01 اکتوبر, 2014 | 5 ذوالحجہ, 1435
ڈان نیوز پیپر

ملالئے اسپتال سے فارغ، علاج گھر پر جاری رہیگا

ملالئے کوئن الزبتھ اسپتال سے ڈسچارج ہوگئیں۔ اے ایف پی فوٹو۔
ملالئے کوئن الزبتھ اسپتال سے ڈسچارج ہوگئیں۔ اے ایف پی فوٹو۔

لندن: سوات میں عسکریت پسندوں کے حملے میں زخمی ہونے والی طالب علم ملالئے یوسف زئی کو لندن کے اسپتال سے صحت یابی کے بعد ڈسچارج کردیا گیا تاہم وہ لندن میں کچھ عرصہ قیام کریں گی اور ماہر معالجوں کی زیرنگرانی رہیں گی۔

کوئن الزبتھ اسپتال کے ایک بیان کے مطابق، ملالئے کو گزشتہ روز ڈسچارج کیا گیا تاہم انکا علاج ویسٹ مڈلینڈز میں انکے عارضی گھر میں جاری رہے گا۔

واضح رہے کہ نو اکتوبر کو سوات میں طالبان نے ملالئے کو اس وقت گولیوں کا نشانہ بنایا تھا جب وہ اپنی دوستوں کے ہمراہ اسکول سے گھر جارہی تھیں۔

حملے میں ان کی دو سہیلیاں، کائنات اور شازیہ، بھی زخمی ہوگئی تھیں۔

ملالئے کو ابتدائی طبی امداد سی ایم ایچ میں دی گئی لیکن تشویشناک حالت کے باعث ان کو لندن کے کوئن الزبتھ اسپتال منتقل کردیا گیا تھا۔

برمنگھم میں واقعے اس اسپتال میں ان کی سر جری بھی ہوچکی ہے۔

اسپتال انتظامیہ کا کہنا ہے ملالئے کو جنوری کے وسط یا فروری میں ایک اور سرجری کے لیے دوبارہ اسپتال داخل کیاجاسکتا ہے۔

اس حصے سے مزید

پشاور: اسکول پر دستی بم حملے میں ٹیچر ہلاک

پشاور کے علاقے شبقدر میں ایک اسکول پر دستی بم حملے میں ایک ٹیچر ہلاک اور دو بچے زخمی ہو گئے۔

تحریک انصاف کے رکن صوبائی اسمبلی کی رکنیت بحال

سپریم کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف کے سردار اکرام اللہ گنداپور کی بطور رکن خیبرپختونخوا اسمبلی رکنیت بحال کردی۔

جاویدہاشمی تحریک انصاف سے مستعفی،الیکشن میں مسلم لیگی حمایت حاصل

حکومتی جماعت کے وفد سے ملاقات کے بعد ان کا کہنا تھا کہ ایسی پارٹی کا کارکن نہیں رہنا چاہتا جو جمہوریت کے خلاف سازش کرے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماؤں اور بچوں کے قاتل ہم

پاکستان سے کم فی کس آمدنی رکھنے والے ممالک پیدائش کے دوران ماؤں اور بچوں کی اموات پر قابو پا چکے ہیں۔

تبدیلی کا پیش خیمہ

اکثر ایسے بڑے واقعات پیش آتے ہیں جو تبدیلی کے عمل کو تیز کردیتے ہیں، مگر ایسے حالات کسی فرد کے پیدا کردہ نہیں ہوتے۔

بلاگ

!گو نواز گو

اس ملک میں پڑھے لکھے لوگوں کی قدر ہی نہیں۔ جب تک پڑھے لکھوں کو وی آئی پی پروٹوکول نہیں دیا جاتا یہ ملک ترقی نہیں کرسکتا

قدرتی آفات اور پاکستان

قدرتی آفات سے پہلے انتظامات پر ایک ڈالر جبکہ بعد میں سات ڈالر خرچ ہوتے ہیں، اس کے باوجود ہم پہلے سے انتظامات نہیں کرتے۔

مقابلہ خوب ہے

کوئی دنیا کے در در پر پھیلے ہمارے کشکول کی زیارت کرے، پھر اس میں خیرات ڈالنے والوں کو فتح کرنے کے ہمارے عزم بھی دیکھے۔

پاکستان میں ذہنی بیماریاں اور ہماری بے حسی

آخر ذہنی بیماریوں کے شکار کتنے اور لوگوں کو اپنے گھرانوں کی بے حسی، اور معاشرے کی جانب سے ٹھکرائے جانے کو جھیلنا پڑے گا؟