25 جولائ, 2014 | 26 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

الطاف حسین کو توہین عدالت کا نوٹس جاری

قائد متحدہ قومی موومنٹ الطاف حسین۔ فائل فوٹو۔۔۔
قائد متحدہ قومی موومنٹ الطاف حسین۔ فائل فوٹو۔۔۔

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) کے قائد الطاف حسین کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کردیا ہے۔

عدالت کا کہنا ہے کہ الطاف حسین کا کراچی بدامنی کیس کی سماعت کرنے والے ججوں سے متعلق خطاب توہین اور دھمکی آمیز تھا۔

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں عدالت عظمٰی کے تین رکنی بینچ نے کراچی بدامنی کیس کی سماعت کی۔

سماعت کے آغاز پر عوامی نیشنل پارٹی (اے این پی) کے سینیٹر حاجی عدیل کے وکیل نے کہا کہ انہوں نے اس مقدمے میں ایک آئینی درخواست دائر کی ہے۔

اس پر چیف جسٹس نے کہا کہ انہیں رجسٹرار آفس سے ایک نوٹ بھجوایا گیا ہے جس میں الطاف حسین کی تقریر کے اقتباسات دیے گئے ہیں کہ جج صاحبان معافی مانگیں جس کا انہیں نوٹس لینا ہے۔

جسٹس افتخار نے کہا کہ رجسٹرار آفس نے بتایا ہے کہ ایم کیو ایم کے سربراہ، جو ایک سیاسی لیڈر ہیں، نے ایک مجمعے سے خطاب کرتے ہوئے ججوں کو تنقید کا نشانہ بنایا اور الزامات لگائے اسلیے پیمرا کواحکامات دیے گئے ہیں کہ وہ ان کی تقریر کا متن پیش کرے۔

ان کا کہنا تھا کہ کراچی میں بدامنی کیس کی سماعت کرنے والا بینچ اس فیصلے کے عملدرآمد کی سماعت کر رہا تھا جسے کبھی چیلنج نہیں کیا گیا۔

انہوں نے کہا کہ آخری تاریخ سماعت پر ایک عبوری حکم دیا گیا تھا جس میں کراچی میں نئی حلقہ بندیوں کے حوالے سے بات کی گئی تھی۔

چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ احکامات کا پس منظر سوائے عدالت کے احکمات پر عملدرآمد کے اور کچھ نہیں تھا تاہم ایم کیو ایم کے رہنما نے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے توہین آمیز کلمات ادا کیے۔

جسٹس افتخار نے کہا انہوں نے تقریر کا متن دیکھا ہے اور انکی رائے ہے کہ جو زبان استعمال کی گئی وہ توہین آمیز اور دھمکانے والی تھی اور عدالت کی راہ میں رکاوٹ ڈالنے کے مترادف تھی۔

اس پر عدالت نے ایم کیو ایم کے قائد کو آئین کے آرٹیکل دو سو چار اور توہین عدالت کے آڑڈیننس دو سو تین کی دفعہ تین کے تحت توہین عدالت کا نوٹس جاری کردیا ہے۔

  سپریم کورٹ نے ایم کیو ایم کے پارلیمانی لیڈر فاروق ستار کو بھی وضاحت کے لیے نوٹس جاری کیا ہے۔

ساتھ ہی عدالت نے چیف سیکرٹری، آئی جی، ہوم سیکرٹری سندھ سے بھی رپورٹ طلب کرلی ہے۔

اس کے علاوہ وزارت خارجہ کو نوٹس کی تعمیل یقینی بنانے کا حکم بھی دیا گیا ہے۔

اس حصے سے مزید

'این آر او کے تحت پندرہ سال تک مارشل لاء نافذ نہیں ہو سکتا'

شہلا رضا نے انکشاف کیا ہے کہ امریکہ، برطانیہ ، یواے ای اور جنرل پرویز اشفاق کیانی نےبھی اس کی گارنٹی دی تھی۔

کراچی: فائرنگ کے مختلف واقعات میں پانچ افراد ہلاک

دوسری جانب گودھرا میں ایک پولیس مقابلے میں مشتبہ ملزمان کی فائرنگ سے اے ایس آئی ہلاک ہوگیا۔

کراچی: مائی کولاچی روڈ پر ٹرالر اور ڈمپر میں تصادم، تین زخمی

بدھ کے روز علی الصبح ہونے والی ہلکی بارش سے سڑک پر پھسلن بڑھ جانے سے ڈمپر اور ٹرالر بے قابو ہوکر ایک دوسرے سے ٹکرا گئے۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (1)

ehtesham
15 دسمبر, 2012 18:43
Why new constituencies only in Karachi.It is against MQM.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بے وجہ پوائنٹ اسکورنگ

ہوسکتا ہے عمران خان پی ایم ایل-ن کی حکومت گرانا چاہتے ہوں لیکن کیا وہ واقعی ملک اور اسکے جمہوری اداروں کے لئے خطرہ ہیں؟

بلاگ

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔

شکایتوں کا بن جو میرا دیس ہے

شکایتی ٹٹو زنده قوم کی نشانی ہوتے ہیں۔ مستقل شکایت کرتے رہنا اب ہماری پہچان بن چکا ہے۔

کھیلنے دو: گراؤنڈز کہاں ہیں؟

سیدھی سی بات ہے، ملائی تبھی زیادہ اور بہترین ہوگی جب دودھ زیادہ ہوگا-