17 اپريل, 2014 | 16 جمادی الثانی, 1435
ڈان نیوز پیپر

شاہ زیب قتل کیس: مرکزی ملزم گرفتار

کراچی میں رہائش پذیر شاہ زیب خان کو 25 دسمبر 2012ء کو ہلاک کیا گیا تھا۔ فائل فوٹو۔
کراچی میں رہائش پذیر شاہ زیب خان کو 25 دسمبر 2012ء کو ہلاک کیا گیا تھا۔ فائل فوٹو۔

کراچی: شاہ زیب قتل کیس کے مرکزی ملزم سراج تالپور کو سندھ کے علاقے مورو سے ہفتے کو گرفتار کرلیا گیا۔

ایس ایس پی فاروق اعوان کے مطابق، سراج سمیت تین ملزمان کو گرفتار کیا گیا ہے۔

انکا کہنا تھا کہ سراج تالپور کو ایس آئی یو پولیس نے گرفتار کیا۔

خیال رہے کہ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے نے بیس سالہ نوجوان کے قتل کا نوٹس ایک مقامی اخبار میں چھپنے والی خبر پر لیا تھا۔

گزشتہ روز ہونے والی شاہ زیب قتل کیس کی سماعت کے بعد پولیس نے سپریم کورٹ کے احکامات پر کراچی کے علاقے ڈیفنس میں خیابان بدر پر واقع شاہ رخ جتوئی کی رہائش گاہ پر چھاپہ مارا تھا۔

اسکے علاوہ ان کے والد سکندر جتوئی کی فیکٹریاں اور دفاتر بھی سیل کر دئیے گئے تھے۔

پولیس نے ان کے بھائی شہزاد جتوئی، والد سکندر جتوئی اور چچا مظہر جتوئی کے نام بھی تفتیش میں شامل کر لئے تھے۔

اس حصے سے مزید

ایم کیو ایم کا ماورائے عدالت قتل پر احتجاج

شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے متحدہ کے رہنماؤں نے تحفظ پاکستان آرڈیننس کو کالا قانون قرار دیا۔

علماء و مشائخ کنونشن میں مذہب کے نام پر ناانصافی کی مذمت

کنونشن میں حکومت پر زور دیا گیا کہ وہ ان افراد کے خلاف کارروائی کرے، جو شدت پسندی اور دیگر واقعات میں ملوث ہیں۔

خیرپور میں گیس پائپ لائن دھماکے سے تباہ

پولیس کے مطابق دھماکے کے بعد سندھ کے مختلف شہروں میں گیس کی فراہمی معطل ہوگئی ہے۔


تبصرے بند ہیں.
مقبول ترین
بلاگ

جمہوریت، سیکولر ازم اور مذہبی سیاسی جماعتیں

مذہب کے نام پر کوئی متفقہ سیاسی نظام بن ہی نہیں سکتا کیونکہ مذاہب کے درجنوں دھڑے کسی ایک ایشو پر متفق نہیں ہو سکتے۔

میڈیا کے چٹخارے

پاکستانی میڈیا کو جتنی زیادہ آزادی ہے اسکی اپروچ اتنی ہی جانبدارانہ ہے، عوام کی پولرائزیشن میں میڈیا کا بہت بڑا ہاتھ ہے

یکسانیت اور رنگا رنگی

یکسانیت جانی پہچانی بلکہ اطمینان بخش بھی ہوسکتی ہے، لیکن اس کا مطلب ہے چیلنج سے بچنا، جس کے بغیر کامیابی ممکن نہیں۔

ٹی ٹی پی نہیں تو پھر مذاکرات کیوں؟

عام آدمی کو صرف تحفظ چاہئے اور اگر مذاکرات یہ نہیں دے رہے تو ان کو مزید آگے بڑھانے سے کیا حاصل؟