21 ستمبر, 2014 | 25 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

ونی کیس: بچیوں کو عدالت میں پیش کرنے کا حکم

ونی کی سماعت جاری ہے- فائل فوٹو

کوئٹہ: سپریم کورٹ کوئٹہ رجسٹری میں ڈیرہ بگٹی ونی کیس کی سماعت شروع ہوگئی۔

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری، جسٹس خلجی عارف حسین اور جسٹس جواد ایس خواجہ پر مشتمل تین رکنی بنچ نے سپریم کورٹ کوئٹہ رجسٹری میں کیس کی سماعت کر رہا ہے۔

جسٹس خواجہ کا کہنا تھا کہ جب تک لوگ سامنے نہیں آتے مسئلہ حل نہیں ہوگا۔

آج سماعت کے شروع میں چیف جسٹس نے طارق مسوربگٹی کے کزن سرفراز بگٹی سے ثبوتوں کے بارے میں دریافت کیا جو انہوں نے پیش کرنے کو کہا تھا۔

سرفراز بگٹی کا کہنا تھا کہ یہ واقعہ ایک ماہ پرانا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ جرگےمیں شریک قبائلی عمائدین کےنام بھی بتاسکتے ہیں۔

تاہم ایڈوکیٹ جنرل امان اللہ کنڈھانی کا کہنا تھا کہ ابھی تک ایسا کوئی واقعہ سامنے نہیں آیا۔

ایڈوکیٹ جنرل بلوچستان نے کہا کہ شواہد نہ ہونے کی بنیاد پر اس کیس کوختم کیا جائے۔

سپریم کورٹ نے اس کے جواب میں کہا کہ کیس ختم نہیں کرسکتے اور تفتیش کرنی ہوگی۔

سپریم کورٹ نے حکم دیا کہ بچیوں کا عدالت میں پیش کیا جائے۔

رپورٹوں کے مطابق پانچ روز قبل بکر میں مبینہ طور پر رکن اسمبلی طارق مسوری بگٹی کی سربراہی میں ایک جرگے کا انعقاد ہوا تھا اور خونی تنازعے کے تصفیے کیلیے تیرہ لڑکیوں کو ونی کردیا تھا۔

اس واقعے کے منظر عام پر آنے کے بعد سپریم کورٹ نے اس واقعے کا ازخود نوٹس لیتے ہوئے طارق مسوری کو عدالت میں طلب کیا تھا۔

تاہم طارق مسوری نے گزشتہ روز ہونے والی سماعت میں عدالت کو بتایا تھا کہ جرگہ ان کی سربراہی میں نہیں ہوا اور وہ اس وقت ملتان میں تھے۔

دوسری جانب عدالت میں ڈپٹی کمشنرڈیرہ بگٹی کا کہنا تھا کہ بچیوں کو لانے کے لیے دو ہیلی کاپٹر ڈیرہ بگٹی بھیج دیے ہیں۔

ونی ایک رسم ہے جس میں ناراض پارٹی کو تنازعہ حل کرنے لیئے لڑکیاں شادیوں کے لیئے دے دی جاتیں ہیں۔ یہ رسم برسوں سے صوبہ خیبر پختونخواہ صوبہ بلوچستان اور سندھ کے کچھ حصوں میں مختلف ناموں سے موجود ہیں۔

اینٹی خواتین پریکٹس کی روک تھام کے لیئے سن دو ہزار گیارہ میں ایک ایکٹ بنایا گیا تھا جس نے اس رسم کو جرم قرار دیا تھا۔

اس ایکٹ کے مطابق ‘کوئی بھی آدمی بدلہ صلح، ونی، سوارا یا کسی دوسری رسم یا پریکٹس کے تحت چاہے وہ کسی نام سے بھی ہو، کسی سول تنازعہ کو حل کرنے کے لیئے کسی بھی لڑکی کو شادی کے لیئے دے گا یا اسے شادی پر مجبور کرے گا، اسے قید کی سزا دی جائے گی جو سات سال تک ہوسکتی ہے لیکن تین سال سے کم نہیں ہوسکتی اور اس کے ساتھ ساتھ اس پر پانچ لاکھ جرمانہ بھی ہوگا۔

اس حصے سے مزید

کوئٹہ میں دھماکا،11افراد زخمی

دھماکا جناح ٹاؤن کےعلاقے پنج فٹی میں ہوا، زخمی افراد میں خاتون شامل ہیں،پولیس کےمطابق دھماکا خیز مواد سائیکل میں نصب تھا

تربت میں بم دھماکا، ایک شخص ہلاک

تربت میں سڑک کنارے نصب بم پھٹنے سے ایک شخص ہلاک اور دو زخمی ہو گئے، مستونگ میں دو آئل ٹینکر نذر آتش کر دیے گئے۔

کوئٹہ: پاک فوج کا طیارہ گر کر تباہ

حادثے کے نتیجے میں طیارے میں سوار پائلٹ کیپٹن عمر اور کیپٹن حسنین محمود زخمی ہوگئے، جنہیں کوئٹہ منتقل کردیا گیا۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

پاکستان کی "مڈل کلاس" بغاوت

پاکستان کے مڈل کلاس لوگ ہی جمہوریت کے سب سے بڑے مخالف ہیں اور کچھ کیسز میں تو جمہوریت کی مخالفت بغاوت کی حد تک شدید ہے۔

!میرے پیارے اسلام آباد

میں آپ سے معافی چاہتا ہوں کہ میں نے آپ کی جانب دو دھرنے بھیجے ہیں، جنہوں نے آپ کا امن و سکون تباہ کر دیا ہے۔

بلاگ

بلوچ نیشنلزم میں زبان کا کردار

لسانی معاملات پر غیر دانشمندانہ طریقہ سے اصرار مزید ناراضگی اور پیچیدگیوں کا سبب بن سکتا ہے، جو شاید مناسب قدم نہیں۔

خواندگی کا عالمی دن اور پاکستان

تعلیم کو سرمایہ کاروں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے جن کے لیے تعلیم ایک جنس ہے جسے بیچ کر منافع کمایا جاسکتا ہے-

ڈرامہ ریویو: چپ رہو - حساس ترین موضوع پر بہترین پیشکش

زیادتی جیسے واقعات ہر وقت خبروں میں رہتے ہیں اس حوالے سے یہ ڈرامہ شعور اجاگر کرنے میں اہم کردار ادا کرسکتا ہے۔

میں باغی ہوں

اس ملک میں کہیں قانون کی حکمرانی نہیں، ہر جگہ لوٹ مار مچی ہے- کسی کو قانون کا پاس نہیں- تبدیلی آئی تو سب کا احتساب ہوگا-