21 اگست, 2014 | 24 شوال, 1435
ڈان نیوز پیپر

پچیس ستمبر تک خط لکھنے کی مہلت

اسلام آباد: وزیر اعظم راجہ پرویز اشرف سپریم کورٹ میں پیشی کے موقع پر۔— اے پی

اسلام آباد: پاکستان کی سپریم کورٹ نے صدر آصف علی زرداری کے خلاف منی لانڈرنگ کا مقدمہ کھولنے کے حوالے سے سوئس حکام کو خط لکھنے کے لیے حکومت کو پچیس ستمبر تک کی مہلت دی ہے۔

وزیر اعظم راجہ پرویز اشرف کی جانب سے مزید ایک ماہ کی مہلت فراہم کرنے کی درخواست رد کرتے ہوئے عدالت نے حکومت کو  دو اکتوبر تک معاملہ نمٹانے کی بھی ہدایت کی ہے۔

وزیر اعظم  آج این آر او عمل درآمد کیس میں جسٹس آٓصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں پانچ رکنی بینچ کے سامنے پیش ہوئے۔

سماعت کے آغاز پر وزیر اعظم  نے عدالت کو مطلع کیا کہ وزیر قانون فاروق ایچ نائیک کو این آر او پر سابق اٹارنی جنرل ملک قیوم کا خط واپس لینے کا کہہ دیا گیا ہے۔

انہوں نے عدالت کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ خط لکھنے کے حوالے سے ان پر دباؤ ہے اور سوالات بھی اٹھائے جارہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اب اس مسئلہ کوحل ہوجانا چاہیئے، عدالت تعاون کرے تاکہ معاملے کو سلجھایا جا سکے۔

انہوں نے عدالت سے حاضری کے لیے استثنیٰ کی بھی درخواست کی جسے قبول کرلیا گیا۔

سپریم کورٹ کا کہنا تھا کہ مشاورت کا وقت ختم ہو گیا ہے اور اب خط لکھنا ہے۔

وزیر اعظم کی جانب سے خط کی تیاری کے لیے وقت مانگنے پر عدالت نے انہیں پچیس ستمبر تک خط تیار کرنے کی مہلت دیتے ہوئے اس حوالے سے چار ہدایات دیں۔

پہلی ہدایت یہ کہ خط لکھنے کے اختیارات کسی کو تحریری طور پر دیے جائیں گے۔دوسری ہدایت یہ ہے کہ خط لکھا جائے گا، جس کے لیے عدالت کی تسلی لازمی ہوگی۔ تیسری ہدایت خط بھجوانے کے متعلق ہے کہ خط پہنچانے والا کون ہوگا جبکہ چوتھی ہدایت یہ ہے کہ خط پہنچانے کے بعد عدالت کو آگاہ کیا جائے گا۔

وزیراعظم آج دوسری مرتبہ سخت سیکورٹی میں متعلقہ کیس میں سپریم کورٹ کے سامنے پیش ہوئے۔

اس موقع پر وزیر قانون فاروق ایچ نائیک، نوید قمر،فردوس عاشق اعوان، چوہدری شجاعت،گورنر پنجاب سردار لطیف کھوسہ اور فاروق ستار سمیت اتحادی جماعتوں کے قائدین بھی ان کے ہمراہ تھے۔

سپریم کورٹ میں صرف خصوصی پاسزرکھنے والے افراد کو داخلےکی اجازت تھی۔

اس حصے سے مزید

مارچ کے شرکاء سے ریڈ زون کے ملازمین دہشت زدہ

ریڈ زون میں کام کرنے والے تمام ملازمین پی اے ٹی کی جانب سے پارلیمنٹ ہاﺅس کے ارگرد قبضہ کے فیصلے پر دہشت زدہ ہوگئے تھے۔

بحران سے نمٹنے کیلئے آئینی حل تیار کر لیا، شجاعت

مسلم لیگ (ق) کے رہنما چوہدری شجاعت کا کہنا ہے کہ نواز شریف سے آرمی چیف سمیت پوری فوج ناراض ہے۔

وزیر داخلہ نے آئی جی اسلام آباد کو برطرف کردیا

آفتاب چیمہ کی جگہ ڈی آئی جی ہیڈ کوارٹر خالد خٹک کو قائم مقام آئی جی اسلام آباد مقرر کردیا گیا ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مضبوط ادارے

ریاستی اداروں پر تمام جماعتوں کی جانب سے حملہ تب کیا گیا جب وہ ابتدائی طور پر ہی سہی پر قابلیت کا مظاہرہ کرنے لگے تھے۔

آئینی نظام کو لاحق خطرات

پی ٹی آئی کی سیاست کے ساتھ مسئلہ یہ ہے کہ یہ کسی طرح موجودہ آئینی صورت حال میں ممکن سیاسی حل کیلئے تیار نہیں ہے-

بلاگ

جعلی انقلاب اور جعلی فوٹیجز

تحریک انصاف اور عوامی تحریک کی غیر آئینی حرکتوں کی وجہ سے اگر فوج آگئی تو چینلز ایسی نشریات کرنا بھول جائیں گے۔

!جس کی لاٹھی اُس کا گلّو

ہر دکاندار اور ریڑھی والے سے پِٹنا کوئی آسان عمل نہیں ہوگا شاید یہی وجہ ہے کہ سول نافرمانی کوئی آسان کام نہیں۔

ہمارے کپتانوں کے ساتھ مسئلہ کیا ہے؟

اس بات کا پتہ لگانا مشکل ہے کہ مصباح الحق اور عمران خان میں سے زیادہ کون بچوں کی طرح اپنی غلطی ماننے سے انکاری ہے۔

پاک سری لنکا ٹیسٹ سیریز – ایک جائزہ

امید کی جانی چاہئے کہ پاکستانی ٹیم ٹیسٹ سیریز میں اپنی شکست کا بدلہ ون ڈے سیریز میں لینے کی پوری کوشش کرے گی۔