01 اکتوبر, 2014 | 5 ذوالحجہ, 1435
ڈان نیوز پیپر

پشاور: اغوا شدہ 21 لیویز اہلکار قتل کر دیے گئے

فائل فوٹو

پشاور: شدت پسندوں کی جانب سے ایف آر پشاور سے اغواء کئے گئے تئیس میں سے اکیس لیویز اہلکاروں کو قتل کردیا گیا ہے۔ ایک اہلکار معجزانہ طور پر بچ کر گھر پہنچ گیا جبکہ ایک زخمی اہلکار کو لیڈی ریڈنگ اسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔

شدت پسندوں کی جانب سے جمعرات ستائیس دسمبر کو ایف آر پشاور میں تین سیکیوٹی چیک پوسٹوں پر حملہ کیا گیا تھا جس میں دو سیکیورٹی اہلکارہلاک اور ایک زخمی ہوگیا تھا جبکہ تئیس اہلکار اغواء کرلیے گئے تھے۔

اغواء کیے گئے تئیس میں سے اکیس لیویز اہلکاروں کو ہفتہ اور اتوار کی درمیانی شب فائرنگ کرکے قتل کردیا گیا۔ ایک اہلکار معجزانہ طور پر بچ گیا اور فرار ہوکر گھر پہنچ گیا جبکہ ایک زخمی اہلکار کو لیڈی ریڈنگ اسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔

لیویزاہلکاروں کوجانے خواڑکرکٹ گراؤنڈ کےقریب قتل کیا گیا اور شدت پسند سیکیورٹی اہلکاروں کی وردی میں ملبوس تھے۔

اس حصے سے مزید

تحریک انصاف کے رکن صوبائی اسمبلی کی رکنیت بحال

سپریم کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف کے سردار اکرام اللہ گنداپور کی بطور رکن خیبرپختونخوا اسمبلی رکنیت بحال کردی۔

پشاور: اسکول پر دستی بم حملے میں ٹیچر ہلاک

پشاور کے علاقے شبقدر میں ایک اسکول پر دستی بم حملے میں ایک ٹیچر ہلاک اور دو بچے زخمی ہو گئے۔

وادیِ تیراہ میں ریمورٹ کنٹرول بم دھماکا، پانچ افراد ہلاک

سرکاری ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ دھماکا تیراہ میں شدت پسند گروپ لشکر اسلام کی بیس میں ہوا۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماؤں اور بچوں کے قاتل ہم

پاکستان سے کم فی کس آمدنی رکھنے والے ممالک پیدائش کے دوران ماؤں اور بچوں کی اموات پر قابو پا چکے ہیں۔

تبدیلی کا پیش خیمہ

اکثر ایسے بڑے واقعات پیش آتے ہیں جو تبدیلی کے عمل کو تیز کردیتے ہیں، مگر ایسے حالات کسی فرد کے پیدا کردہ نہیں ہوتے۔

بلاگ

!گو نواز گو

اس ملک میں پڑھے لکھے لوگوں کی قدر ہی نہیں۔ جب تک پڑھے لکھوں کو وی آئی پی پروٹوکول نہیں دیا جاتا یہ ملک ترقی نہیں کرسکتا

قدرتی آفات اور پاکستان

قدرتی آفات سے پہلے انتظامات پر ایک ڈالر جبکہ بعد میں سات ڈالر خرچ ہوتے ہیں، اس کے باوجود ہم پہلے سے انتظامات نہیں کرتے۔

مقابلہ خوب ہے

کوئی دنیا کے در در پر پھیلے ہمارے کشکول کی زیارت کرے، پھر اس میں خیرات ڈالنے والوں کو فتح کرنے کے ہمارے عزم بھی دیکھے۔

پاکستان میں ذہنی بیماریاں اور ہماری بے حسی

آخر ذہنی بیماریوں کے شکار کتنے اور لوگوں کو اپنے گھرانوں کی بے حسی، اور معاشرے کی جانب سے ٹھکرائے جانے کو جھیلنا پڑے گا؟