19 ستمبر, 2014 | 23 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

شدت پسندوں سے جنگ کے لئے قومی اتفاقِ رائے ضروری ہے

صدرِ پاکستان آصف علی زرداری۔ فائل تصویر

اسلام آباد: صدرِ پاکستان آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ عسکریت پسندوں سے جنگ کے لئے قومی اتفاقِ رائے ضروری ہے۔

ڈان نیوز کے مطابق صدر زرداری نے کہا کہ ہمیں ان ( عسکریت پسندوں) کی جوابی کارروائی نے نبرد آزما ہونے کیلئے اپنی صلاحیتوں کا جائزہ لینا چاہئے۔

اسلام آباد میں منعقدہ میڈیا، عسکریت پسندی اور شفاف انتخابات کے موضوع پر ساوتھ ایشیا فری میڈیا ایسوسی ایشن (سیفما ) کے تحت ہونے والی کانفرنس میں انہوں نے کہا کہ دہشتگردی کیخلاف جنگ قومی اتفاقِ رائے کے ساتھ لڑی جائے گی۔

' ہم اس امر پر متفق ہیں کہ دہشتگردوں کے خلاف کارروائی ضروری ہے لیکن کیا ہم پلٹ کر آنے والے وار کیلئے تیار بھی ہیں؟ صدر نے سوال کیا۔

اگر ہم خود اپنے درمیان مفاہمت پیدا نہیں کرسکے تو ہم دیگر ممالک کے ساتھ بھی ہم آہنگی پیدا نہیں کرسکیں گے۔ انہوں نے کہا۔

صدر زرداری نے کہا کہ حالیہ صورتحال میں یوں لگتا ہے کہ اپوزیشن پارٹیوں کے ساتھ  اتفاقِ رائے کی بات کرنا بے کار ہے۔

زرداری نے کہا کہ جب (دہشگردی کیخلاف) جنگ چھڑی تو کئی ممالک نے آگے بڑھ کر اپنی مدد کے وعدے کئے لیکن صرف چین ایسا ملک تھا جس نے  اس جنگ میں حقیقی معنوں میں پاکستان کی مدد کی۔

انہوں نے کہا کہ 'ایک صدر کی حیثیت سےمیں قوم کے سامنے جوابدہ' ہوں اور انہوں نے ساتھ ہی میڈیا سے درخواست کی کہ وہ تصویر کے دونوں رخ دکھائے کہ نہ صرف پاکستان بلکہ پوری دنیا میں مالی بحران آیا ہوا ہے۔

انہوں نے نے ملالئے یوسفزئی سمیت دہشتگردی سے متاثر ہونے والے ہر بچے کے ساتھ افسوس کا اظہار کیا۔

انہوں نے سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے قتل کے بعد اس پر عوامی ردِ عمل کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کوئی وکیل ان کا کیس لڑنے کیلئے تیار نہیں تھا اور ان کے اہلِ خانہ سے بھی بہت کم لوگوں نے اپنی مدد اور تعاون کا اظہار کیا۔

اس حصے سے مزید

حکومت دیکھو اور انتطار کرو کی پالیسی سے مطمئن

وزیراعظم نے اپنی حد تک ہر ممکن بہترین کوششیں کرکے یہ صورتحال پیدا کی اور اب اپنی حکومت معمول کے مطابق چلارہے ہیں۔

یوم نجات کے لیے پی ٹی آئی اور انتظامیہ کی تیاریاں

یوم نجات منانے کے اعلان کے بعد سے پی ٹی آئی اور انتظامیہ نے طاقت کے اس مظاہرے کے لیے اپنی اپنی تیاریاں شروع کردی ہیں۔

دھاندلی ثابت ہونے پر وزیراعظم سے مستعفی ہونے کے اعلان کا مطالبہ

حزب اختلاف کی جماعتوں کےسیاسی جرگےنےنوازشریف،عمران خان اورطاہرالقادری کوخط لکھاہےجس میں یہ مطالبہ کیاگیاہے۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (2)

zafarhassan
21 اکتوبر, 2012 19:32
i m thankful to the dawn that they help me a lot i have been in search of websites for translating urdu into english but the dawn.com is the first site that fulfills my requirements thanks.....!
محمد عارف
22 اکتوبر, 2012 01:40
صدر صاحب جو گورنر تاثیر نے کیا ۔ کیا وہ ٹھیک تھا ۔
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مزید جمہوریت

نظام لپیٹ دینے اور امپائر کی باتیں کرنے کے بجائے ہمارا مطالبہ صرف مزید جمہوریت ہونا چاہیے، کم جمہوریت نہیں۔

تبدیلی آگئی ہے

ملک میں شہری حقوق کی عدم موجودگی میں عوام اب وسیع تر بھلائی کا سوچنے کے بجائے اپنے اپنے مفاد کے لیے اقدامات کررہے ہیں۔

بلاگ

شاہد آفریدی دوبارہ کپتان، ایک قدم آگے، دو قدم پیچھے

اس بات کی ضمانت کون دے گا کہ ماضی کی طرح وقار یونس اور شاہد آفریدی کے مفادات میں ٹکراؤ پیدا نہیں ہوگا۔

وارے نیارے ہیں بے ضمیروں کے

ماضی ہو یا حال، اربابِ اختیار و اقتدار کی رشوت اور بدعنوانی کے خلاف کھوکھلی بڑھکوں کی حیثیت محض لطیفوں سے زیادہ نہیں۔

کراچی میں فرقہ وارانہ دہشتگردی

کراچی ایک مرتبہ پھر فرقہ وارانہ دہشت گردی کی زد میں ہے اور روزانہ کوئی نہ کوئی بے گناہ سنی یا شیعہ اپنی جان گنوا رہا ہے۔

اجمل کے بغیر ورلڈ کپ جیتنا ممکن

خود کو ورلڈ کلاس باؤلنگ اٹیک کہنے والے ہمارے کرکٹ حکام کی پوری باؤلنگ کیا صرف اجمل کے گرد گھومتی ہے۔