20 ستمبر, 2014 | 24 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

پاکستان و ہند عسکری حکام میں مذاکرات متوقع

فائل تصویر میں لائن آف کنٹرول پر ایک ہندوستانی فوجی پہرہ دے رہا ہے ۔ رائٹرز تصویر
فائل تصویر میں لائن آف کنٹرول پر ایک ہندوستانی فوجی پہرہ دے رہا ہے ۔ رائٹرز تصویر

اسلام آباد: پاکستان اور ہندوستان کے فوجی آفیشلز پیر کے روز ملاقات کررہے ہیں۔ اس دوران کشمیر کو تقسیم کرنے والی لائن آف کنٹرول پر حالیہ کشیدگی پر بات چیت کی جائے گی۔ اس کشیدگی میں دونوں اطراف کے فوجیوں کی ہلاکتیں ہوئی ہیں۔

پاکستان کا کہنا ہے کہ سرحد پار فائرنگ سے اس کے دو سپاہی ہلاک ہوئے ہیں ۔ ان میں سے ایک گزشتہ اتوار کو اور دوسری ہلاکت جمعرات کو ہوئی۔

منگل کے روز انڈیا نے الزام عائد کیا تھا کہ پاکستانی افواج نے اس کے دو سپاہی ہلاک کئے ہیں جن میں سے ایک کا سر کاٹ دیا گیا تھا۔ دونوں ممالک کے ایک دوسرے کے الزامات رد کئےہیں۔

' کل پاکستان اور ہندوستانی اداروں کے درمیان لائن آف کنٹرول ( ایل او سی ) پر ایک بریگیڈ سطح کی فلیگ میٹنگ متوقع ہے۔ '  ایک سینیئر فوجی آفیشل نے مزید تفصیلات بتائے بغیر خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا ۔

کشمیر پاکستان اور ہندوستان کے درمیان تنازعے کی وجہ بنا ہوا ہے اور دونوں ممالک اس مسئلے پر جنگیں بھی لڑ چکے ہیں۔

اس حصے سے مزید

آئی ایس سے نبرد آزما شامی باغیوں کی مدد کے بل پر اوباما کے دستخط

اس بل کے تحت امریکی فوج کو شام کے باغیوں کو اسلحے کی فراہمی اور انہیں تربیت دینے کا اختیار حاصل ہوجائے گا۔

کشمیری رہنماؤں کا اسکاٹ لینڈ طرز کے ریفرنڈم کا مطالبہ

کشمیری رہنما سید عبدالرحمن گیلانی نے کہا ہے کہ ' آزادی منتخب کرنا بنیادی حق ہے جو کسی قوم سے چھینا نہیں جانا چاہیے '۔

اسکاٹ لینڈ کے عوام نے آزادی کا مطالبہ مسترد کردیا

آزادی کی مہم چلانے والی اسکاٹش نیشنل پارٹی نے برطانیہ سے آزادی کے لیے منعقدہ تاریخی ریفرنڈم میں اپنی شکست تسلیم کرلی ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

رودرہیم کا سبق

بچوں پر ہونیوالے جنسی تشدد پر ہماری شرمندگی کی سمت غلط ہے۔ شرم کی بات تو یہ ہے کہ ہم اس کو روکنے کی کوشش نہ کریں-

رکاوٹیں توڑ دو

اشرافیہ تعلیمی نظام کا بیڑہ غرق کرنے پر تلی ہوئی ہے جو خاص طور سے 1970ء کی دہائی کے بعد سے بد سے بدتر ہورہاہے۔

بلاگ

مووی ریویو: دختر -- دلوں کو چُھو لینے والی کہانی

اپنی تمام تر خوبیوں اور کچھ خامیوں کے ساتھ اس فلم کو پاکستانی نکتہ نگاہ سے پیش کیا گیا ہے۔

پھر وہی ڈیموں پر بحث

ڈیموں سے زراعت کے لیے پانی ملتا ہے، پانی پر کنٹرول سے بجلی پیدا کی جاسکتی ہے اور توانائی بحران ختم کیا جاسکتا ہے۔

شاہد آفریدی دوبارہ کپتان، ایک قدم آگے، دو قدم پیچھے

اس بات کی ضمانت کون دے گا کہ ماضی کی طرح وقار یونس اور شاہد آفریدی کے مفادات میں ٹکراؤ پیدا نہیں ہوگا۔

وارے نیارے ہیں بے ضمیروں کے

ماضی ہو یا حال، اربابِ اختیار و اقتدار کی رشوت اور بدعنوانی کے خلاف کھوکھلی بڑھکوں کی حیثیت محض لطیفوں سے زیادہ نہیں۔