01 اگست, 2014 | 4 شوال, 1435
ڈان نیوز پیپر

اپوزیشن جماعتوں کا جمہوریت کے تحفظ کا عزم

اجلاس کے بعد مسلم لیگ ن کے صدر میاں نواز شریف دیگر اپوزیشن رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کررہے ہیں۔ پی پی آئی فوٹو۔
اجلاس کے بعد مسلم لیگ ن کے صدر میاں نواز شریف دیگر اپوزیشن رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کررہے ہیں۔ پی پی آئی فوٹو۔

رائے ونڈ: اپوزیشن جماعتوں نے بدھ کے روز جمہوریت کے تحفظ کا عزم اور بروقت انتخابات کا مطالبہ کردیا ہے۔

حزب اختلاف کی جماعتوں کے رائے ونڈ میں ہونے والے اجلاس میں جمہوریت کو پٹری سے اتارنے کی کوئی سازش کامیاب نہ ہونے دینے کا عزم کیا گیا۔

اجلاس میں شریک تمام جماعتوں اور رہنماؤں نے بروقت انتخابات کے انعقاد کا مطالبہ کیا اور عام انتخابات کا التوا کسی صورت برداشت نہ کرنے کا اعلان کیا۔

اجلاس میں ہر حال میں آئین اور قانون کی حکمرانی کا عزم بھی کیا گیا۔

اس سے قبل اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے میاں نواز شریف نے کہا کہ ان کی جماعت اقتدار کے لئے نہیں بلکہ جمہوریت کے لئے سرگرم ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ کسی کو جمہوریت پر شب خون مارنے کی اجازت نہیں دی جائے گی جبکہ عوام جمہوریت کے تحفظ کے لئے ڈٹ گئے ہیں۔

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ اگر پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) چارٹر آف ڈیموکریسی پر عمل کرتی تو حالات مختلف ہوتے۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ صورت حال حکومت کی ناکامی کا ثبوت ہے۔

جمیعت علمائے اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ تمام جماعتیں کسی بھی غیر آئینی اقدام کیخلاف بھرپور مزاحمت کریں گی۔

انہوں نے کہا کہ حکومت اب عام انتخابات میں تاخیر کے بجائے ان کے انعقاد کا  فوری اعلان کرے۔

امیر جماعت اسلامی سید منور حسن کے مطابق، غیر جمہوری قوتوں کو کوئی موقع فراہم نہیں کرنا چاہیئے۔

پختونخواہ ملی عوامی پارٹی کے سربراہ محمود خان اچکزئی کا کہنا تھا کہ سیاست میں 'مسخروں' کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔۔

کانفرنس میں طلال اکبر بگٹی، محمود خان اچکزئی، حامد ناصر چٹھہ، ہارون اختر، غلام مصطفی کھر سمیت اہم رہنماؤں نے شرکت کی۔

اس حصے سے مزید

رحیم یار خان: ماں بیٹی کو تیزاب سے جھلسا دیا گیا

پولیس نے آمنہ کے سابق شوہر احمد سمیت چار نامعلوم افراد کے خلاف مقدمہ درج کر کے کاروائی شروع کردی ہے۔

تمام غیر قانونی تقرریاں منسوخ کی جائیں: ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل

وزیراعظم کو لکھے گئے خط میں ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے مختلف اداروں کے سربراہوں کی تقرریوں پر اعتراضات اُٹھائے ہیں۔

ق لیگ، طاہر القادری پی ٹی آئی مارچ میں شامل ہو سکتے ہیں

ڈاکٹر قادری چوہدری شجاعت کے ذریعے پی ٹی آئی اور اپنے نمائندوں کے درمیان بات چیت کے حتمی نتائج کے منتظر۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (2)

Israr Muhammad
16 جنوری, 2013 20:51
شیح الاسلام کے مارچ کےحوالے سے عدالت اعظمۂ کی وضاحت کے بعد سپریم کورٹ کے وزیراعظم کے بارے حکم اور مارچ کے ربط حوالے سے جو شکوک وشبہات پیدا هوگئے تھے اب حتم هو چکے هیں اور آج تمام سیاسی جماعتوں کا ایک واضح اور مشترکہ موقف اس بات کی دلیل هے کۂ تمام پاکستانی انتخابات کے زریعے تبدیلی چاہتے هیں کسی دوسرے طریقے سے نہیں اور یۂ طے هوجکی هے کۂ پاکستان کے سیاسی قوتیں اور جمہوریت کا تسلسل چاہتے هیں البتہ ایک اور طرف سے بھی وضاحت لازمی هے تاکہ لوگوں کے دلوں انکے بارے میں جو خدشات هیں وه دور هو جائیں
Israr Muhammad
16 جنوری, 2013 20:54
شیح الاسلام کے مارچ کےحوالے سے عدالت اعظمۂ کی وضاحت کے بعد سپریم کورٹ کے وزیراعظم کے بارے حکم اور مارچ کے ربط حوالے سے جو شکوک وشبہات پیدا هوگئے تھے اب حتم هو چکے هیں اور آج تمام سیاسی جماعتوں کا ایک واضح اور مشترکہ موقف اس بات کی دلیل هےکۂ تمام پاکستانی انتخابات اور ووٹ کے زریعے تبدیلی چاہتے هیںکسی دوسرے طریقے سے نہیں اور یۂ طے هے کۂ پاکستان کے سیاسی قوتیں اور عوام جمہوریت کا تسلسل چاہتے هیں البتہ ایک اور طرف سے بھی وضاحت لازمی هے تاکہ لوگوں کے دلوں انکے بارے میں جو خدشات هیں وه دور هو جائیں
سروے
مقبول ترین
قلم کار

بجٹ اور صحت کا شعبہ

ایسا لگتا ہے کہ صحت کے بجٹ کی بڑھتی ہوئی ضروریات کیلئے عطیات دینے والے ملکوں کے پیسے پر زیادہ انحصار کیا جاتا ہے

جنگ اور ہوائی سفر

پرواز کرنے کا معجزہ، جو انسانی ذہانت کا خوشگوار مظہر ہے، انسان کے انتقامی جذبات اور خون کی پیاس کی نذر ہوگیا ہے

بلاگ

ساغر صدیقی : ایک دل شکستہ شاعر

وہ خوبصورت نظمیں لکھتے، پھر بلند آواز میں خالی نگاہوں سے پڑھتے، پھر ان کاغذات کو پھاڑ دیتے جن پر وہ نظمیں لکھی ہوتیں

پکوان کہانی: کابلی پلاؤ - شمال کی شان

گوشت میں پکے چاول اس خطے کے جنگجوؤں کی ذہنی مطابقت اور جسمانی ساخت کے لیے موزوں تھے۔

ایک پاکستانی صحافی کی امریکا یاترا

میں نے جب یہ پوچھا کے کیا وہ پاکستان جانا چاہے گا تو اس کا کہنا تھا کے ہاں مجھے پاکستان جانے کا بہت شوق ہے۔

مووی ریویو: 'کک' صرف سلمان خان کی فلم نہیں

باصلاحیت اداکاروں کے ساتھ فلم بنا کر ساجد ناڈیا والا نے خود کو ایک قابل ڈائریکٹر منوا لیا ہے۔