20 اپريل, 2014 | 19 جمادی الثانی, 1435
ڈان نیوز پیپر

مستقبل کی طرف دیکھنا ہوگا: رحمان ملک

رحمان ملک نیو دہلی میں ہندوستان ایئر فورس اسٹیشن پر پہنچنے کے بعد بات کرتے ہوئے۔ اے ایف پی فوٹو
رحمان ملک نیو دہلی میں ہندوستان ایئر فورس اسٹیشن پر پہنچنے کے بعد بات کرتے ہوئے۔ اے ایف پی فوٹو

نیو دہلی: پاکستان کے وزیر داخلہ رحمان ملک نے این ڈی ٹی وی کودیے جانے والے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ ان کے بیانات کو غلط سمجھا گیا جبکہ انہوں نے کبھی بھی نائن الیون اور ممبئی حملے سے  بابری مسجد کے انہدام کا مقابلہ نہیں کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ چاہتے ہیں کہ ہندوستان کے لوگ یہ جان لیں کہ ان کے بیانات کو غلط سمجھا گیا۔

رحمان ملک کا کہنا تھا کہ جب انہوں نے بابری مسجد کی بات کی تو دو مذاہب کے بیچ میں امن کے حوالے سے بات کی اور پاکستان میں ہونے والی شیعہ ہلاکتوں کے بارے میں بھی وہ اسی پس منظر میں بات کرتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ سرابھ کالیا کی موت کا سبب جاننے کیلئے تحقیقات کرانے کے لیے تیار ہیں اور یہ کہ ہندوستان نے پہلی دفعہ کل کالیا کا کیس باضابطہ طور پر اٹھایا تھا۔

حافظ سیعد کے حوالے سے رحمان ملک کا کہنا تھا کہ عدالت نے انہیں رہا کیا ہے لحاضہ عدالت کا احترام کرنا ان کا فرض ہے۔

ان کا اس بارے میں کہنا تھا کہ وہ حافظ سیعد کو کل ہی گرفتار کرنے کو تیار ہیں لیکن اگر ان کے خلاف کوئی ٹھوس ثبوت موجود ہوں جنہیں عدالت میں پیش کیا جاسکے۔

ان کا کہنا تھا کہ دونوں ملکوں کو ماضی کی تلخیاں بھلا کر مستقبل کی طرف دیکھنا ہوگا۔

اس حصے سے مزید

وزیرِ اعظم نے حامد میر حملے کی جوڈیشل تحقیقات کا حکم دیدیا

کمیشن کیلئے سپریم کورٹ سے درخواست کی جائے گی، قاتلوں کی اطلاع پر ایک کروڑ روپے انعام کا اعلان۔

'دہشت گردی ختم کیے بغیر مضبوط دفاع کا قیام ناممکن'

مضبوط معیشت اور دہشت گردی ختم کیے بغیر ملکی دفاع کا قیام ناممکن ہے،وزیر اعظم کا کاکول اکیڈمی میں پاسنگ آؤٹ پریڈ سے خطاب

لاہور: گیس غبارے پھٹنے سے چالیس سے زائد افراد جھلس گئے

وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کی جانب سے والٹن روڈ کے قریب اوورہیڈ برج کے افتتاح کے موقع پر فضا میں گیس غبارے چھوڑے گئے۔


تبصرے بند ہیں.
مقبول ترین
بلاگ

دنیاۓ صحافت: داستاں تک بھی نہ ہوگی داستانوں میں

ایک فوجی کی طرح صحافی کو بھی ہرگز اکیلا نہیں چھوڑا جاسکتا، یہ سوچنا کہ یہ ہماری جنگ نہیں، سراسر حماقت ہے-

2 - پاکستان کی شہری تاریخ ... ہمیں سب ہے یاد ذرا ذرا

بھٹو حکومت کے ابتدائی سالوں میں قوم کا مزاج یکسر تبدیل ہو گیا تھا، کیونکہ ملک ایک نئے پاکستان کی طرف بڑھ رہا تھا-

سچ، گولی اور بے بس جرنلسٹ

حامد میر پر حملہ ایک بار پھر صحافی برادری کی بے بسی کی طرف اشارہ کرتا ہے

دو قومی نظریہ اور ہندوستانی اقلیتیں

دو قومی نظریہ مسلمانوں اور ہندوؤں میں تو تفریق کرتا ہے لیکن دیگر اقلیتوں، خاص کر دلتوں کو یکسر فراموش کرتا ہے۔