19 ستمبر, 2014 | 23 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

اجمل قصاب کی سزائے موت برقرار

اجمل قصاب۔ — فائل فوٹو

ہندوستان کی سپریم کورٹ نے بدھ کے روز اپنے ایک فیصلے میں ممبئی حملوں کے مجرم اجمل قصاب کی سزائے موت کو برقرار رکھا ہے۔

دو ججوں پر مشتمل بنچ نے اپنے فیصلے میں کہا کہ ان کے پاس سزائے موت دینے کے علاوہ کوئی دوسرا آپشن نہیں ہے۔

 فیصلے کے مطابق، قصاب کا سب سے بڑا جرم ہندوستانی حکومت کے خلاف جنگ کرنا تھا۔

چھبیس نومبر، 2008 میں اپنے ساتھیوں کے ہمراہ ممبئی کے مختلف مقامات پرحملہ کرنے والے قصاب کو ممبئی کی ایک عدالت نے موت کی سزا سنائی تھی۔ بعد ازاں، گزشتہ فروری میں ممبئی ہائی کورٹ نے فیصلے کی توثیق کی تھی۔

قصاب نے ہائی کورٹ کے فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کر رکھا تھا جس پر آج فیصلہ سنا دیا گیا ہے۔

سزا کے خلاف اپیل مسترد ہونے کے بعد قصاب اب صدر مملکت کے سامنے رحم کی اپیل دائر کر سکتے ہیں۔

اس حصے سے مزید

چینی صدر اپنے پہلے دورے پر انڈیا پہنچ گئے

دونوں ملکوں کی توجہ باہمی معاشی تعاون پرمرکوز، انڈین ریلوے کی بحالی اور ایٹمی تعاون پر معاہدے متوقع۔

ہندوستان: ضمنی انتخابات میں بی جے پی کو دھچکا

نو ریاستوں میں 33اسمبلیوں کی نشستوں میں سے بی جے پی نے صرف دس نشستیں جیتی ہیں۔

حافظ سعید کہیں بھی نقل و حرکت میں آزاد ہیں، پاکستان

ہندوستان کا کہنا ہے کہ پاکستان جماعۃ الدعوۃ کے سربراہ کے خلاف صرف اس لیے کارروائی نہیں کر رہا کیونکہ وہ اس کا شہری ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مزید جمہوریت

نظام لپیٹ دینے اور امپائر کی باتیں کرنے کے بجائے ہمارا مطالبہ صرف مزید جمہوریت ہونا چاہیے، کم جمہوریت نہیں۔

تبدیلی آگئی ہے

ملک میں شہری حقوق کی عدم موجودگی میں عوام اب وسیع تر بھلائی کا سوچنے کے بجائے اپنے اپنے مفاد کے لیے اقدامات کررہے ہیں۔

بلاگ

شاہد آفریدی دوبارہ کپتان، ایک قدم آگے، دو قدم پیچھے

اس بات کی ضمانت کون دے گا کہ ماضی کی طرح وقار یونس اور شاہد آفریدی کے مفادات میں ٹکراؤ پیدا نہیں ہوگا۔

وارے نیارے ہیں بے ضمیروں کے

ماضی ہو یا حال، اربابِ اختیار و اقتدار کی رشوت اور بدعنوانی کے خلاف کھوکھلی بڑھکوں کی حیثیت محض لطیفوں سے زیادہ نہیں۔

کراچی میں فرقہ وارانہ دہشتگردی

کراچی ایک مرتبہ پھر فرقہ وارانہ دہشت گردی کی زد میں ہے اور روزانہ کوئی نہ کوئی بے گناہ سنی یا شیعہ اپنی جان گنوا رہا ہے۔

اجمل کے بغیر ورلڈ کپ جیتنا ممکن

خود کو ورلڈ کلاس باؤلنگ اٹیک کہنے والے ہمارے کرکٹ حکام کی پوری باؤلنگ کیا صرف اجمل کے گرد گھومتی ہے۔