18 اپريل, 2014 | 17 جمادی الثانی, 1435
ڈان نیوز پیپر

اجمل پہاڑی کراچی جیل سے رہا

۔ فائل فوٹو
۔ فائل فوٹو

کراچی: اجمل الیاس پہاڑی جن پر بڑی تعداد میں مقدمات میں ملوث ہونے کا الزام ہے جمعہ کو کراچی کی جیل سے رہا کردیا گیا۔

ڈی آئی جی جیل خانہ جات نے ان کی رہائی کی تصدیق کی اور کہا کہ انہیں مینٹیننس آف پبلک آرڈر (ایم پی او) کے تحت حراست میں رکھا گیا تھا۔

اس سے قبل 11 جنوری کو سندھ ہائی کورٹ میں اجمل پہاڑی نے ایم پی او کے تحت اپنی  مسلسل حراست کے خلاف درخواست دائر کی تھی۔

عدالت نے اس حوالے سے ایڈیشنل چیف سیکرٹری (ہوم) اور دیگر کو نوٹس جاری کیے تھے۔

درخواست گزرا نے کہا تھا کہ انہیں اٹھارہ مارچ سند و ہزار گیارہ میں گرفتار کیا تھا اور پندرہ فوجداری مقدمات میں ملوث پایا گیا تھا۔ اس کے بعد انہیں گیارہ مقدمات میں بری کیا گیا تھا اور باقی چار مقدمات میں ضمانت دے دی گئی تھی۔

انہوں نے کہا انہیں بیس ستمبر دو ہزار بارہ سے مغرب پاکستان مینٹیننس آف پبلک آرڈر آرڈیننس 1960 کے سیکشن تین-ایک کے تحت انہیں حراست میں رکھا گیا۔ – سٹاف رپورٹر

اس حصے سے مزید

ایم کیو ایم کا کارکنوں کے ماورائے عدالت قتل پر احتجاج

شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے متحدہ کے رہنماؤں نے تحفظ پاکستان آرڈیننس کو کالا قانون قرار دیا۔

علماء و مشائخ کنونشن میں مذہب کے نام پر ناانصافی کی مذمت

کنونشن میں حکومت پر زور دیا گیا کہ وہ ان افراد کے خلاف کارروائی کرے، جو شدت پسندی اور دیگر واقعات میں ملوث ہیں۔

خیرپور میں گیس پائپ لائن دھماکے سے تباہ

پولیس کے مطابق دھماکے کے بعد سندھ کے مختلف شہروں میں گیس کی فراہمی معطل ہوگئی ہے۔


تبصرے بند ہیں.
مقبول ترین
بلاگ

میانداد کا لازوال چھکا

جب بھی کوئی بیٹسمین مقابلے کی آخری گیند پر اپنی ٹیم کو چھکے کے ذریعے جتواتا ہے تو سب کو شارجہ ہی یاد آتا ہے۔

جمہوریت، سیکولر ازم اور مذہبی سیاسی جماعتیں

مذہب کے نام پر کوئی متفقہ سیاسی نظام بن ہی نہیں سکتا کیونکہ مذاہب کے درجنوں دھڑے کسی ایک ایشو پر متفق نہیں ہو سکتے۔

یکسانیت اور رنگا رنگی

یکسانیت جانی پہچانی بلکہ اطمینان بخش بھی ہوسکتی ہے، لیکن اس کا مطلب ہے چیلنج سے بچنا، جس کے بغیر کامیابی ممکن نہیں۔

میڈیا کے چٹخارے

پاکستانی میڈیا کو جتنی زیادہ آزادی ہے اسکی اپروچ اتنی ہی جانبدارانہ ہے، عوام کی پولرائزیشن میں میڈیا کا بہت بڑا ہاتھ ہے