18 ستمبر, 2014 | 22 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

پاکستان کا امریکہ سے باضابطہ احتجاج

پاکستان نے امریکی حکومت سے گستاخانہ فلم بنانے والوں کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔ اے ایف پی فوٹو

اسلام آباد: پاکستان نے امریکی ناظم الامور کو دفتر خارجہ طلب کرکے گستاخانہ فلم پر باضابطہ طور پر شدید احتجاج کیا ہے۔

جمعہ کے روز امریکی ناظم الامور رچرڈ ہوگ لینڈ کو ایک مراسلہ دیا گیا جس میں امریکی حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ متنازعہ فلم کو فوری طور پر انٹرنیٹ سے ہٹایا جائے۔

مراسلے میں فلم ساز اور دوسرے ذمہ داروں کے خلاف فوری کارروائی کا بھی کہا گیا ہے۔

پاکستان نے فلم کو دنیا بھر کے ڈیڑھ ارب مسلمانوں پر حملے کے مترادف قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ فلم مختلف مذاہب میں نفرت پھیلانے کی سوچی سمجھی سازش ہے، جس کی پاکستان بھرپور مزمت کرتا ہے۔

امریکی قائم مقام سفیر نے اس موقع پر کہا کہ امریکی حکومت اور قیادت نے اس فلم کی شدید مزمت کی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ امریکی عوام کی اکثریت بھی اس شرمناک فلم کی مذمت کرتی ہے۔

دوسری جانب، حکومت پاکستان نے توہین رسالت کے حوالے سے بین الاقوامی قانون بنانے کی تجویز پر اسلامی دنیا کی حمایت حاصل کرنے کے لیے او آئی سی کے رکن ممالک سے ہنگامی رابطے کیے ہیں۔

ذرائع کے مطابق، صدر آصف علی زرداری یہ تجویز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے اپنے خطاب میں پیش کریں گے۔

مزید برآں، وزارت خارجہ نے اسلام مخالف فلم کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال پرغور اور مشاورت کے لیے او آئی سی کے رکن ممالک سے ہنگامی رابطے کیے ہیں۔

رابطوں کے ذریعے مجوزہ  قانون پر عالمی حمایت حاصل کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

اس حصے سے مزید

پی ٹی آئی کا اپنی احتجاجی تحریک ملک بھر تک پھیلانے کا فیصلہ

کور کمیٹی کے اجلاس میں یہ متفقہ فیصلہ کیا گیا کہ عمران خان اکیس ستمبر کو کراچی جائیں گے اور پارٹی ورکرز سے خطاب کریں گے۔

مصالحتی جرگے کی پانچ روزہ ’جنگ بندی‘ کی تجویز

سینیٹر رحمان ملک نے اراکین پارلیمنٹ کو بتایا کہ مذاکراتی جرگہ ایک قابل عمل فارمولے کے قریب پہنچ گیا ہے۔

سپریم کورٹ نے مختاراں مائی کیس کے ثبوت طلب کرلیے

نظرثانی کی درخواست کی سماعت کے دوران عدالتی بینچ کو مطلع کیا گیا کہ ثبوت عدالتی ریکارڈز میں موجود نہیں ہیں۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مزید جمہوریت

نظام لپیٹ دینے اور امپائر کی باتیں کرنے کے بجائے ہمارا مطالبہ صرف مزید جمہوریت ہونا چاہیے، کم جمہوریت نہیں۔

تبدیلی آگئی ہے

ملک میں شہری حقوق کی عدم موجودگی میں عوام اب وسیع تر بھلائی کا سوچنے کے بجائے اپنے اپنے مفاد کے لیے اقدامات کررہے ہیں۔

بلاگ

وارے نیارے ہیں بے ضمیروں کے

ماضی ہو یا حال، اربابِ اختیار و اقتدار کی رشوت اور بدعنوانی کے خلاف کھوکھلی بڑھکوں کی حیثیت محض لطیفوں سے زیادہ نہیں۔

کراچی میں فرقہ وارانہ دہشتگردی

کراچی ایک مرتبہ پھر فرقہ وارانہ دہشت گردی کی زد میں ہے اور روزانہ کوئی نہ کوئی بے گناہ سنی یا شیعہ اپنی جان گنوا رہا ہے۔

اجمل کے بغیر ورلڈ کپ جیتنا ممکن

خود کو ورلڈ کلاس باؤلنگ اٹیک کہنے والے ہمارے کرکٹ حکام کی پوری باؤلنگ کیا صرف اجمل کے گرد گھومتی ہے۔

کریچر - تھری ڈی: گوڈزیلا یا ڈیوی جونز کا کزن؟

یہ کہنا غلط نہ ہوگا بپاشا ہارر تھرلرز تک محدود ہوگئی ہیں جبکہ عمران عبّاس نے انکے گرد چکر کاٹنے کے سوا کچھ نہیں کیا۔