01 اگست, 2014 | 4 شوال, 1435
ڈان نیوز پیپر

پاکستان کے جوہری ہتھیار محفوظ ہیں: امریکہ

یو ایس اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کی ترجمان وکٹوریہ نیولینڈ۔ – روئٹرز فائل فوٹو

واشنگٹن: امریکہ نے کامرہ بیس حملے میں جانی نقصان پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان نےایٹمی ہتھیاروں کی حفاظت کےبہترانتظامات کررکھےہیں اور وہ ان سے مطمئن ہیں۔

یو ایس اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کی ترجمان وکٹوریہ نیولینڈ  نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کامرہ بیس پر حملے سے پاکستان کے جوہری ہتھیاروں کو کوئی خطرہ نہیں اور انہیں پاکستان کے اس بیان پر کوئی شک نہیں ہے کہ کامرہ بیس میں جوہری ہتھیار موجود نہیں ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ خطے میں امن کیلئے پاک افغان اور نیٹو تعاون ضروری ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ جوہری ہتھیاروں کے تحفظ کیلئے پاکستان کے ساتھ مسلسل رابطے میں ہیں اور پاکستانی حکومت نے ایٹیم ہتھیاروں کی تحفظ کیلئے بہترین اقدامات کررکھے ہیں۔

اس حصے سے مزید

صدر اوباما کے خلاف مواخذے کا مقدمہ چلانے کی قرار داد منظور

امریکی صدر اوباما کی حریف جماعت ریپبلیکن نے ان پر مبینہ اختیارات سے تجاوز کا الزام عائد کیا ہے۔

فلوریڈا: تین سو سال پرانا خزانہ دریافت

فلوریڈا میں ایک خاندان کو 300 سال پرانا خزانہ مل گیا جسے اسپین کے پادری مقدس مانتے ہیں۔

برلن میں بین المذاہب عبادت گاہ کی تعمیر کا منصوبہ

برلن کے ایک ربّی، پادری اور امام ایسی عمارت کی تعمیر کے لیے کوشش کر رہے ہیں، جہاں مختلف مذاہب کے لوگ اکھٹا ہوسکیں گے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ہمارا پارٹ ٹائم لیڈر

اتنی ناکارہ لیڈرشپ کی مثال مشکل سے ملیگی جس میں کسی دوراندیشی کی کوئی جھلک نہ ہو-

بجٹ اور صحت کا شعبہ

ایسا لگتا ہے کہ صحت کے بجٹ کی بڑھتی ہوئی ضروریات کیلئے عطیات دینے والے ملکوں کے پیسے پر زیادہ انحصار کیا جاتا ہے

بلاگ

پکوان کہانی: موسم گرما کی سوغات 'آم

پرانے وقتوں کے لوگوں کی دلچسپ تصور اور حکمت کی بدولت، پھلوں کا بادشاہ عام انسان کی غذا بن گیا۔

پاکستان میں اسٹارٹ اپس اب تک ناکام کیوں؟

آجکل یہ فیشن سا بن گیا ہے کہ ہر کوئی یہی کہتا نظر آ رہا ہے کہ اس کے پاس 'اسٹارٹ اپ' ہے-

ساغر صدیقی : ایک دل شکستہ شاعر

وہ خوبصورت نظمیں لکھتے، پھر بلند آواز میں خالی نگاہوں سے پڑھتے، پھر ان کاغذات کو پھاڑ دیتے جن پر وہ نظمیں لکھی ہوتیں

پکوان کہانی: کابلی پلاؤ - شمال کی شان

گوشت میں پکے چاول اس خطے کے جنگجوؤں کی ذہنی مطابقت اور جسمانی ساخت کے لیے موزوں تھے۔