25 جولائ, 2014 | 26 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

سپریم کورٹ نے وزیراعظم کے خلاف کیس نمٹا دیا

سپریم کورٹ،۔ فائل تصویر اے ایف پی

اسلام آباد: سپریم کورٹ میں این آر او عمل درآمد کیس کی سماعت ہوئی۔

سماعت کے دوران وفاقی وزیر قانون فاروق ایچ نائک کا کہنا تھا کہ اکتوبرکے حکم کے دونوں حصوں کی تعمیل کردی ہے۔

جسٹس انور ظہیرجمالی کی سربراہی میں کام کرنے والے پانچ رکنی لارجر بینچ نے کیس ختم کرتے ہوئے اپنے آرڈر میں کہا  کہ عدالت کے حکم پر عمل ہوچکا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ خط سفارتی ذرائع سے بھجوایا گیا ہے۔

فاروق نائک کا کہنا تھا کہ نومبرکو خط جنیوا کے اٹارنی جنرل کو موصول ہوگیا ہے اور وزیراعظم کو سمری اور اس کی منظوری کی نقل بھی جمع کرادی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ وزیراعظم کے خلاف توہین عدالت کا کیس ختم کیا جائے۔

دریں اثناء سپریم کورٹ نے وزیراعظم کے خلاف توہین عدالت کا کیس نمٹا دیا اور وزیراعظم کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی ختم ہوگئی۔

بعد میں عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر قانون نے کہا کہ انصاف اور جمہوریت کی فتح ہوئی ہے۔

فاروق نائیک کا کہنا تھا کہ حکومت نے عدالت کے ہر حکم کی تعمیل کی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ خط لکھ دیا ہے اور اب معاملہ اٹارنی جنرل جنیوا کے ہاتھ میں ہے۔

وزیرقانون کا کہنا تھا کہ خط مجبوری میں نہیں بلکہ سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق لکھا ہے۔ ان کے مطابق سوئزرلینڈ میں کوئی کرمنل کیس زیر سماعت نہیں ہے۔

اس حصے سے مزید

اسلام آباد کو تین ماہ کیلئے فوج کے حوالے کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد کو آئین کے آرٹیکل 245 کے تحت یکم اگست سے تین ماہ کے لیے فوج کے حوالے کرنے کا فیصلہ کر لیا، چوہدری نثار۔

پنڈی والوں کی ناراضگی کا ڈر

نواز شریف کسی بھی ایسے مسئلے کو طول دینے کے حق میں نہیں ہیں، جو پنڈی والوں کی ناراضگی کا سبب بن سکتا ہو۔

اسلام آباد: آئی ڈی پی کیمپ میں بچھوؤں کی بھرمار

ایک سرکاری افسر کے مطابق دارالحکومت میں آئی ڈی پیز کے لیے قائم واحد کیمپ میں جان لیوا بچھوؤں کی بھرمار ہے۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (1)

نون میم
14 نومبر, 2012 06:24
پاکستان عوام یہ جاننے کا حق رکھتی ہے کہ اس نوراکشتی میں ملک کو جو مالی اور نفسیاتی نقصان ہوا اسکا ذمہ دارکون ہے اور اس نقصان کا ازالہ کون کرے گے. دونمبری ساستدان اور سیاسدانوں سے دو قدم آگے منصفوں نے اپنی انا کی تسکین کی خاطر اس ملک کو یرغمال بنایا ہوا ہے، اور ان کو پوچھنے والا، یا ان کا احتساب کرنے والا کوئی نہیں ہے.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

تھوڑا سا احترام

آپ ایک مایوس، خوفزدہ بیوروکریسی سے کیا توقع کرسکتے ہیں جنہیں اپنی سمت کا علم نہ ہو؟

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بلاگ

گھریلو تشدد: پاکستانی 'کلچر' - حقیقت کیا ہے؟

پاکستانی سماج میں عورت مرد کی جائداد اور اس سے کمتر ہے چناچہ اس کے ساتھ کسی قسم کا سلوک روا رکھنا مرد کا پیدائشی حق ہے-

ریاستی تنہائی اور اجتماعی مہاجرت

جب تک سوچنے اور سوچ کے اظہار کے لیے ممکنہ حد تک ازادی موجود نہ ہو تب تک سماج میں تکثیریت پروان نہیں چڑھ سکتی

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔