19 ستمبر, 2014 | 23 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

افغانستان میں خودکُش حملہ سولہ افراد ہلاک


دس ستمبر کو قندوز میں ہونے والے حملے کے بعد پولیس افسران جائے وقوعہ کا معائنہ کررہے ہیں۔ رائٹرز تصویر

قندوز، افغانستان: پیر کی صبح ایک گنجان علاقے میں خُودکُش جیکٹ پہنے ایک شخص نے خود کو دھماکے سے اس وقت اُڑالیا جب وہاں لوگوں کی آمدورفت جاری تھی۔

اس حملے میں دس پولیس اہلکار اور چھ عام شہری ہلاک ہوئے۔

قندوز میں پولیس چیف کے سربراہ سمیع اللہ قطرہ کے مطابق شہری علاقے میں خودکش حملہ اور کا ہدف پولیس والے تھے۔

قطرہ نے کہا کہ اس حملے میں دس پولیس اہلکار اور چھ شہری ہلاک ہوئے جبکہ تیس افراد زخمی ہوئے۔

فوری طور پر کسی بھی گروہ نے اس واقعے کی ذمے داری قبول نہیں کی ۔

واضح رہے کہ پیرکے روز ہونے والے اس حملے سے قبل ایک نوعمر لڑکے نے کابل میں نیٹو ہیڈ کوارٹرز پر خود کش حملہ کیا تھا جس میں چھ افراد سمیت چند بچے بھی ہلاک ہوئے تھے۔ طالبان نے اس حملے کی ذمے داری قبول کی تھی تاہم اس بات سے تردید کی تھی کہ حملے میں کم عمر بچہ استعمال ہوا تھا۔

اس حصے سے مزید

افغانستان: طالبان کے حملے میں 6 پولیس اہلکار ہلاک

صوبائی پولیس چیف ترجمان کے مطابق پولیس کی جوابی کارروائی سے آٹھ طالبان بھی مارے گئے ہیں۔

کابل: امریکی سفارتخانے کے قریب خودکش حملہ،3 ہلاک

حکام کے مطابق خودکش حملہ آور بارود سے بھری ایک گاڑی میں سوار تھا، جس نے غیرملکی فوج کے ایک قافلے کو نشانہ بنایا۔

کابل: امریکی فضائی حملہ، 14 شہری ہلاک

دوسری جانب نیٹو ترجمان کا کہنا ہے کہ ڈسٹرکٹ دنگام میں ایک منظم کارروائی کے نتیجے میں ایک مسلح جنگجو ہلاک ہوا۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مزید جمہوریت

نظام لپیٹ دینے اور امپائر کی باتیں کرنے کے بجائے ہمارا مطالبہ صرف مزید جمہوریت ہونا چاہیے، کم جمہوریت نہیں۔

تبدیلی آگئی ہے

ملک میں شہری حقوق کی عدم موجودگی میں عوام اب وسیع تر بھلائی کا سوچنے کے بجائے اپنے اپنے مفاد کے لیے اقدامات کررہے ہیں۔

بلاگ

شاہد آفریدی دوبارہ کپتان، ایک قدم آگے، دو قدم پیچھے

اس بات کی ضمانت کون دے گا کہ ماضی کی طرح وقار یونس اور شاہد آفریدی کے مفادات میں ٹکراؤ پیدا نہیں ہوگا۔

وارے نیارے ہیں بے ضمیروں کے

ماضی ہو یا حال، اربابِ اختیار و اقتدار کی رشوت اور بدعنوانی کے خلاف کھوکھلی بڑھکوں کی حیثیت محض لطیفوں سے زیادہ نہیں۔

کراچی میں فرقہ وارانہ دہشتگردی

کراچی ایک مرتبہ پھر فرقہ وارانہ دہشت گردی کی زد میں ہے اور روزانہ کوئی نہ کوئی بے گناہ سنی یا شیعہ اپنی جان گنوا رہا ہے۔

اجمل کے بغیر ورلڈ کپ جیتنا ممکن

خود کو ورلڈ کلاس باؤلنگ اٹیک کہنے والے ہمارے کرکٹ حکام کی پوری باؤلنگ کیا صرف اجمل کے گرد گھومتی ہے۔