01 ستمبر, 2014 | 5 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

آئی ایس آئی سیاسی سیل پانچ سال قبل ختم کردیا گیا تھا'

سینیٹ کے اجلاس کا ایک منظر۔ فائل تصویر

اسلام آباد: سیکریٹری دفاع لیفٹنٹ جنرل ریٹائرڈ آصف یاسین ملک نے سینیٹ میں بتایا کہ انٹر سروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) میں سیاسی سیل پانچ سال قبل ختم کردیا گیا تھا اور آئی ایس آئی ایسے کسی سیل کو نہیں چلاتی۔

ڈان نیوز کے مطابق سینیٹ میں دفاعی پیداوار پر قائمہ کمیٹی کی میٹنگ کے دوران ملک نے بتایا کہ فی الحال آئی ایس آئی میں کوئی سیاسی سیل کام نہیں کررہا۔

سیکریٹری دفاع نے مزید کہا کہ جب شمسی ایئر بیس امریکہ کے زیرِ استعمال تھا تو وہاں سے ڈرون حملے کئے جاتے تھے اور یہ فضائی حملے حکومت کی اجازت سے ہوتے تھے۔

بیس اکتوبر دوہزار گیارہ کو یہ ایئر بیس امریکہ کے بعد متحدہ عرب امارات کو سب لیز کردیا گیا تھا جس کی اجازت پرویز مشرف نے دی تھی۔ امریکہ نے گیارہ دسمبر دوہزار گیارہ کو یہ ایئربیس خالی کردیا گیا تھا۔

اجلاس کے دوران سیکریٹری دفاع نے رواں سال کی دفاعی بجٹ کی تفصیلات سینیٹ کی دفاعی کمیٹی میں پیش کی۔

انہوں نے  بتایا کہ رواں سال کا مجموعی دفاعی بجٹ پانچ سو پینتالیس ارب روپے ہے۔

دفاعی بجٹ میں سے فوج کا حصہ دو سو چونسٹھ ارب ،ایئر فورس کا بجٹ  ایک سو  چودہ  ارب اورنیوی کا  باون ارب  روپے ہے۔ دفاعی بجٹ میں سے  بانوے ارب کی رقم ائی ایس ائی، جوائنٹ اسٹاف ہیڈ کورٹر، ائی ایس پی ار اور دفاعی پیداوار کے اداروں کو فراہم کی جاتی ہے۔

سیکریٹری دفاع کا کہنا تھا کہ دفاعی اداروں، بشمول ائی ایس ائی کا بجٹ باقاعدہ آڈٹ کیا جاتا ہے۔  فوج ٹیکسوں کی مد میں اٹھائیس ارب روپے واپس کرتی ہے۔

امریکا نے نائین الیون کے بعد اب تک پاکستان کو بارہ ارب ڈالر دیے ہیں اور شمسی ائیر بیس استعمال کرنے پر امریکہ نے پاکستان کو ایک پائی بھی ادا نہیں کی۔

انہوں نے بتایا کہ نیٹو سپلائی کے بعد سے امریکا کی جانب سے دفاعی امداد بحال ہوچکی ہے۔

اجلاس میں شامل سینیٹر مشاہد حسین نے بتایا کہ کہ تینوں مسلح افراد کے سربراہاں دفاعی کمیٹی کے بلانے پر مستقبل میں پیش ہوں گے۔

سیکریٹری دفاع نے مزید بتایا کہ کوای لیشن اور اتحادی سپورٹ فنڈ کی امداد براہ راست جی ایچ کیو کونہیں ملتی۔

اس حصے سے مزید

عمران، قادری کیخلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج

دونوں رہنماؤں کے خلاف ایس ایچ او محبوب احمد کی مدعیت میں سیکریٹریٹ پولیس تھانےمیں ایف آئی آر نمبر 182 31/8 درج کی گئی۔

وزیر اعظم اور آرمی چیف کی ملاقات ختم

وزیر اعظم نواز شریف اور آرمی چیف جنرل راحیل شریف کے درمیان آج ہونے والی ملاقات ختم ہو گئی ہے۔

شاہراہِ دستور پر صحافت ایک جرم ہے

میڈیا کے نمائندے جو کچھ منظر میں ہوتا ہے، وہی ناظرین کو دکھاتے ہیں، لیکن شاہراہِ دستور پر ان کا یہ فرض جرم بن گیا تھا۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

احتیاطی نظربندی کا غلط قانون

فوجی اور سویلین حکومتوں نے باقاعدگی سے احتیاطی نظربندی کو اپنے مخالفین کو خاموش کرنے اوردھمکانے کے لیے استعمال کیا ہے۔

توجہ طلب شعبہ

بجلی کی لائنیں لگانے اور مرمت کرنے کو دنیا کے دس خطرناک ترین پیشوں میں شمار کیا جاتا ہے-

بلاگ

سیاست اور اخلاقیات

پتہ نہیں وہ کون سے ملک یا قومیں ہوتی ہیں جن کے عہدیدار کسی بھی ناکامی کی صورت میں فوراً اپنے عہدے سے مستعفی ہوجاتے ہیں۔

تاریخ کی تکرار

پولیس پر تشدد اور دہشت گردی کا الزام لگانے والے کیا اپنے گھروں پر کسی ایرے غیرے نتھو خیرے کو چڑھائی کی اجازت دیں گے؟

آبی مسائل کا ذمہ دار ہندوستان یا خود پاکستان؟

پاکستان میں پانی اور بجلی کے بحران کی وجہ پچھلے 5 عشروں سے پانی کے وسائل کی خراب مینیجمنٹ ہے۔

نوازشریف: قوت فیصلہ سے محروم

نواز شریف اپنے بادشاہی رویے کی وجہ سے پھنس چکے ہیں، جو فیصلے انہیں چھ ماہ پہلے کرنے چاہیے تھے وہ آج کر رہے ہیں۔