18 اپريل, 2014 | 17 جمادی الثانی, 1435
ڈان نیوز پیپر

سینئیر رہنما، بشیر بلور سپردِ خاک

22  دسمبر 2012 کو پشاور میں عوامی نیشنل پارٹی کے کارکن سینیئر صوبائی وزیر بشیر بلور کی میت کو لے جارہے ہیں۔ اے ایف پی فوٹو
22 دسمبر 2012 کو پشاور میں عوامی نیشنل پارٹی کے کارکن سینیئر صوبائی وزیر بشیر بلور کی میت کو لے جارہے ہیں۔ اے ایف پی فوٹو

پشاور: عوامی نیشنل پارٹی کے سینیئر رہنما اور وزیر، بشیر بلور کی نمازِ جنازہ کرنل شیر خان شہید اسٹیڈیم ( آرمی اسٹیڈیم) میں ادا کرنے کے بعد انہیں سید حسن پیر قبرستان منتقل کردیا گیا جہاں انہیں سپردِ خاک کردیا گیا ہے۔

اس موقع پر صدارتی ترجمان فرحت اللہ بابر، کے علاوہ پاکستان کی اہم سیاسی شخصیات بھی شریک تھیں۔ جن میں پاکستان پییپلز پارٹی (پی پی پی )، پاکستان مسلم لیگ نواز ( پی ایم ایل ۔ نون)، متحدہ قومی موومنٹ ( ایم کیو ایم ) اور پاکستان مسلم لیگ ق کے اہم رہنما بھی موجود ہیں۔

اے این پی کے کارکنوں کے علاوہ ان کی آخری رسومات میں شہریوں نے بھی بڑی تعداد میں شرکت کی۔

ان کی نمازِ جنازہ اور تدفین کے موقع پر سیکیورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے تھے۔ فوج، پولیس اورایف سی کے 2,000 اہلکاروں نے حفاظتی فرائض انجام دئیے۔

بلور کو شہید حسن پیر قبرستان میں شبیر احمد بلور کے پہلو میں دفن کیا گیا ہے جن کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ ان کے بھائی اور وفاقی وزیر برائے ریلوے، غلام احمد بلور کے لے پالک بیٹے تھے۔

اس سے قبل، بشیر بلور کے پرسنل سیکریٹری، نورمحمد خان کی نمازِ جنازہ پشاور کے علاقے ککشال میں ادا کی گئی۔ نورمحمد گزشتہ 25 سال سے بلور کے ساتھ تھے جن کی تدفین ان کے آبائی گاوں میں کی جائے گی۔

بشیر بلور اور ان کے ساتھ دیگر آٹھ افراد  گزشتہ روز پشاور میں ایک خودکش حملے میں ہلاک ہوگئے تھے۔

اس حصے سے مزید

خیبرپختونخوا میں پولیو مہم فوج کے سپرد

وزیر اعظم نواز شریف کی ہدایت پر خیبر پختونخوا میں پولیو کے خاتمے کی مہم پاک فوج کے سپرد کردی گئی۔

چیئرمین پیمرا، واپڈا عہدوں سے فارغ

وزیراعظم نے چیئرمین واپڈا سے استعفیٰ لیکر ظفر محمود کو نیا چیئرمین مقرر کردیا ہے۔

ڈی جی خان میں حادثہ، 13 افراد ہلاک

مخالف سمت سے آنے والی دو بسیں بس سٹینڈ پر کھڑے لوگوں پر چڑھ گئیں جس کے نتیجے ہلاکتیں پیش آئیں۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (1)

شانزے
24 دسمبر, 2012 05:42
مٹ جاے گی مخلوق تو انصاف کرو گے!!! شتر مرغ کی طرح ریت میں سر چھپا لینے سے یہ بلا ٹلنے والی نہیں  
مقبول ترین
بلاگ

میانداد کا لازوال چھکا

جب بھی کوئی بیٹسمین مقابلے کی آخری گیند پر اپنی ٹیم کو چھکے کے ذریعے جتواتا ہے تو سب کو شارجہ ہی یاد آتا ہے۔

جمہوریت، سیکولر ازم اور مذہبی سیاسی جماعتیں

مذہب کے نام پر کوئی متفقہ سیاسی نظام بن ہی نہیں سکتا کیونکہ مذاہب کے درجنوں دھڑے کسی ایک ایشو پر متفق نہیں ہو سکتے۔

یکسانیت اور رنگا رنگی

یکسانیت جانی پہچانی بلکہ اطمینان بخش بھی ہوسکتی ہے، لیکن اس کا مطلب ہے چیلنج سے بچنا، جس کے بغیر کامیابی ممکن نہیں۔

میڈیا کے چٹخارے

پاکستانی میڈیا کو جتنی زیادہ آزادی ہے اسکی اپروچ اتنی ہی جانبدارانہ ہے، عوام کی پولرائزیشن میں میڈیا کا بہت بڑا ہاتھ ہے