19 اپريل, 2014 | 18 جمادی الثانی, 1435
ڈان نیوز پیپر

پاکستان کا امریکہ سے باضابطہ احتجاج

پاکستان نے امریکی حکومت سے گستاخانہ فلم بنانے والوں کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔ اے ایف پی فوٹو

اسلام آباد: پاکستان نے امریکی ناظم الامور کو دفتر خارجہ طلب کرکے گستاخانہ فلم پر باضابطہ طور پر شدید احتجاج کیا ہے۔

جمعہ کے روز امریکی ناظم الامور رچرڈ ہوگ لینڈ کو ایک مراسلہ دیا گیا جس میں امریکی حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ متنازعہ فلم کو فوری طور پر انٹرنیٹ سے ہٹایا جائے۔

مراسلے میں فلم ساز اور دوسرے ذمہ داروں کے خلاف فوری کارروائی کا بھی کہا گیا ہے۔

پاکستان نے فلم کو دنیا بھر کے ڈیڑھ ارب مسلمانوں پر حملے کے مترادف قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ فلم مختلف مذاہب میں نفرت پھیلانے کی سوچی سمجھی سازش ہے، جس کی پاکستان بھرپور مزمت کرتا ہے۔

امریکی قائم مقام سفیر نے اس موقع پر کہا کہ امریکی حکومت اور قیادت نے اس فلم کی شدید مزمت کی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ امریکی عوام کی اکثریت بھی اس شرمناک فلم کی مذمت کرتی ہے۔

دوسری جانب، حکومت پاکستان نے توہین رسالت کے حوالے سے بین الاقوامی قانون بنانے کی تجویز پر اسلامی دنیا کی حمایت حاصل کرنے کے لیے او آئی سی کے رکن ممالک سے ہنگامی رابطے کیے ہیں۔

ذرائع کے مطابق، صدر آصف علی زرداری یہ تجویز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے اپنے خطاب میں پیش کریں گے۔

مزید برآں، وزارت خارجہ نے اسلام مخالف فلم کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال پرغور اور مشاورت کے لیے او آئی سی کے رکن ممالک سے ہنگامی رابطے کیے ہیں۔

رابطوں کے ذریعے مجوزہ  قانون پر عالمی حمایت حاصل کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

اس حصے سے مزید

سپریم کورٹ نے نیب چیئرمین تقرری کو قانونی قرار دیدیا

دوسری جانب بیرسٹر اعتزاز احسن نے اپنے دلائل میں کہا کہ حکومت اور اپوزیشن دونوں ہی نیب چیئرمین کی تقرری پر متفق ہیں۔

تحفظ پاکستان آرڈیننس سینیٹ میں پیش، اپوزیشن کا احتجاج

اپوزیشن کے شدید احتجاج کے باوجود وفاقی حکومت نے تحفظ پاکستان بل 2014 کو سینیٹ میں پیش کر دیا ہے۔

پروسیکیوٹر کی تقرری سے متعلق مشرف کی درخواست مسترد

خصوصی عدالت نے اپنے فیصلے میں درخواست کو ناقابل سماعت قرار دیتے ہوئے مسترد کیا۔


تبصرے بند ہیں.
مقبول ترین
بلاگ

ریویو: بھوت ناتھ - ریٹرنز

مرکزی کرداروں سے لیکر سپورٹنگ ایکٹرز سب اپنی جگہ کمال کے رہے اور جس فلم میں بگ بی ہوں اس میں چار چاند تو لگ ہی جاتے ہیں۔

میانداد کا لازوال چھکا

جب بھی کوئی بیٹسمین مقابلے کی آخری گیند پر اپنی ٹیم کو چھکے کے ذریعے جتواتا ہے تو سب کو شارجہ ہی یاد آتا ہے۔

جمہوریت، سیکولر ازم اور مذہبی سیاسی جماعتیں

مذہب کے نام پر کوئی متفقہ سیاسی نظام بن ہی نہیں سکتا کیونکہ مذاہب کے درجنوں دھڑے کسی ایک ایشو پر متفق نہیں ہو سکتے۔

یکسانیت اور رنگا رنگی

یکسانیت جانی پہچانی بلکہ اطمینان بخش بھی ہوسکتی ہے، لیکن اس کا مطلب ہے چیلنج سے بچنا، جس کے بغیر کامیابی ممکن نہیں۔