03 ستمبر, 2014 | 7 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

نامور کالم نگار اردشیر کاؤس جی چل بسے

مشہور کالم نگار اردشیر کاؤس جی جو کراچی میں انتقال کر گئے۔ فائل فوٹو۔۔۔

کراچی: نامور کالم نگار اردشیر کاؤس جی طویل علالت کے بعد ہفتہ کو 86 سال کی عمر میں کراچی میں انتقال کر گئے۔

پارسی گھرانے سے تعلق رکھنے والے اردشیر کاؤس جی 13 اپریل 1926 میں کراچی میں پیدا ہوئے، انہوں نے 1988 سے 2011 تک مستقل ڈان اخبار کیلیے ہفتہ وار کالم لکھنے کے فرائض انجام دیے، آپ کا شمار پاکستان کے انتہائی مستند اور بے باک کالم نگاروں میں کیا جاتا تھا۔

وہ گزشتہ بارہ دن سے سینے میں انفیکشن کے باعث کراچی کے ایک اسپتال میں انتہائی نگہداشت کے وارڈ(آئی سی یو) میں زیر علاج تھے۔

وربائی جی سوپری والا پارسی ہائی اسکول اور ڈی جے سندھ گورنمنٹ کالج سے تعلیم کمل کرنے کے بعد وہ اپنے خاندانی کاروبار شپنگ سے منسلک ہو گئے۔

کاؤس جی کے ان کی بیوی نینسی دنشا سے دو بچے ہیں، ان کی بیتی کراچی میں رہائش پذیر اور خاندانی کاروبار سے منسلک ہیں جبکہ ان کے بیٹے جو ایک آرکیٹیکٹ ہیں وہ امریکا میں مقیم ہیں۔

وہ ایک کالم نگار ہونے کے ساتھ ساتھ ایک بزنس مین اور سماجی کارکن بھی تھے۔

اس حصے سے مزید

حیدر آباد: عمارت گرنے سے 13 افراد ہلاک، متعدد زخمی

چوڑی پاڑہ میں گرنے والی تین منزلہ عمارت کے ملبے تلے دب کر مرنے والوں میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔

قحط کا شکار تھر، لوگ غربت کے باعث خودکشی کر رہے ہیں

محض سات مہینوں کے اندر تھرپارکر ضلع میں اکتیس افراد غربت کے باعث موت کو گلے لگا چکے ہیں۔

وزیراعظم، وزیرداخلہ کی نااہلی کے لیے درخواست دائر

سندھ ہائی کورٹ میں دائر درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ نواز شریف کو آرٹیکل باسٹھ اور تریسٹھ کے تحت نااہل قرار دیا جائے


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (4)

Dr Huma
24 نومبر, 2012 16:42
Ardhir Cawasjee was an out spoken journalist and he always kept up banner of truthfulness.I am fortunate enough to meet him once ant also by chance.We traveled in one flight sitting side by side in 2004.....He though was very reserved but talked to me with a smiling face...May God rest his soul in peace....Dr Humayun Huma.Mardan
jk67
24 نومبر, 2012 18:33
جو بادہ کش تھے پرانے وہ اٹھتے جاتے ہیں کہیں سے آب بقائے دوام لا ساقی آئے عشاق گئے وعدہ فردا لے کر اب اُنہیں ڈھونڈ چراغ رُخ زیبا لے کر
G-H. Qamar Baloch
24 نومبر, 2012 23:13
The news of his passing away came to me as another cerebrated columnist left us alone to grope in unending darkness in Pakistan. He always thought and worked for Pakistan. I always looked up to his wise and considerate thought. I came to know when I was Public Relations Officer to Pakistan Defense Minister, late Mir Ali Ahmad Khan Talpur and then late Nawab Akbar Khan Bugti. May his sou rest in an eternal peace- Amen!
Farrukh J Kazi
25 نومبر, 2012 10:12
An affable,loving,truthful & honest soul has left us.So hospitable and caring was he ....especially for the Human Rights activists & environment friends who visited him in his Bath Island resort in Karachi.Though friends since early eighties , I could only meet him after long intervals ....last when he came to the Supreme Court to pursue a "Contempt" notice against him.Nature- Conservation lovers have lost a dedicated true friend ! MAY GOD REST HIS NOBLE SOUL IN PEACE . Amen . F.J.Kazi, Islamabad. Tel:92-333-5302490 & 92-51-5955334.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماڈل ٹاؤن کیس: کچھ حماقتیں

حکمرانوں کے منع کرنے پر پولیس کی جانب سے مقتولین کی ایف آئی آر درج کرنے میں تاخیر کی وجہ سے معاملہ مزید خراب ہوا۔

بیوروکریٹس کی یونین

ذاتی مفادات کے لیے چوری چھپے سیاسی ہونے سے زیادہ بہتر ہے کہ ریاست کے وسیع تر مفاد کے لیے کھلے عام سیاسی ہوا جائے۔

بلاگ

ڈرامہ ریویو: 'لا'...الجھتے رشتوں کی کہانی

ڈرامہ پرفیکٹ نہیں بھی تھا تو بھی یہ ان ڈراموں میں سے ایک ضرور تھا جسے دیکھ کر بیزاری کا احساس نہیں ہوتا۔

مووی ریویو : 'راجہ نٹور لال' سٹیریو ٹائپنگ کا شکار ہوگئی

یہ فلم نہ تو مزاح پر پوری اترتی ہے اور نہ ہی اس میں اتنا تھرلر ہے جو اسے ذہن میں نقش کر دے۔

سستا خون: براۓ انقلاب

"انقلاب" سیاست چمکانے کے لیے ایک خوشنما لفظ بن چکا ہے، اور اسے مزید چمکانے کے لیے کارکنوں کا سستا خون بھی دستیاب ہے۔

سیاست اور اخلاقیات

پتہ نہیں وہ کون سے ملک یا قومیں ہوتی ہیں جن کے عہدیدار کسی بھی ناکامی کی صورت میں فوراً اپنے عہدے سے مستعفی ہوجاتے ہیں۔