20 اگست, 2014 | 23 شوال, 1435
ڈان نیوز پیپر

انتخابات کی تاریخ کا اعلان جلد ہونے کی امید

صدرِ پاکستان آصف علی زرداری۔ اے پی تصویر
صدرِ پاکستان آصف علی زرداری۔ اے پی تصویر

اسلام آباد: اس ماہ کے آخر میں یا آنے والے مہینے کے شروع میں حکومت کا عام انتخابات کے حوالے سے منصوبہ واضع ہوجائے گا۔

صدر آصف علی زرداری کے قریبی ساتھی کے مطابق پی پی پی کا عام انتخابات کا پلان دو سے تین ہفتوں میں واضع ہوجائے گا۔

صدر کے قریبی ساتھی کی آگر بات مانی جائے تو عام انتخابات مارچ کے آخر میں ہوں گے۔

وفاقی وزیر کے مطابق جو کہ صدر کے قریب ہیں، کا کہنا ہے کہ پارٹی کے کارکن یہ چاہتے ہیں کہ انتخابات مارچ میں ہی ہوجائیں تاکہ گرمیوں میں ہونی والی لوڈشیڈنگ کی سخت تنقید سے بچا جاسکے۔

ان کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم اور دوسرے وفاقی وزراء چاہتے ہیں کہ حکومت اپنی مدت پوری کرے جو کہ سولہ مارچ کو ختم ہوگی۔

ایسی صورت میں انتخابات مئی میں ہوں گے۔

ذرائع کے مطابق وزیر خزانہ ڈاکٹر حفیظ شیخ بھی اس بات پر بحث کررہے ہیں کہ انتخابات مارچ میں ہوں تاکہ سخت مالیاتی فیصلوں کا بوجھ نگراں حکومت پر منتقل کیا  جاسکے۔

اس حصے سے مزید

وزیراعظم نے عمران خان سے ملاقات کا فیصلہ کرلیا، سعد رفیق

سعد رفیق نے اپنے ٹوئٹر پیغام میں کہا ہے کہ وزیر اعظم نواز شریف نے عمران خان سے ملاقات کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

پی اے ٹی کے کارکن ’انقلاب‘ کے بارے میں بے یقین

پارٹی کارکنان کا کہنا تھا کہ وہ نہیں جانتے کہ دھرنے سے کیا نتیجہ برآمد ہوگا، لیکن انہیں اپنے سربراہ پر بھرپور یقین ہے۔

فوج کا بامقصد مذاکرات کے ذریعے معاملات کے حل پر زور

ترجمان آئی ایس پی آر میجر جنرل عاصم باجوہ نے کہاہے کہ ریڈزون کی عمارتیں ریاست کی علامت ہیں جن کی حفاظت فوج کر رہی ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

نمبروں کی غلط فہمی

یہ ایک افسوسناک بات ہے کہ سوئس بینک میں رقم کے بارے میں ایک بالکل بے تکا اندازہ اتنے عرصے سے خبروں میں گردش کررہا ہے۔

اگر مگر سے کام نہ لیں

مسلم لیگ ن کے پاس کھونے کے لیے سب سے زیادہ چیزیں ہیں، اس لیے امید ہے کہ دانشمندی سے کام لیا جائے گا۔

بلاگ

ڈرامہ سیریل : 'پیارے افضل ' اچھوتی کہانی، بہترین پرفارمنس

چند ماہ سے ملک بھر میں دیکھے اور پسند کیے جانے والے ڈرامہ کو رواں سال کا اب تک کا بہترین کھیل قرار دیا گیا ہے-

انقلاب کو میرے لان سے ہٹاؤ

اسلام آباد کے رہائشی اس بات کو قبول نہیں کریں گے، کہ انقلابی ان کے لان میں ڈیرے ڈال کر بیٹھ جائیں۔

انقلاب کا ترپ پتّہ

اگر اسمبلی یا وزیراعظم ہاؤس میں چند ہزار کارکن گھسا کر ہی حکومت میں آنا ہے تو پھر ملک میں انتخابات کروانے کا کیا فائدہ

تماشا، تماشائی اور مداری

ہم مڈل کلاس لوگ بھی عجیب ہیں، بڑے ہی نہیں ہوتے، ہوبھی جایئں تو کھلونوں سے بہل جاتے ہیں۔ یونہی تماشا دیکھتے رہتے ہیں۔