17 اپريل, 2014 | 16 جمادی الثانی, 1435
ڈان نیوز پیپر

عافیہ کے معاملے پر سب خاموش ہیں،فضل الرحمان

عافیہ کو گولی مارنے والا امریکی تھا اس لئے تمام انسانی حقوق کی تنظیمیں اور میڈیا خاموش ہے، فضل الرحمان۔ فائل فوٹو

پشاور: جمیعت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ ملالہ پر حملے کے خلاف تو بہت شور مچایا گیا مگر ڈاکٹر عافیہ کے معاملے پر سب خاموش ہیں۔

 پشاور میں سابق وزیراعلٰی خیبر پختونخواہ اکرم خان درانی کے بیٹے ضیاد درانی کے حوالے سے تعزیتی ریفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ طالبان کی غلطیوں کو بھی وہ تسلیم کرتے ہیں تاہم ہر طرح کے مظالم کو ظلم ہی سمجھنا چاہئے۔

 انکے مطابق چونکہ عافیہ کو گولی مارنے والا امریکی تھا اس لئے تمام انسانی حقوق کی تنظیمیں اور میڈیا خاموش ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے فیصلے انصاف کی بنیاد پر نہیں ہوتے۔

 جمعیت علمائے اسلام کے سربراہ کا کہنا تھا کہ اگر نوجوانوں کے اندر تبدیلی کی خواہش ہے تو سب سے پہلے کرپشن کا خاتمہ کیا جائے۔

اس حصے سے مزید

خیبرپختونخوا میں پولیو مہم فوج کے سپرد

وزیر اعظم نواز شریف کی ہدایت پر خیبر پختونخوا میں پولیو کے خاتمے کی مہم پاک فوج کے سپرد کردی گئی۔

چینی سرمایہ کاروں کی خیبرپختونخواہ میں کام بند کرنے کی دھمکی

چینی سرمایہ کاروں کے نمائیندے نے الزام لگایا ہےکہ ضیاء اللہ آفریدی نامی مشیر ان کے کام میں رکاوٹ بن رہے ہیں۔

' مذاکرات کا عمل پیچیدہ ہے، ٹاک شوز پر حل نہیں کیا جاسکتا '

فاٹا کو افغانستان اور سنٹرل ایشیاء کا گیٹ وے بنائینگے اور امن و امان کیلئے کام کرینگے، نو منتخب گورنر سردار مہتاب عباسی۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (2)

Ishaque Mahar
22 اکتوبر, 2012 14:20
Moulana is 100% correct and U.S.A is world's No.1 terrorist.
Ishaque Mahar
22 اکتوبر, 2012 14:24
most of Malala's has been martyred by U.S and Pakistani soldiers, but no one media channel cried, why only Malala.....?
مقبول ترین
بلاگ

جمہوریت، سیکولر ازم اور مذہبی سیاسی جماعتیں

مذہب کے نام پر کوئی متفقہ سیاسی نظام بن ہی نہیں سکتا کیونکہ مذاہب کے درجنوں دھڑے کسی ایک ایشو پر متفق نہیں ہو سکتے۔

میڈیا کے چٹخارے

پاکستانی میڈیا کو جتنی زیادہ آزادی ہے اسکی اپروچ اتنی ہی جانبدارانہ ہے، عوام کی پولرائزیشن میں میڈیا کا بہت بڑا ہاتھ ہے

یکسانیت اور رنگا رنگی

یکسانیت جانی پہچانی بلکہ اطمینان بخش بھی ہوسکتی ہے، لیکن اس کا مطلب ہے چیلنج سے بچنا، جس کے بغیر کامیابی ممکن نہیں۔

ٹی ٹی پی نہیں تو پھر مذاکرات کیوں؟

عام آدمی کو صرف تحفظ چاہئے اور اگر مذاکرات یہ نہیں دے رہے تو ان کو مزید آگے بڑھانے سے کیا حاصل؟