22 ستمبر, 2014 | 26 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

کشمیریوں کو ایٹمی حملے کیلئے تیار رہنے کی ہدایات

لائن آف کنٹرول۔ فوٹو رائٹرز۔۔۔

سری نگر: ہندوستان کے زیر انتظام کشمیر میں حکام نے مکینوں کو ممکنہ ایٹمی جنگ کیلیے تیار رہنے کی وارننگ دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ بم پروف گھر بنانے کے ساتھ ساتھ دو ہفتوں کا پانی اور کھانے پینے کی اشیا جمع کرنے کی ہدایت بھی دی ہے۔

خطے میں اچانک اس ایٹمی حملے کی فی الحال کوئی وجوہات نہیں بتائی گئی ہیں تاہم حال ہی میں دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات اس وقت اس وقت کشیدہ صورتحال اکتیار کر گئے تھے جب لائن آف کنٹرول پر دونوں جانب سے سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کی گئی تھی۔

کشمیری پولیس نے یہ پیغام پیر کو گریٹر کشمیر اخبار میں چھپوایا تھا۔

نوٹس میں لوگوں کو مشورہ دیا گیا ہے کہ وہ بم پروف گھر بنانے کے ساتھ ساتھ کھانے پینے کی اشیا بھی جمع کر لیں۔

اس میں اس بات کا بھی مشورہ دیا گیا ہے کہ کیمیائی ہتھیاروں کے حملوں کی صورت میں سک طریقے سے خود کو محفوظ رکھا جا سکتا ہے۔

اس حوالے سے جب مقامی حکام سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے کوئی جواب نہیں دیا۔

اس حصے سے مزید

ہندوستان میں پہلا خواجہ سرا نیوز اینکر

ہندوستان ٹائمز کے مطابق 31 سالہ پدمنی پرکاش ریاست تامل ناڈو میں لوٹس نیوز سے وابستہ ہوئی ہیں

پاکستان میں لاپتہ انڈین نوجوان کی والدہ کا مودی کو خط

نہال انصاری کی والدہ فوزیہ انصاری نے نریندر مودی سے اپیل کی ہے کہ وہ ان کے بیٹے کی بحفاظت رہائی کیلیے کردار ادا کریں۔

نئی دہلی: کپڑوں کی نمائش میں پاکستانی تاجر لٹ گئے

دہلی میں جاری عالیشان پاکستان نمائش میں کپڑوں کے اسٹالز پر لوگوں کے ہجوم کی وجہ سے ایسے واقعات رونما ہوئے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مڑی تڑی باتیں اور مقاصد

چیزوں کو اپنی مرضی کے مطابق توڑ مروڑ کر پیش کرنے، اور غیر آئینی اقدامات سے پاکستان کے مسائل میں صرف اضافہ ہی ہوگا۔

ذمہ داری ضروری ہے

سرکلر ڈیٹ کے لاعلاج مرض کی بدولت عالمی مالیاتی ادارے ہمارے توانائی کے منصوبوں میں سرمایہ کاری میں دلچسپی نہیں رکھتے۔

بلاگ

خواب دو انقلابیوں کے

ایک انقلابی خود کو وزیر اعظم بنتا دیکھ رہا ہے تو دوسرا صدارتی محل میں مریدوں سے ہاتھ پر بوسے کروانے کے خواب دیکھ رہا ہے۔

کوئی ان سے نہیں کہتا۔۔۔

ریڈ زون کے محفوظ باسیو! ہمیں دہشت گردوں، ڈاکوؤں، چوروں، اغواکاروں، تمہاری افسر شاہی اور پولیس سے بچانے والا کوئی نہیں۔

بلوچ نیشنلزم میں زبان کا کردار

لسانی معاملات پر غیر دانشمندانہ طریقہ سے اصرار مزید ناراضگی اور پیچیدگیوں کا سبب بن سکتا ہے، جو شاید مناسب قدم نہیں۔

خواندگی کا عالمی دن اور پاکستان

تعلیم کو سرمایہ کاروں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے جن کے لیے تعلیم ایک جنس ہے جسے بیچ کر منافع کمایا جاسکتا ہے-