25 جولائ, 2014 | 26 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

ایوان صدرکو فریق بنانے کی درخواست منظور، نوٹس جاری

سپریم کورٹ ۔ فائل تصویر

اسلام آباد: سپريم کورٹ نے سياستدانوں ميں رقوم کی تقسيم سے متعلق اصغر خان کيس ميں ايوان صدر کو فريق بنانے کی اجازت ديتے ہوئے پرنسپل سيکرٹری کے ذريعے صدر مملکت کو نوٹس بھجوا ديا ہے۔

صدر کو فریق بنانے کی درخواست اصغر خان کے وکیل نے کی تھی۔

سلمان اکرم راجہ کا کہنا تھا کہ صدر کی ذات کو نہيں منصب کو فريق بنايا جائے۔

چیف جسٹس نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ ایوان صدر میں سیاسی سرگرمیاں نہیں ہونی چاہیے کیوں کہ صدر ملک کا آئینی سربراہ اور سپریم کمانڈر ہوتا ہے۔

اٹارنی جنرل آج بھی پيش نہيں ہوئے جس پر عدالت نے برہمی کا اظہار کيا۔

جسٹس خلجی نے کہا کہ صدر سیاست میں ملوت ہوگیں تو مسلح افواج کے اداروں پر بھی اثر پڑے گا۔

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے آئی ایس آئی کی جانب سے سیاست دانوں میں رقوم کی تقسیم سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران سیکرٹری دفاع نے دستخط شدہ خط عدالت میں پیش کیا۔

خط کے متن میں کہا گیا ہے کہ اس وقت انٹیلی جنس انٹر سروسز (آئی ایس آئی) میں کوئی سیاسی سیل نہیں۔

دریں اثناے کمانڈرشہباز نے عدالت کو بتایا کہ آئندہ ڈپٹی اٹارنی جنرل وزارت کی طرف سے پیش ہوں گے۔

مقدمے کی مزید سماعت پندرہ اکتوبر تک ملتوی کر دی گئی ہے۔

کل ہونے والی سماعت میں وزارت دفاع نے سپریم کورٹ کو اصغرخان کیس میں اپنے جمع کرائے جواب میں کہا ہے کہ آئی ایس آئی میں کوئی سیاسی سیل کام نہیں کر رہا۔

اس کے علاوہ عدالت نے وزارت دفاع کے افسر کو ہدایت کی تھی کہ وزارت دفاع کے جواب پر دستخط کرواکر دوبارہ پیش کریں۔

اس حصے سے مزید

اسلام آباد کو تین ماہ کیلئے فوج کے حوالے کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد کو آئین کے آرٹیکل 245 کے تحت یکم اگست سے تین ماہ کے لیے فوج کے حوالے کرنے کا فیصلہ کر لیا، چوہدری نثار۔

پنڈی والوں کی ناراضگی کا ڈر

نواز شریف کسی بھی ایسے مسئلے کو طول دینے کے حق میں نہیں ہیں، جو پنڈی والوں کی ناراضگی کا سبب بن سکتا ہو۔

اسلام آباد: آئی ڈی پی کیمپ میں بچھوؤں کی بھرمار

ایک سرکاری افسر کے مطابق دارالحکومت میں آئی ڈی پیز کے لیے قائم واحد کیمپ میں جان لیوا بچھوؤں کی بھرمار ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

تھوڑا سا احترام

آپ ایک مایوس، خوفزدہ بیوروکریسی سے کیا توقع کرسکتے ہیں جنہیں اپنی سمت کا علم نہ ہو؟

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بلاگ

گھریلو تشدد: پاکستانی 'کلچر' - حقیقت کیا ہے؟

پاکستانی سماج میں عورت مرد کی جائداد اور اس سے کمتر ہے چناچہ اس کے ساتھ کسی قسم کا سلوک روا رکھنا مرد کا پیدائشی حق ہے-

ریاستی تنہائی اور اجتماعی مہاجرت

جب تک سوچنے اور سوچ کے اظہار کے لیے ممکنہ حد تک ازادی موجود نہ ہو تب تک سماج میں تکثیریت پروان نہیں چڑھ سکتی

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔