23 ستمبر, 2014 | 27 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

کراچی بدامنی: فیڈرل بی ایریا میں پانچ افراد ہلاک

دہشت گردی اور فائرنگ کے واقعات میں دو سگے بھائیوں سمیت مجموعی طور پر دس افراد ہلاک ہوگئے۔ – فائل فوٹو

کراچی: کراچی میں دہشت گردی اور فائرنگ کے واقعات میں دو سگے بھائیوں سمیت دس افراد ہلاک ہوگئے۔ جبکہ صرف ایک واقعہ میں پانچ افراد لقمہ اجل بن گئے۔

جمعرات کے روز فیڈرل بی ایریا بلاک بائیس میں نامعلوم افراد نے ایک مقامی ریستوران پر فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں دو افراد موقعہ پر ہلاک اور تین زخمی ہوگئے جنہیں فوری طور پر اسپتال منتقل کیا گیا۔ البتہ زخمی ہونے والے تینوں افراد بھی دوران طبی امداد دم توڑ گئے۔

واقعہ کے بعد علاقے میں کشیدگی پھیل گئی۔ دکانیں اور بازار بند ہوگیا اور پولیس اور رینجرز کی نفری بھی جائے وقوعہ پر پہنچ گئی۔

ہلاک ہونے والوں میں مذہبی جماعت کے کارکنان قاری رفیق، خدائے نور اس کا بھائی جبرائیل جبکہ ہوٹل مالک عامر اور راہ گیر ساجد شامل ہیں۔ پولیس کے مطابق واردات مین نائن ایم ایم پستول استعمال ہوا ہے۔

اس سے قبل نپیئر تھانے کی حدود فقیر محمد درہ روڈ پر فائرنگ سے پچاس سالہ عبداللہ بلوچ ہلاک ہوگیا تھا۔ جبکہ لیاری موسیٰ لین میں فائرنگ سے ایک شخص چل بسا اورنگی ٹاؤن میں اقبال کو گولیوں کا نشانہ بنایا گیا۔

فیڈرل بی ایریا بلاک سولہ میں فائرنگ سے سیاسی جماعت کا کارکن کامران ہلاک ہوا۔ جبکہ کلری میں کراون سینما کے عقب سے ایک شخص کی تشدد زدہ لاش  بھی ملی تھی۔

اس حصے سے مزید

خواتین پولیس کیلیے ہزار بلٹ پروف جیکٹس کی امریکی امداد

امریکی حکومت کی جانب سے سندھ پولیس کو دی گئی امداد میں چھ گاڑیاں، ایک ہزار بلٹ پروف جیکٹس اور ہیلمٹ بھی شامل ہیں۔

الطاف حسین کی سندھ میں چار صوبوں کی تجویز

انہوں نے سوال کیا کہ اگر سندھ ایک ہے تو چالیس اور ساٹھ فیصد کا کوٹہ کیوں مقرر کیا گیا ہے۔

کراچی: فائرنگ کے واقعات میں 6 افراد ہلاک

لانڈھی میں ہوٹل پرناشتہ کرنےوالے 3نوجوانوں کونشانہ بنایاگیا،پراناحاجی کیمپ،مومن آباداورلیاری میں ایک ایک شخص ہلاک ہوا


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مڑی تڑی باتیں اور مقاصد

چیزوں کو اپنی مرضی کے مطابق توڑ مروڑ کر پیش کرنے، اور غیر آئینی اقدامات سے پاکستان کے مسائل میں صرف اضافہ ہی ہوگا۔

ذمہ داری ضروری ہے

سرکلر ڈیٹ کے لاعلاج مرض کی بدولت عالمی مالیاتی ادارے ہمارے توانائی کے منصوبوں میں سرمایہ کاری میں دلچسپی نہیں رکھتے۔

بلاگ

خواب دو انقلابیوں کے

ایک انقلابی خود کو وزیر اعظم بنتا دیکھ رہا ہے تو دوسرا صدارتی محل میں مریدوں سے ہاتھ پر بوسے کروانے کے خواب دیکھ رہا ہے۔

کوئی ان سے نہیں کہتا۔۔۔

ریڈ زون کے محفوظ باسیو! ہمیں دہشت گردوں، ڈاکوؤں، چوروں، اغواکاروں، تمہاری افسر شاہی اور پولیس سے بچانے والا کوئی نہیں۔

بلوچ نیشنلزم میں زبان کا کردار

لسانی معاملات پر غیر دانشمندانہ طریقہ سے اصرار مزید ناراضگی اور پیچیدگیوں کا سبب بن سکتا ہے، جو شاید مناسب قدم نہیں۔

خواندگی کا عالمی دن اور پاکستان

تعلیم کو سرمایہ کاروں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے جن کے لیے تعلیم ایک جنس ہے جسے بیچ کر منافع کمایا جاسکتا ہے-