24 جولائ, 2014 | 25 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

صدر کے دو عہدوں کے خلاف کیس کی سماعت ملتوی

صدر پاکستان آصف علی زرداری۔ فائل فوٹو

لاہور: لاہور ہائی کورٹ نے  صدر آصف علی ذرداری کے دو عہدوں کیخلاف کیس کی سماعت کی۔

 بدہ کے روز عمر عطا بندیال کی صدارت میں لاہور ہائی کورٹ کے لارجر بنچ نے کیس کی سماعت کی۔

 سماعت کے دوران حکومت کے نمائندے ایڈوکیٹ وسیم سجاد نے کہا کہ صدرکےخلاف درخواستیں ایسے دی جارہی ہیں جیسے کہ وہ عام آدمی ہوں۔

 انکا کہنا تھا کہ انہیں وقت دیا جائے، وہ تاخیری حربےاستعمال نہیں کررہے۔

 جسٹس بندیال نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ صدرعام آدمی نہیں ہیں۔ انکا کہنا تھا کہ یہ توہین عدالت کامعاملہ ہے،فیصلہ میرٹ پرہوگا۔

 کیس کی سماعت اکتیس اکتوبر تک ملتوی کردی گئی۔

 اس سے قبل پانچ ستمبر کی سماعت کے دوران لاہورہائی کورٹ نے صدر آصف علی زرداری کے دو عہدے رکھنے کےخلاف دائر توہین عدالت کی درخواست پر صدر کے پرنسپل سیکرٹری کو دوبارہ نوٹس جاری کیا تھا۔

 واضح رہے کہ بائیس جون کو چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے عدالتی حکم کے باوجود دو عہدے رکھنے پر صدر پاکستان کے پرنسپل سیکرٹری کو نوٹس جاری کیا تھا۔

 درخواست گزار کے وکیل اے کے ڈوگر نے مؤقف اختیارکیا تھا کہ عدالتی حکم کے باوجود صدر نے ایک عہدہ  نہیں چھوڑا اور وہ ایوان صدر میں سیاسی سرگرمیاں جاری رکھے ہوئے ہیں۔

اس حصے سے مزید

بلوچستان: ڈھائی سال میں پہلا پولیو کیس

یونیسیف کے مطابق پولیو وائرس کا شکار 18 ماہ کی بچی کا خاندان رواں سال کراچی سے قلعہ عبداللہ منتقل ہوا تھا۔

اسرائیلی جارحیت: نواز شریف کا ملک میں یومِ سوگ کا اعلان

جعمہ کوسرکاری عمارتوں پر قومی پرچم سرنگوں رہے گا، وزیراعظم نے غزہ کے متاثرین کیلئے 10لاکھ ڈالرامداد کا بھی اعلان کیا ہے۔

وفاقی حکومت نے آزادی تقریبات کا اعلان کر دیا

تقریبات کا اعلان کرتے ہوئے سعد رفیق نے تحریک انصاف کے مارچ کے حوالے سے سوال کا جواب دینے سے معذرت کر لی۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بے وجہ پوائنٹ اسکورنگ

ہوسکتا ہے عمران خان پی ایم ایل-ن کی حکومت گرانا چاہتے ہوں لیکن کیا وہ واقعی ملک اور اسکے جمہوری اداروں کے لئے خطرہ ہیں؟

بلاگ

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔

شکایتوں کا بن جو میرا دیس ہے

شکایتی ٹٹو زنده قوم کی نشانی ہوتے ہیں۔ مستقل شکایت کرتے رہنا اب ہماری پہچان بن چکا ہے۔

کھیلنے دو: گراؤنڈز کہاں ہیں؟

سیدھی سی بات ہے، ملائی تبھی زیادہ اور بہترین ہوگی جب دودھ زیادہ ہوگا-