23 جولائ, 2014 | 24 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

افغانستان کی پاکستان کو تنبیہ

افغان وزیر خارجہ زلمے رسول۔ — اے ایف پی

اقوام متحدہ: افغانستان نے پاکستان سے ایک مرتبہ پھر مطالبہ کیا ہے کہ وہ فوری طور پر سرحد پار گولہ باری بند کر دے۔

افغان وزیر خارجہ زلمے رسول  نے جمعرات کو پاکستان کے سرحد پار حملوں کو 'گہری تشویش' کا باعث قرار دیتے ہوئے کہا کہ ان حملوں سے افغنانیوں میں 'غیر مثالی غصہ اور تذبذب' پایا جاتا ہے۔

افغانستان ماضی میں بھی پاکستان پر کنڑ صوبے میں گولہ باری کا الزام عائد کر چکا ہے۔

زلمے رسول نے پندرہ ملکی کونسل کے ایک اجلاس میں کہا کہ وہ ایک مرتبہ پھر ان حملوں کی فوری روک تھام کا مطالبہ کرتے ہیں کیونکہ ان حملوں نے درجنوں شہریوں کی جانیں لی ہیں جبکہ کئی زخمی بھی ہوئے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ کابل پاکستان سے ان حملوں کو مکمل طور پر بند کرنے کے لیے رابطے میں ہے۔

انہوں نے کہا کہ افغانستان اپنے ہمسایہ ملک سے 'قریبی' تعلقات کا خواہاں ہے۔

اس موقع پر انہوں نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو بھی خبردار کیا کہ اس طرح کے حملے جاری رہنے سے دونوں ملکوں میں پہلے سے کشیدہ تعلقات مزید خراب ہو سکتے ہیں۔

پاکستان پر الزام ہے کہ وہ طالبان کی پشت پناہی کر رہا ہے جو کابل حکومت گرانا چاہتے ہیں۔

جوابًا، پاکستان کا کہنا ہے کہ افغانستان میں چھپے ہوئے پاکستانی طالبان سرحد پار کر کے ان کے سیکورٹی اہلکاروں پر حملے کرتے ہیں۔

دوسری جانب، افغانستان میں اقوام متحدہ کے نمائندہ خصوصی نے اجلاس کو بتایا کہ ' ملک کے مختلف حصوں میں طالبان کے خلاف عوام کے اُٹھ  کھڑے ہونے کی اطلاعات کا جائزہ لینا ضروری ہے'۔

انہوں نے کہا کہ تحفظ اور انصاف کی خواہش نے مقامی آبادیوں کو صورتحال اپنے ہاتھوں میں لینے پر مجبور کر دیا ہے۔

اس حصے سے مزید

کابل: خود کش حملے میں تین غیر ملکی مشیر ہلاک

ابتدائی رپورٹس میں غیر ملکی مشیروں کی شہریت کے بارے تفصیلات موصول نہیں ہوسکی ہیں۔

'پاکستان، افغانستان ناکام ہوئے تو القاعدہ واپس آ جائے گی'

افغانستان میں کامیابی کا دارومدار پاکستان کی اپنی سرحدوں میں شدت پسندوں کے خلاف کارروائی پر بھی ہے، امریکی جنرل۔

کابل ایئرپورٹ پر طالبان کا حملہ، پروازیں منسوخ

ایک افغان جنرل افضل امان کا کہنا ہے کہ مسلح افراد نے کابل میں محوِ پرواز آئی ایس اے ایف کے جیٹ طیاروں پر بھی فائرنگ کی۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

بے وجہ پوائنٹ اسکورنگ

ہوسکتا ہے عمران خان پی ایم ایل-ن کی حکومت گرانا چاہتے ہوں لیکن کیا وہ واقعی ملک اور اسکے جمہوری اداروں کے لئے خطرہ ہیں؟

کیا بڑا بہتر ہے؟

ہم اپنی جنوب ایشیائی شناخت سے پیچھا کیوں چھڑانا چاہتے ہیں جو تاریخی اعتبار سے عرب کے مقابلے میں کہیں زیادہ مالامال ہے؟

بلاگ

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔

کھیلنے دو: گراؤنڈز کہاں ہیں؟

سیدھی سی بات ہے، ملائی تبھی زیادہ اور بہترین ہوگی جب دودھ زیادہ ہوگا-

مووی ریویو: پیزا - پلاٹ اچھا ہے

اگرچہ سکرین پلے کافی کمزور ہے مگر فلم کی کہانی میں آنے والے موڑ دیکھنے والوں کی دلچسپی برقرار رکھتے ہیں۔

جہادی برائے فروخت

اگر اب بھی سمجھ نہ آئی تو پاکستان کا حشر بھی عراق و شام سے مختلف نہیں ہوگا۔