24 اگست, 2014 | 27 شوال, 1435
ڈان نیوز پیپر

عافیہ کے معاملے پر سب خاموش ہیں،فضل الرحمان

عافیہ کو گولی مارنے والا امریکی تھا اس لئے تمام انسانی حقوق کی تنظیمیں اور میڈیا خاموش ہے، فضل الرحمان۔ فائل فوٹو

پشاور: جمیعت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ ملالہ پر حملے کے خلاف تو بہت شور مچایا گیا مگر ڈاکٹر عافیہ کے معاملے پر سب خاموش ہیں۔

 پشاور میں سابق وزیراعلٰی خیبر پختونخواہ اکرم خان درانی کے بیٹے ضیاد درانی کے حوالے سے تعزیتی ریفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ طالبان کی غلطیوں کو بھی وہ تسلیم کرتے ہیں تاہم ہر طرح کے مظالم کو ظلم ہی سمجھنا چاہئے۔

 انکے مطابق چونکہ عافیہ کو گولی مارنے والا امریکی تھا اس لئے تمام انسانی حقوق کی تنظیمیں اور میڈیا خاموش ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے فیصلے انصاف کی بنیاد پر نہیں ہوتے۔

 جمعیت علمائے اسلام کے سربراہ کا کہنا تھا کہ اگر نوجوانوں کے اندر تبدیلی کی خواہش ہے تو سب سے پہلے کرپشن کا خاتمہ کیا جائے۔

اس حصے سے مزید

اورکزئی ایجنسی: امن لشکر اور شدت پسندوں میں جھڑپ، پانچ ہلاک

ذرائع کے مطابق مارے جاے والے مبینہ شدت پسند درّۂ آدم خیل میں طالبان کے مومن گروپ سے تعلق رکھتے تھے۔

مانسہرہ: ریپ کے ملزم کی جان سے مارنے کی دھمکیاں

ریپ کی شکار لڑکی نے الزام عائد کیا ہے کہ پولیس اہلکار عدالت سے باہر معاملہ طے نہ کرنے پر قتل کی دھمکیاں دے رہا ہے۔

پشاور: تیز بارش میں حادثات، 8 افراد ہلاک، 42زخمی

پشاور اور گرد ونواح میں تیزہواؤں کے ساتھ آندھی اورگردآلود طوفان شروع ہوا جس کے بعد گرج چمک کے ساتھ شدید بارش شروع ہوگئی۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (2)

Ishaque Mahar
22 اکتوبر, 2012 14:20
Moulana is 100% correct and U.S.A is world's No.1 terrorist.
Ishaque Mahar
22 اکتوبر, 2012 14:24
most of Malala's has been martyred by U.S and Pakistani soldiers, but no one media channel cried, why only Malala.....?
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ڈرامے کی آخری قسط

اب اس آخری میلوڈرامہ کا جو بھی انجام ہو- اس نے پاکستانیوں کی آخری ہلکی سی امید کوبھی ریزہ ریزہ کردیا ہے-

پی ٹی آئی کی خالی دھمکیاں

جو دھمکیاں دی جا رہی ہیں، وہ حقیقت سے دور ہیں۔ ایسا کوئی راستہ موجود نہیں، جس سے پارٹی اپنی ان دھمکیوں پر عمل کر سکے۔

بلاگ

سیاست میں شک کی گنجائش

شکوک کے ساتھ ساتھ ان افواہوں کو بھی تقویت مل رہی ہے کہ عمران خان اور طاہرالقادری اصل میں اسٹیبلشمنٹ کے مہرے ہیں۔

پکوان کہانی : شاہی قورمہ

جو اکبر اعظم کے شاہی باورچی خانے کی نگرانی میں راجپوت خانساماؤں کے تجربات کا نتیجہ ہے۔

دفاعی حکمت عملی کے نقصانات

مصباح کے دفاعی انداز کے اثرات ہمارے جارحانہ انداز رکھنے والے بیٹسمینوں پر بھی پڑے ہیں

پاکستان ایک "ساس" کی نظر سے

68 سالہ جین والر کو پاکستان بہت پسند آیا، اتنا زیادہ کہ بقول ان کے مجھے پاکستان سے محبت ہوگئی ہے۔