28 اگست, 2014 | 1 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

ترکی کی کرد باغیوں کو محفوظ انخلا کی ضمانت

ترکی کے وزیر اعظم طیب اردگان پارلیمنٹ سے خطاب کر رہے ہیں۔ فوٹو اے ایف پی۔۔۔

انقرہ: ترکی کے وزیر اعظم رجب طیب اردگان ان کی حکومت تین دہائیوں سے کرد باغیوں کے ساتھ جاری تنازع کو حل کرنے کیلیے پرعزم ہیں اور اگر باغی ملک چھوڑ کر جانا چاہتے ہیں تو ہم گارنٹی دیتے ہیں کہ انہیں انخلا محفوظ راستہ فراہم کیا جائے گا۔

اردگان نے پارلیمنٹ میں حکمران جماعت کے رہنماؤں سے خطاب میں کردستان ورکرز پارٹی(پی کے کے) کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اگر وہ مخلص اور سچے ہیں تو ہتھیار پھینک دیں۔

انہوں نے کہا کہ اگر آپ اس ملک میں نہیں رہنا چاہتے تو آپ جس ملک بھی جانا چاہیں جا سکتے ہیں، آپ کو اس کی مکمل آزادی ہے، ہم آپ کو ضمانت دیتے ہیں کہ ہم اپنی پوری کوشش کریں گے کہ جو کچھ ہماری سرحدوں پر ماضی میں ہو چکا ہے وہ دوبارہ نہ ہو۔

ترکی، ایران، شام اور عراق کے سرحدی علاقوں میں کرد اقلیت موجود ہے۔

ماضی میں جب پی کے کے نے شمالی عراق کی جانب جانے کوشش کی تھی تو اس وقت ان کا ترک سیکیورٹی فورسز سے تصادم ہوا تھا، شمالی عراق میں پی کے کے محفوظ ٹھکانے موجود ہیں۔

یاد رہے کہ حال ہی میں ترک خفیہ ادارے اور جیل میں قید کرد لیڈر عبداللہ اوجلان کے درمیان مذاکرات ہوئے تھے جس کا مقصد باغیوں کو غیر مسلح کرنا تھا۔

ترک میڈیا کا ماننا ہے کہ ان مذاکرات سے تقریباً تین دہائیوں سے جاری تنازع کو ختم کرنے میں مدد ملے گی جس میں اندازاً 45 ہزار سےزائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

اردگان کا یہ بیان ایک ایسے موقع پر منظر عام پر آیا ہے کہ جب سیکیورٹی ذرائع کے مطابق شام کی سرحد کے قریب کرد باغیوں اور ترک سیکیورٹی فورسز کے درمیان تصادم میں دو خواتین سمیت 6 باغی ہلاک ہو چکے ہیں۔

ترک وزیر اعظم نے کہا کہ ہم اپنے کرد بھائیوں کا کھلے دل سے استقبال کرتے ہیں، ہم نے ان پر نہیں بلکہ دہشت گردوں پر بمباری کی تھی۔

واضح رہے کہ کردستان ورکرز پارٹی کو ترکی سمیت عالمی برادری کے زیادہ تر ملکوں نے دہشت گرد گروہ قرار دیا ہوا ہے۔

اس حصے سے مزید

آئی ایس نے درجنوں شامی فوجی قتل کردیے

آئی ایس نے ٹوئیٹر پیغام میں تسلیم کیا ہے کہ اس نے شکست خوردہ دو سو فوجیوں کو ہلاک کیا ہے۔

غزہ جنگ میں اسرائیل ناکام، حماس فاتح

اسرائیل کہتا تھا کہ اسے غیرمسلح ہونا ہوگا،اسرائیل کا کہنا تھا کہ اسے جڑ سے مٹا دیں گے، مگر ان کا خاتمہ نظر نہیں آرہا۔

عراق: کار بم دھماکے میں 15افراد ہلاک

عراقی دارلحکومت بغداد کے علاقے جدیدہ میں ہونے والے اس دھماکے میں 37 افراد زخمی بھی ہوئے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

متوازی سیاست

بعض لحاظ سے ان میں اور ان لوگوں میں کوئی بہت زیادہ فرق نہیں ہے جنھیِں وہ ہٹانا چاہتے ہیں-

انتخابی اصلاحات کی فوری ضرورت

پاکستان میں انتخابی عمل کوشفاف اور غیر متنازعہ بنانے کے لیے انتخابات کے آٹھ شعبوں میں اصلاحات کی ضرورت ہے۔

بلاگ

پاکستان کی نوجوان نسل اور غیرت بریگیڈ

"فحاشی" ایک دماغی بیماری ہے جس کا شکار ذہن عورت کو گھر کی دہلیز سے باہر دیکھ کر شدید 'صدمے' کا شکار ہو جاتا ہے۔

ڈی چوک، گدھا اور نا تجربہ کار حجام

آپ کے لیڈر رہیں یا چلے جائیں، یا رسی سے گدھا بندھا ہو یا نہیں، لیکن کسی نا تجربہ کار شخص کو اپنی حجامت مت بنانے دیجئے گا

دھرنے بمقابلہ جمہوریت

جمہوریت میں ہر بندے کی رائے برابر کی اہمیت رکھتی ہے۔ ممکن ہے کہ وہ سیاست دان بھی منتخب ہوجائیں، جو لیڈرشپ کے قابل نہیں۔

آزادی کے سائیڈ افیکٹس

اس قوم کا مزید آزادی کی بات کرنا بہت حیران کن ہے۔ یہ قوم تو آزادی کے سائیڈ افیکٹس کا شکار ہے۔