02 اکتوبر, 2014 | 6 ذوالحجہ, 1435
ڈان نیوز پیپر

دوہری شہریت کیس میں رحمان ملک کے بیان پر جواب داخل

رحمان ملک۔ فائل تصویر

اسلام آباد: وفاق نے دوہری شہریت کیس میں وزیر داخلہ رحمان ملک کے مبینہ اخباری بیان پر سپریم کورٹ میں جواب جمع کرادیا۔

دوہری شہریت کیس میں وزیر داخلہ رحمان ملک کے مبینہ اخباری بیان پر وفاق کا جواب ایڈوکیٹ نے آن ریکارڈ نے جمع کرایا۔

جواب میں مؤقف اختیار کیا گیا ہے کہ وزیر داخلہ کے بیان کو سیاق و سباق سے ہٹ کر پیش کیا گیا۔

اس میں کہا گیا ہے کہ وزیر داخلہ نے اس قسم کا کوئی بیان نہیں دیا اور وزارت داخلہ بھی اس معاملے کی تردید کر چکی ہے۔

بیس ستمبر کو پاکستان کی سپریم کورٹ نے ایسے تمام ارکان اسمبلی کو نااہل قرار دے دیا تھا جو دوہری شہریت رکھتے ہیں جس میں رحمان ملک بھی شامل تھے۔

خیال رہے کہ انتیس ستمبر کو سپریم کورٹ نے دوہری شہریت سے متعلق رحمان ملک کو مبینہ اخباری بیان پر وضاحتی نوٹس جاری کیا تھا اور انہیں عدالت کے سامنے تین اکتوبر کو پیش ہونے کو کہا تھا۔

یہ نوٹس رحمان ملک کو ان کے اکیس اور بائیس ستمبر کو دینے والے بیان کی وجہ سے دیا گیا تھا۔ انہوں نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ اسمبلیوں میں ابھی تک ایسے ارکان پارلیمنٹ اور صوبائی اسمبلیوں کے ارکان موجود ہیں جو دوہری شہریت رکھتے ہیں اور آگر سپریم کورٹ چاہے تو وہ اس سلسلے میں عدالت کی مدد کرنے کو بھی تیار ہیں۔

اس پر عدالت کا مؤقف تھا کہ رحمان ملک انہیں ان ارکان پارلیمنٹ اور صوبائی اسمبلیوں کے ارکان کا نام بتائیں جو دوہری شہریت رکھتے ہیں۔

اس حصے سے مزید

وزيراعظم نااہلی کيس:سپريم کورٹ کالارجربينچ بنانےکی درخواست مسترد

بینچ کے سربراہ جسٹس جواد ایس خواجہ پر اعتراض کی درخواست بھی چیف جسٹس نے مسترد کر دی، کیس کی سماعت جمعرات سے ہو گی۔

پی اے ٹی کا عید پر دھرنا جاری رکھنے کا فیصلہ

اگرعمران خان ڈی چوک میں عید منائیں گے تو ہم بھی ایسا ہی کریں گے، پی اے ٹی ترجمان۔

الیکشن کمیشن اراکین اسمبلی کو معطل کرنے کے اختیارات کا خواہاں

کمیشن نے اثاثوں کی تفصیلات جمع نہ کرانے والے اراکین کی رکنیت 60 دنوں تک معطل کرنے کی تجویز دی ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماؤں اور بچوں کے قاتل ہم

پاکستان سے کم فی کس آمدنی رکھنے والے ممالک پیدائش کے دوران ماؤں اور بچوں کی اموات پر قابو پا چکے ہیں۔

تبدیلی کا پیش خیمہ

اکثر ایسے بڑے واقعات پیش آتے ہیں جو تبدیلی کے عمل کو تیز کردیتے ہیں، مگر ایسے حالات کسی فرد کے پیدا کردہ نہیں ہوتے۔

بلاگ

!گو نواز گو

اس ملک میں پڑھے لکھے لوگوں کی قدر ہی نہیں۔ جب تک پڑھے لکھوں کو وی آئی پی پروٹوکول نہیں دیا جاتا یہ ملک ترقی نہیں کرسکتا

قدرتی آفات اور پاکستان

قدرتی آفات سے پہلے انتظامات پر ایک ڈالر جبکہ بعد میں سات ڈالر خرچ ہوتے ہیں، اس کے باوجود ہم پہلے سے انتظامات نہیں کرتے۔

مقابلہ خوب ہے

کوئی دنیا کے در در پر پھیلے ہمارے کشکول کی زیارت کرے، پھر اس میں خیرات ڈالنے والوں کو فتح کرنے کے ہمارے عزم بھی دیکھے۔

پاکستان میں ذہنی بیماریاں اور ہماری بے حسی

آخر ذہنی بیماریوں کے شکار کتنے اور لوگوں کو اپنے گھرانوں کی بے حسی، اور معاشرے کی جانب سے ٹھکرائے جانے کو جھیلنا پڑے گا؟