28 جولائ, 2014 | 29 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

لاڑکانہ میں ۹ نومولود بچوں کی ہلاکت

لاڑکانہ کے ایک ہسپتال میں نومولود بچوں کی ہلاکت کے بعد وزیرِ اعلیٰ سندھ قائم علی شاہ نے نوٹس لے لیا ہے ۔ اے پی پی فوٹو

لاڑکانہ: چانڈکا میڈیکل کالج ہسپتال کے شعبہ زچہ بچہ میں گزشتہ بارہ گھنٹوں کے درمیان نو نومولود بچوں کی ہلاکت کے واقعات سامنے آنے پر گورنر، وزیرِ اعلیٰ اورصوبائی وزیرِ صحت نے تحقیات کا حکم دیا ہے۔

ہسپتال ذرائع نے ہلاکتوں کی تصدیق کرتے ہوئے اس کا سبب بظاہر غفلت، غیر ذمہ داری اور سہولتوں کے فقدان کو ٹھہرایا ہے۔

لاڑکانہ میں سنیچر کوایک  پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ہسپتال کے میڈیکل سپریٹنڈنٹ پروفیسر افسر بھٹو، بچوں کے شعبے کے سربراہ پروفیسر سیف اللہ جامڑو اور لاڑکانہ کے ڈپٹی کمشنر اسداللہ بھٹو نے کہا کہ نومولود بچوں کی ہلاکتوں سے متعلق ابتدائی رپورٹ صوبائی حکومت کو بھیج دی گئی ہے۔

ڈپٹی کمشنر کا کہنا تھا کہ ہلاکتوں کی تحقیقات کے لیے پانچ رکنی کمیٹی تشکیل دے دی گئی ہے۔ کمیٹی تین دن کے اندر اپنی رپورٹ پیش کرے گی۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ رپورٹ کی روشنی میں وجوہات کا تعین ہونے کے بعد ایسے اقدامات کرنے کی کوشش کی جائے گی جس سے مستقبل میں اس طرح کے واقعات کی روک تھام کی جاسکے۔

ڈپنٹی کمشنر نے واضح کیا کہ واقعے کے متعلق تفصیلی تحقیقاتی رپورٹ ایک ہفدتے کے اندر سندھ حکومت کو بھیج دی جائے گی۔

چانڈکا میڈیکل ہسپتال کے ریزیڈنٹ میڈیکل افسر ڈاکٹر عبدالستار شیخ کا کہنا ہے کہ نومولود بچوں کی ہلاکتوں کا سبب زچگی کی پیچیدگیاں ہوسکتی ہیں۔ ان کا کہنا تھا قبل از وقت پیدائش، اور کم وزن بھی اموات کی وجوہات میں شامل ہیں۔

ڈاکٹر ستار کے مطابق ہسپتال چالیس بستروں پر مشتمل ہے لیکن ایک سو ساٹھ مریض داخل ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ 'کیس کے نوعیت کے باعث ہم دور دراز سے ہسپتال پہنچنے والے کسی بھی مریض کو داخل کرنے سے  انکار نہیں کرسکتے۔'

انہوں نے مزید کہا کہ 'اسٹاف میں کمی اور مریضوں کی تعداد زیادہ ہونے کے سبب اموات کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔'

ان کا کہنا تھا کہ گنجائش نہ ہونے کے باعث ایک بیڈ پر پانچ پانچ مریض لیٹےہوئے ہیں۔ اس طرح کراس انفیکشن کا خطرہ بھی بڑھ جاتا ہے۔

علاوہ ازیں، چانڈکا ہسپتال میں نومولود بچوں کی ہلاکتوں پر گورنر سندھ ڈاکٹرعشرت العباد نے محکمہ صحت کو واقعے کی تحقیات کے بعد رپورٹ بھیجنے کی ہدایت کی ہے۔

وزیرِ اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے بھی سیکریٹری صحت سے واقعے کی رپورٹ طلب کرلی ہے۔ وزیرِ اعلیٰ کا کہنا ہے کہ اگر ڈاکٹر یا عملے کی غفلت پائی گئی تو ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔

صوبائی وزیرِ صحت ڈاکٹر صغیر احمد نے بھی تحقیات کے لیے ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ ڈاکٹر فیروزمیمن کی سربراہی میں ایک کمیٹی قائم کردی ہے۔

اس حصے سے مزید

کراچی: لیاقت علی خان کے بیٹے انتقال کر گئے

اشرف علی خان اپنے والد کی وفات کے وقت محض 14 برس کے تھے، اُن کو کراچی میں سپرد خاک کیا جا ئے گا۔

کراچی: جمشید ٹاؤن تھانے کے قریب بم ناکارہ بنا دیا گیا

حکام کا کہنا ہے کہ پانچ کلو وزنی دھماکا خیز مواد ایک موٹر سائیکل میں نصب تھا، جسے ناکارہ بنایا دیا گیا۔

کراچی میں ایک ہفتہ لوڈ شیڈنگ نہیں ہو گی

کراچی الیکٹرک کے جانب سے جاری اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ کے ای نے صارفین کے لیے عید پیکج کا اعلان کیا ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

جنگ اور ہوائی سفر

پرواز کرنے کا معجزہ، جو انسانی ذہانت کا خوشگوار مظہر ہے، انسان کے انتقامی جذبات اور خون کی پیاس کی نذر ہوگیا ہے

تھوڑا سا احترام

آپ ایک مایوس، خوفزدہ بیوروکریسی سے کیا توقع کرسکتے ہیں جنہیں اپنی سمت کا علم نہ ہو؟

بلاگ

ترغیب و خواہشات: رمضان کا نیا چہرہ؟

کسی مقامی رمضان ٹرانسمیشن کو لگائیں اور وہ سب کچھ جان لیں جو اب اس مقدس مہینے کے نئے چہرے کو جاننے کے لیے ضروری ہے

نائنٹیز کا پاکستان -- 1

ضیا سے مشرف کے بیچ گیارہ سال میں کبھی کرپشن کے بہانے تو کبھی وسیع تر قومی مفاد کے نام پر پانچ جمہوری حکومتیں تبدیل ہوئیں

ٹوٹے برتن

امّی کا خیال ہے کہ ایسے برتن پورے گاؤں میں کسی کے پاس نہیں۔ وہ تو ان برتنوں کو استعمال کرنے ہی نہیں دیتی

مجرم کون؟

کچھ چیزیں ڈنڈے کے زور پہ ہی چلتی ہیں، پھر آہستہ آہستہ عادت اور عادت سے فطرت بن جاتی ہیں۔