02 اکتوبر, 2014 | 6 ذوالحجہ, 1435
ڈان نیوز پیپر

شام: حلب میں دھماکے سے 80 افراد ہلاک

شام میںسیکیورٹی اہلکار اور شہری حلب میں دھماکے کےمقام پر جمع ہیں۔ رائٹرز تصویر
شام میں سیکیورٹی اہلکار اور شہری حلب میں دھماکے کےمقام پر جمع ہیں۔ رائٹرز تصویر

حلب:  شام کے شہر حلب کی ایک یونیورسٹی میں ایک کے بعد ہونے والے دھماکوں میں 80 سے زائد افراد ہلاک ہوگئےہیں۔  منگل کے روز حلب کے گورنر محمد وحید عکاد اور یونیورسٹی  ہسپتال کے ذرائع نے ان ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے۔

' حلب یونیورسٹی میں طالبعلموں کو امتحان کے پہلے روز حملے کا نشانہ بنایا گیا جس میں 82 ہلاکتیں ہوئیں اور 160 سے زائد افراد زخمی ہوئےہیں،' عکاد نے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو فون پر بتایا۔

شام میں برطانیہ کی انسانی حقوق کی تنظیم نے کہا کم ازکم  52 افراد ہلاک ہوئے تھے لیکن بعد میں ان کی تعداد میں ڈرامائی انداز میں اضافہ ہوگیا۔

اس کیمپس میں طالبعلموں کے ساتھ ساتھ تیس ہزار افراد رہتے ہیں جو لڑائی کے بعد یہاں پناہ لینے پر مجبور تھے۔

طلبا کی جانب سے انٹرنیٹ پر ویڈیو بھی پوسٹ کی گئی ہے جہاں بچ جانے والے افراد کیمپس کی عمارت میں پناہ لینے پر مجبور ہیں۔

انسانی حقوق کے کارکنوں کے مطابق حکومتی جیٹ طیاروں کی جانب سے فائر کئے گئے میزائل ہلاکتوں کے ذمے دار ہیں۔ جبکہ فوجی ذرائع کا اصرار ہے کہ یہ زمین سے زمین تک مار کرنے والے وہ میزائل ہیں جو باغیوں نے فائر کئے اور نشانہ چوکنے پر یہاں آگرے تھے۔

آبزرویٹری کے مطابق، دھماکے آرکیٹیکچر مرکز کے قریب ہوئے۔

حکومتی ٹی وی نے کہا کہ ' دہشتگردوں نے دو راکٹ لانچ کئے ' جو حکومت کے زیرِ کنٹرول علاقے میں واقع یونیورسٹی کمپلیکس میں گرے۔

اس حصے سے مزید

'مکہ کی تعمیر نو: ' تاریخی حقائق کو مٹا دیا گیا

ناقدین کےمطابق "یہ مکہ نہیں بلکہ اس سے الگ کوئی جگہ ہے، یہ ٹاور اور اس کی روشنیاں بالکل لاس ویگاس کا منظر پیش کرتی ہیں"۔

اسرائیل:غزہ جارحیت میں حصہ لینےوالےفوجیوں کی خودکشی

فوجی گولانی بریگیڈ کے افسران 50روزہ جنگ کے دوران وہ کارروائی کاحصہ تھے مگر اس کے سے نفسیاتی مسائل کا شکار ہوگئے تھے۔

سعودی لڑکیوں کے والدین کے خلاف مقدمات

ان لڑکیوں کے والدین نے انہیں اپنی مرضی سے شادی کا حق دینے سے انکار کردیا تھا، اس طرح کے 383 مقدمات دائر کیے جاچکے ہیں۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماؤں اور بچوں کے قاتل ہم

پاکستان سے کم فی کس آمدنی رکھنے والے ممالک پیدائش کے دوران ماؤں اور بچوں کی اموات پر قابو پا چکے ہیں۔

تبدیلی کا پیش خیمہ

اکثر ایسے بڑے واقعات پیش آتے ہیں جو تبدیلی کے عمل کو تیز کردیتے ہیں، مگر ایسے حالات کسی فرد کے پیدا کردہ نہیں ہوتے۔

بلاگ

!گو نواز گو

اس ملک میں پڑھے لکھے لوگوں کی قدر ہی نہیں۔ جب تک پڑھے لکھوں کو وی آئی پی پروٹوکول نہیں دیا جاتا یہ ملک ترقی نہیں کرسکتا

قدرتی آفات اور پاکستان

قدرتی آفات سے پہلے انتظامات پر ایک ڈالر جبکہ بعد میں سات ڈالر خرچ ہوتے ہیں، اس کے باوجود ہم پہلے سے انتظامات نہیں کرتے۔

مقابلہ خوب ہے

کوئی دنیا کے در در پر پھیلے ہمارے کشکول کی زیارت کرے، پھر اس میں خیرات ڈالنے والوں کو فتح کرنے کے ہمارے عزم بھی دیکھے۔

پاکستان میں ذہنی بیماریاں اور ہماری بے حسی

آخر ذہنی بیماریوں کے شکار کتنے اور لوگوں کو اپنے گھرانوں کی بے حسی، اور معاشرے کی جانب سے ٹھکرائے جانے کو جھیلنا پڑے گا؟