28 اگست, 2014 | 1 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

'قومی مفاد جمہوری نظام میں ہے'

سپریم کورٹ۔ اے ایف پی تصویر

اسلام آباد: منگل کے روز سیاستدانوں میں رقوم کی تقسیم کے حوالے سے کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کا کہنا ہے کہ قومی مفاد اسی میں ہے کہ جمہوری نظام چلتا رہے۔

 چیف جسٹس کی سربراہی میں عدالت عظمی کا تین رکنی بنچ کیس کی سماعت کر رہا ہے۔ انکا کہنا ہے کہ اب آئی جی آئی نہیں بنے گی، جو آئین کہتا ہے وہی ہوگا۔

 افتخار محمد چوہدری کے مطابق ماضی میں جو کچھ ہوا اسے نہیں بھولنا چاہیے۔انکا کہنا تھا کہ آئین کو حالیہ دنوں بگاڑنے کی  کوشش کی گئی تھی۔

 اس سے قبل کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے اپنے ریمارکس میں کہا تھا  کہ صدر کا عہدہ بہت اہمیت کا حامل ہوتا ہے تاہم بد قسمتی سے سابق صدر مملکت ایسی سرگرمیوں میں ملوث تھے۔

 چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ بنچ ایوان صدر سے  جواب کا انتظار کر رہا ہے، جواب نفی میں آیا تو جلال حیدر کو بلانے پر غور کریں گے۔

 اصغر خان کے وکیل سلمان اکرم راجہ نے کیس سے متعلق 'حقائق کی سمری' عدالت میں  پیش کی اور کہا کہ یہ مشترکہ آپریشن تھا جسمیں ایم آئی کے اکاونٹس استعمال کیے گئے تھے۔

 جس کے جواب میں چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ بریگڈیر حامد سعید کے اکاؤنٹس کھولنے کا یہ مطلب نہیں کہ ایم آئی اس معاملے میں ملوث تھی۔

 درخواست گزار کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ایم آئی افسران کے اکاؤنٹس آئی ایس آئی کے کنٹرول میں تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ جنرل ریٹائرڈ اسد درانی نے اعتراف کیا کہ انکی ہدایت پر اکاؤنٹس کھلے اور جنرل درانی پورے آپریشن کے انچارج تھے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ چودا کروڑ میں سے سات کروڑ روپے سیاست دانوں میں تقسیم کیے گئے۔

اس حصے سے مزید

'سانحہ ماڈل ٹاؤن کی ایف آئی آر درج کروانے کے لیے تیار ہیں'

وفاقی وزیرِ ریلوے سعد رفیق کا کہنا ہے کہ ایف آئی آر میں وزیراعظم نواز شریف سمیت تمام 21 اعلیٰ حکام کو شامل کیا جائے گا۔

وزیراعظم کا دورہ منسوخ، صدر ترکی روانہ

صدر ممنون حسین سمیت چھیاسٹھ ممالک کے سربراہان مملکت ترک صدر طیب اردگان کی تقریبِ حلف برداری میں شرکت کریں گے۔

پندرھواں دن: طاہر القادری کا آج یومِ انقلاب منانے کا اعلان

طاہر القادری نے آج تین بجے یومِ انقلاب، جبکہ عمران خان شام جھ بجے آئندہ کے لائحہ عمل کا علان کریں کریں گے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

دو کشتیوں کے سوار نواز شریف

نواز شریف کے مطابق اگر ان کو طاقت کے زور پر نکالا گیا تو پاکستان کو سنبھالنا مشکل ہوجائے گا۔

پاکستان میں جمہوریت

کیا جمہوریت پاکستان میں عوام کیلیے ہے یا حکمرانوں کو انتخابات میں دوبارہ منتخب ہونے کی یقین دہانی کیلیے ہے؟

بلاگ

آزادی کے سائیڈ افیکٹس

اس قوم کا مزید آزادی کی بات کرنا بہت حیران کن ہے۔ یہ قوم تو آزادی کے سائیڈ افیکٹس کا شکار ہے۔

'آزادی' کے بعد: 'نیا پاکستان' اور 'انقلابی کابینہ'

سب سے زیادہ توجہ میڈیا پر دینی ہوگی اور گندی مچھلیوں سے پاک کرنے کے لئے تمام 'ملک دشمن' چینلز پر فوری پابندی لگانی ہوگی

مووی ریویو: ٹین ایج میوٹنٹ ننجا ٹرٹلز

تباہی و بربادی کے سینز، سپر ہیروز اور ایک حسینہ والے کامیاب ثابت شدہ فارمولے فلم کا حصہ رہے۔

تجزیوں کا بخار

گھر کے تمام افراد کو اتنے گروپس میں تقسیم کیا جا سکتا ہے، جتنے کہ تجزیہ کار موجود ہیں۔