24 جولائ, 2014 | 25 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

سی این جی قیمت کیس کا فیصلہ جاری

فائل فوٹو۔۔۔
فائل فوٹو۔۔۔

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے سی این جی کی قیمتوں سے متعلق کیس کا فیصلہ سنانا شروع کردیا ہے۔

سپریم کورٹ نے اوگرا کا قیمتوں کا فارمولہ کالعدم قرار دے دیا۔ عدالت نے اوگرا کو قیمتوں کا نیا فارمولہ بناکر قیمتیں مقرر کرنے کی ہدایت کردی ہے۔

عدالت نے فیصلے میں لکھا ہے کہ اوگرا کو اجارہ داری پر مبنی سرگرمی کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔ اتھارٹی نے قانون کی خلاف ورزی کی۔

فیصلے میں کہا گیا کہ صارف کے مفاد کا تحفظ اوگرا کی ذمہ داری ہے لیکن اتھارٹی صارف کے حقوق کے تحفظ میں ناکام رہی۔

مزید کہا گیا کہ سی این جی کارٹل بناکر حکومت کی ملی بھگت سے غریب شہریوں کے حقوق کی خلاف ورزی کی گئی۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ دوہزارآٹھ میں سی این جی قیمت تینتیس روپے فی کلو تھی جو ستمبر دوہزار بارہ میں پچانوے روپے فی کلو ہوگئی۔ ۔سی این جی قیمتیں قانون کے مطابق نہیں تھیں اور بہت زیادہ اضافی چارجزوصول کیےجارہے ہیں۔

فیصلے کے مطابق قیمتوں کے تعین کی ذمہ داری اوگرا کی ہے اور اوگرا وفاقی حکومت سے الگ خودمختار ادارہ ہے۔

فیصلے میں کہا گیا کہ اوگراحکومت کی گائیڈلائنزکو مدنظر رکھے لیکن من وعن تسلیم کرنے کا ذمہ دارنہیں۔

فیصلے میں مزید کہا گیا کہ اوگرا کو وفاقی حکومت کے نوٹیفکیشن کا پابند بنایا گیا ہے اور صارف کے مفاد کا تحفظ اوگرا کی ذمہ داری ہے۔

سپریم کورٹ کا کہنا تھا کہ اوگرا سی این جی کی نئی قیمتیں مقرر کرے ہم نہیں کریں گے۔

چیئرمین اوگرا سعید احمد کا کہنا تھا کہ تفصیلی فیصلہ ابھی موصول نہیں ہوا اور نئے فارمولے کے لیے جلد کوئی فیصلہ کرلیں گے۔

اوگرا کی طرف سے 48 گھنٹوں میں نئی قیمتوں کا اعلان کرنے کا بھی کہا گیا۔

اس حصے سے مزید

زرداری-بائیڈن ملاقات میں اہم معاملات پر گفتگو

اطلاعات کے مطابق دونوں رہنماؤں نے وزیرستان آپریشن، پاک-امریکا تعلقات اور افغانستان کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔

کسی جنرل سے رابطہ نہیں ہے،طاہر القادری

پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ کا کہنا ہے کہ ہم فوج کو دعوت نہیں دے رہے، ملک میں مارشل لاء نہیں لگے گا۔

پاک و ہند سیکریٹری خارجہ 25 اگست کو ملیں گے

ترجمان وزارت خارجہ کے مطابق نوازشریف اور نریندر مودی نے مئی میں نئی دہلی میں اس ملاقات پر اتفاق کیا تھا۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (1)

Teyyab Shahzad
21 دسمبر, 2012 11:31
Assalam-O-Alaikum! Ye To Koi Faisala Nahi, Supreme Court Ko koi Thoos Faisala Karna Chahea tha.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

بے وجہ پوائنٹ اسکورنگ

ہوسکتا ہے عمران خان پی ایم ایل-ن کی حکومت گرانا چاہتے ہوں لیکن کیا وہ واقعی ملک اور اسکے جمہوری اداروں کے لئے خطرہ ہیں؟

کیا بڑا بہتر ہے؟

ہم اپنی جنوب ایشیائی شناخت سے پیچھا کیوں چھڑانا چاہتے ہیں جو تاریخی اعتبار سے عرب کے مقابلے میں کہیں زیادہ مالامال ہے؟

بلاگ

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔

کھیلنے دو: گراؤنڈز کہاں ہیں؟

سیدھی سی بات ہے، ملائی تبھی زیادہ اور بہترین ہوگی جب دودھ زیادہ ہوگا-

مووی ریویو: پیزا - پلاٹ اچھا ہے

اگرچہ سکرین پلے کافی کمزور ہے مگر فلم کی کہانی میں آنے والے موڑ دیکھنے والوں کی دلچسپی برقرار رکھتے ہیں۔

جہادی برائے فروخت

اگر اب بھی سمجھ نہ آئی تو پاکستان کا حشر بھی عراق و شام سے مختلف نہیں ہوگا۔