24 اگست, 2014 | 27 شوال, 1435
ڈان نیوز پیپر

کراچی بدامنی: فیڈرل بی ایریا میں پانچ افراد ہلاک

دہشت گردی اور فائرنگ کے واقعات میں دو سگے بھائیوں سمیت مجموعی طور پر دس افراد ہلاک ہوگئے۔ – فائل فوٹو

کراچی: کراچی میں دہشت گردی اور فائرنگ کے واقعات میں دو سگے بھائیوں سمیت دس افراد ہلاک ہوگئے۔ جبکہ صرف ایک واقعہ میں پانچ افراد لقمہ اجل بن گئے۔

جمعرات کے روز فیڈرل بی ایریا بلاک بائیس میں نامعلوم افراد نے ایک مقامی ریستوران پر فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں دو افراد موقعہ پر ہلاک اور تین زخمی ہوگئے جنہیں فوری طور پر اسپتال منتقل کیا گیا۔ البتہ زخمی ہونے والے تینوں افراد بھی دوران طبی امداد دم توڑ گئے۔

واقعہ کے بعد علاقے میں کشیدگی پھیل گئی۔ دکانیں اور بازار بند ہوگیا اور پولیس اور رینجرز کی نفری بھی جائے وقوعہ پر پہنچ گئی۔

ہلاک ہونے والوں میں مذہبی جماعت کے کارکنان قاری رفیق، خدائے نور اس کا بھائی جبرائیل جبکہ ہوٹل مالک عامر اور راہ گیر ساجد شامل ہیں۔ پولیس کے مطابق واردات مین نائن ایم ایم پستول استعمال ہوا ہے۔

اس سے قبل نپیئر تھانے کی حدود فقیر محمد درہ روڈ پر فائرنگ سے پچاس سالہ عبداللہ بلوچ ہلاک ہوگیا تھا۔ جبکہ لیاری موسیٰ لین میں فائرنگ سے ایک شخص چل بسا اورنگی ٹاؤن میں اقبال کو گولیوں کا نشانہ بنایا گیا۔

فیڈرل بی ایریا بلاک سولہ میں فائرنگ سے سیاسی جماعت کا کارکن کامران ہلاک ہوا۔ جبکہ کلری میں کراون سینما کے عقب سے ایک شخص کی تشدد زدہ لاش  بھی ملی تھی۔

اس حصے سے مزید

کراچی: فائرنگ کے مختلف واقعات میں 5 افراد ہلاک

ایک مزار پر فائرنگ سے سجادہ نشین سید ذاکر حسین شاہ، اور متولی یونس اور نواز موقع پر ہی ہلاک ہوگئے.

الطاف حسین کو دھرنوں کے مقامات پر صفائی کے فقدان پر تشویش

انہوں نے حکومت اور دھرنے دینے والی جماعتوں کے رہنماوٴں پر زور دیا کہ خدارا وہ صرف فوٹو سیشن کے لیے مذاکرات نہ کریں۔

'ہمارے معاشرے میں تشدد کو سماجی منظوری حاصل ہے'

کراچی یونیورسٹی کی فیکلٹی آف آرٹس کے زیراہتمام ایک کانفرنس کے مقررین نے معاشرتی رویوں پر تنقیدی سوالات اُٹھائے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ڈرامے کی آخری قسط

اب اس آخری میلوڈرامہ کا جو بھی انجام ہو- اس نے پاکستانیوں کی آخری ہلکی سی امید کوبھی ریزہ ریزہ کردیا ہے-

پی ٹی آئی کی خالی دھمکیاں

جو دھمکیاں دی جا رہی ہیں، وہ حقیقت سے دور ہیں۔ ایسا کوئی راستہ موجود نہیں، جس سے پارٹی اپنی ان دھمکیوں پر عمل کر سکے۔

بلاگ

سیاست میں شک کی گنجائش

شکوک کے ساتھ ساتھ ان افواہوں کو بھی تقویت مل رہی ہے کہ عمران خان اور طاہرالقادری اصل میں اسٹیبلشمنٹ کے مہرے ہیں۔

پکوان کہانی : شاہی قورمہ

جو اکبر اعظم کے شاہی باورچی خانے کی نگرانی میں راجپوت خانساماؤں کے تجربات کا نتیجہ ہے۔

دفاعی حکمت عملی کے نقصانات

مصباح کے دفاعی انداز کے اثرات ہمارے جارحانہ انداز رکھنے والے بیٹسمینوں پر بھی پڑے ہیں

پاکستان ایک "ساس" کی نظر سے

68 سالہ جین والر کو پاکستان بہت پسند آیا، اتنا زیادہ کہ بقول ان کے مجھے پاکستان سے محبت ہوگئی ہے۔