28 اگست, 2014 | 1 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

انٹیلیجنس چیف حملہ: افغانستان، پاکستان امن کے خواہاں

سہ فریقی مذاکرات کے موقع پر رہنماوں کا گروپ فوٹو۔ – اے پی

انقرہ: ترکی کے صدر کا کہنا ہے کہ بدھ کو ہونے والی میٹنگ کے بعد پاکستانی اور افغانی رہنماء افغانی انٹیلیجنس چیف پر حملہ کے باوجود امن عمل میں پیش رفت کے خواہاں ہیں۔

صدر عبداللہ گل نے اس حملہ کو، جسکے بارے میں افغانستان کا موقف ہے کہ اس کی منصوبہ بندی پاکستان میں کی گئی تھی، دونوں ملکوں کے درمیان جاری مذاکرات کو ناکام بنانے کی ایک سازش قرار دیا۔

ایک ایم ملاقات کے اختتام پر، جسکا مقصد کابل اور اسلام آباد حکومتوں کے درمیان تعاون بڑھانا اور تناو کم کرنا تھا، صدر گل نے کہا کہ دونوں فریقین ایک دوسرے کیساتھ ملکر کام کرنے کیلئے رضامند ہیں اور دونوں نے ایک دوسرے پر اعتماد کی تجدید بھی کی ہے۔

یاد رہے افغان انٹیلجنس چیف اسد اللہ خالد پچھلے ہفتے ایک خودکش بمبار کے حملے میں، جس نے خود کو ایک طالبان امن ایلچی ظاہر کیا تھا، شدید زخمی ہو گئے تھے۔

صدر حامد کرزئی نے اس حملے کے بعد براہ راست اسلام آباد پر تو الزام نہیں لگایا البتہ حملہ کی منصوبہ بندی کوئٹہ میں کئے جانے کا عندیہ دیا تھا۔ حملہ کی ذمہ داری بعد میں افغان طالبان نے قبول کر لی تھی۔

انقرہ ملاقات کے بعد ایک مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے صدر کرزئی نے کہا کہ اس معاملہ پہ دونوں رہنماوں کے درمیان کافی سیر حاصل گفتگو ہوئی ہے البتہ انہوں نے اس کی تفصیلات میں جانے سے گریز کیا۔

افغان حکام نے بتایا تھا کہ صدر کرزئی ملاقات کے دوران اپنے پاکستانی ہم منصب کو حملہ سے متعلق شواہد مہیا کرینگے۔

اس موقع پر افغان صدر نے امید ظاہر کی کہ جلد ہی دونوں ممالک دہشت گردی اور شدت پسندی سے نجات حاصل کرنے میں کامیاب ہو جائینگے۔

دوسری جانب صدر آصف علی زرداری نے اپنے خطاب میں اسد اللہ خالد پہ حملہ سے اپنے ملک کو دور رکھا۔

انہوں نے کہا کہ دہشت گرد نہیں چاھتے کہ دونوں ممالک کی حکومتیں مل جل کر کام کریں اور قوم کو امن کیجانب لے جائیں۔ "خوشحال افغانستان پاکستان کے مفاد میں ہے" اور انہوں نے مزید کہا کہ "یہ میرے فائدے میں ہے کہ افغانستان میں امن واپس قائم ہو جائے۔"

پریس کانفرنس کے اختتام پر ایک مشترکہ بیان بھی جاری کیا گیا جس میں کہا گیا کی ایک جوائنٹ ورکنگ گروپ اس حملہ کی تحقیقات کریگا۔

اس حصے سے مزید

عبداللہ کے انکار پر افغان الیکشن کا آڈٹ معطل

ڈاکٹر غنی کی ترجمان کے مطابق انہیں اقوام متحدہ اور الیکشن کمیشن پر اعتماد ہے، اور وہ اس آڈٹ کے نتائج تسلیم کریں گے۔

حقانی نیٹ ورک کے رہنماؤں کی معلومات فراہم کرنے پر رقم بڑھادی گئی

حقانی نیٹ ورک کے چار رہنماؤں کیلئے 50،50 لاکھ ڈالرکی رقم مقرر، سراج الدین حقانی کیلئے رقم بڑھا کر ایک کروڑ ڈالر کردی گئی

افغانستان : ہلمند میں فورسز کے طالبان سے مذاکرات

فوجی جنرل مذاکراتی عمل شروع ہونے کاکہہ رہےہیں جبکہ طالبان کی جانب سے ایسے کسی بھی اقدام میں شمولیت کی تردید کی جا رہی ہے


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

دو کشتیوں کے سوار نواز شریف

نواز شریف کے مطابق اگر ان کو طاقت کے زور پر نکالا گیا تو پاکستان کو سنبھالنا مشکل ہوجائے گا۔

پاکستان میں جمہوریت

کیا جمہوریت پاکستان میں عوام کیلیے ہے یا حکمرانوں کو انتخابات میں دوبارہ منتخب ہونے کی یقین دہانی کیلیے ہے؟

بلاگ

آزادی کے سائیڈ افیکٹس

اس قوم کا مزید آزادی کی بات کرنا بہت حیران کن ہے۔ یہ قوم تو آزادی کے سائیڈ افیکٹس کا شکار ہے۔

'آزادی' کے بعد: 'نیا پاکستان' اور 'انقلابی کابینہ'

سب سے زیادہ توجہ میڈیا پر دینی ہوگی اور گندی مچھلیوں سے پاک کرنے کے لئے تمام 'ملک دشمن' چینلز پر فوری پابندی لگانی ہوگی

مووی ریویو: ٹین ایج میوٹنٹ ننجا ٹرٹلز

تباہی و بربادی کے سینز، سپر ہیروز اور ایک حسینہ والے کامیاب ثابت شدہ فارمولے فلم کا حصہ رہے۔

تجزیوں کا بخار

گھر کے تمام افراد کو اتنے گروپس میں تقسیم کیا جا سکتا ہے، جتنے کہ تجزیہ کار موجود ہیں۔