا۔

انھوں نے کہا کہ اپیل  کے آتے ہی شوکاز نوٹس اور توہین عدالت کی کاروائی معطل ہوگئی تھی۔

ڈاکٹر باسط نے عدالت سے استدعا کی کہ عید کے بعد تک کیس کی سماعت ملتوی کیا جائے۔

اس پر جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہا کہ پہلے فرد جرم عائد کرینگے اور اس کے بعد سماعت بھی ملتوی کرینگے۔

جسٹس اعجاز افضل نے کہا کہ کیا قباحت  ہے کہ اگر آج فرد جرم عائد کی جائے۔

ڈاکٹر باسط نے کہا اس سے میرا انٹرا کورٹ کا حق متاثر ہو جائے  گا۔

اس پر جسٹس جواد اس خواجہ نے کہا کہ آپ  کے انٹرا کورٹ کی اپیل کی سماعت چلتی رہے گی۔

اس حصے سے مزید

پیپلز پارٹی کی اسلام آباد فوج کے حوالے کرنے کی مخالفت

فرحت اللہ بابر نے کہا ہےکہ حکومتی فیصلے سے سنگین نتائج آسکتے ہیں،اس سے اخذ کیا جائے گا کہ سول انتظامیہ ناکام ہو گئی

انتخابی اصلاحات کے حوالے سے 33رکنی کمیٹی تشکیل

پاکستان تحریک انصاف سمیت تمام جماعتوں کے ارکان شامل ہیں، سینیٹ سے11 اور قومی اسمبلی سے 22 ارکان کمیٹی کے ارکان ہوں گے۔

اسلام آباد کو تین ماہ کیلئے فوج کے حوالے کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد کو آئین کے آرٹیکل 245 کے تحت یکم اگست سے تین ماہ کے لیے فوج کے حوالے کرنے کا فیصلہ کر لیا، چوہدری نثار۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

تھوڑا سا احترام

آپ ایک مایوس، خوفزدہ بیوروکریسی سے کیا توقع کرسکتے ہیں جنہیں اپنی سمت کا علم نہ ہو؟

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بلاگ

گھریلو تشدد: پاکستانی 'کلچر' - حقیقت کیا ہے؟

پاکستانی سماج میں عورت مرد کی جائداد اور اس سے کمتر ہے چناچہ اس کے ساتھ کسی قسم کا سلوک روا رکھنا مرد کا پیدائشی حق ہے-

ریاستی تنہائی اور اجتماعی مہاجرت

جب تک سوچنے اور سوچ کے اظہار کے لیے ممکنہ حد تک ازادی موجود نہ ہو تب تک سماج میں تکثیریت پروان نہیں چڑھ سکتی

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔