02 ستمبر, 2014 | 6 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

ہلمند میں ایک برطانوی فوجی ہلاک

لندن میں وزارتِ دفاع کے بیان میں کہا گیا ہے کہ گاڑی بارودی سرنگ سے ٹکراگئی جس سے ایک برطانوی فوجی ہلاک ہوگیا۔ فائل تصویر اے ایف پی

لندن: افغانستان کے شورش زدہ صوبہ ہلمند میں سڑک کنارے نصب بم دھماکے میں ایک برطانوی فوجی ہلاک ہو گیا۔

یہ بات لندن میں وزارت دفاع نے اتوار کے روز کہی ۔

وزارت دفاع کا ایک بیان میں کہنا ہے کہ انتہائی افسوس کے ساتھ یہ اعلان کیا جاتا ہے کہ دی لائٹ ڈریگونز سے وابستہ ایک فوجی اہلکار ہلاک ہو گیا ہے. بیان میں مزید بتایا گیا کہ فوجی اس وقت ہلاک ہوا جب ایک گاڑی جس میں وہ سوار تھا جنوبی صوبہ ہلمند کے ضلع نہر سراج میں نصب کی گئی بارودی سرنگ سے ٹکرا گئی ۔

اہلکار کی شناخت سے متعلق مزید کوئی تفصیلات نہیں بتائی گئی ۔ اس ہلاکت کے بعد افغانستان میں اکتوبر2011ء میں آپریشنز کے آغاز سے بعد سے اب تک ہلاک ہونیوالے برطانوی فوجیوں کی تعداد427ہوگئی ہے ان میں سے کم ازکم387فوجی لڑاکا کارروائیوں میں مارے گئے ۔

برطانیہ کے افغانستان میں9500فوجی تعینات ہیں جو کہ امریکہ کے بعد نیٹو قیادت میں بین الاقوامی سلامتی معاون فورس میں حصہ لینے والا دوسرا بڑا ملک ہے ۔

برطانوی فوجی وسطی ہلمند میں تعینات ہیں اور طالبان مزاحمت کاروں کیخلاف لڑائی اور مقامی سکیورٹی فورسز کو تربیت فراہم کررہے ہیں ۔

برطانیہ2014ء کے آخر تک اپنے تمام لڑاکا فوجیوں کو واپس بلانے کا منصوبہ رکھتا ہے ۔

اس حصے سے مزید

اقوام متحدہ کافلسطینی زمینوں پراسرائیلی قبضے پر اظہار تشویش

بان کی مون نے بیت اللحم کے ایک ہزار ایکڑ رقبے کو خودساختہ" ریاستی زمین" قرار دینے پر تشویش کا اظہار کیا ہے

افغانستان: طالبان کے حملے، 4فوجی اور 3پولیس اہلکار ہلاک

صوبہ ننگر ہار میں خود کش حملے میں پولیس اہلکاروں کو نشانہ بنایا گیا، ہرات میں طالبان کے حملے میں فوجی اہلکار مارے گئے

مصر: بم دھماکے میں 8پولیس اہلکار ہلاک

ایک اور واقعے میں غزہ جانے والی شاہراہ پر حملے میں 4 اہلکار زخمی ہوئے،انصار بیت المقدس نامی گروہ نے ذمہ داری قبول کی ہے


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماڈل ٹاؤن کیس: کچھ حماقتیں

حکمرانوں کے منع کرنے پر پولیس کی جانب سے مقتولین کی ایف آئی آر درج کرنے میں تاخیر کی وجہ سے معاملہ مزید خراب ہوا۔

بیوروکریٹس کی یونین

ذاتی مفادات کے لیے چوری چھپے سیاسی ہونے سے زیادہ بہتر ہے کہ ریاست کے وسیع تر مفاد کے لیے کھلے عام سیاسی ہوا جائے۔

بلاگ

ڈرامہ ریویو: 'لا'...الجھتے رشتوں کی کہانی

ڈرامہ پرفیکٹ نہیں بھی تھا تو بھی یہ ان ڈراموں میں سے ایک ضرور تھا جسے دیکھ کر بیزاری کا احساس نہیں ہوتا۔

مووی ریویو : 'راجہ نٹور لال' سٹیریو ٹائپنگ کا شکار ہوگئی

یہ فلم نہ تو مزاح پر پوری اترتی ہے اور نہ ہی اس میں اتنا تھرلر ہے جو اسے ذہن میں نقش کر دے۔

سستا خون: براۓ انقلاب

"انقلاب" سیاست چمکانے کے لیے ایک خوشنما لفظ بن چکا ہے، اور اسے مزید چمکانے کے لیے کارکنوں کا سستا خون بھی دستیاب ہے۔

سیاست اور اخلاقیات

پتہ نہیں وہ کون سے ملک یا قومیں ہوتی ہیں جن کے عہدیدار کسی بھی ناکامی کی صورت میں فوراً اپنے عہدے سے مستعفی ہوجاتے ہیں۔