23 اگست, 2014 | 26 شوال, 1435
ڈان نیوز پیپر

الیکشن کمیشن کی انتخابی ضابطہ اخلاق کی حتمی منظوری

فائل فوٹو۔۔

اسلام آباد : الیکشن کمیشن نے انتخابی اصلاحات بل کے مسودے کی منظوری دے دی ہے۔

ڈان نیوز کے مطابق بدھ کے روز اسلام آباد میں چیف الیکشن کمیشنر کی زیر صدارت الیکشن کمیشن کا اہم اجلاس ہوا۔

میٹنگ کے بعد میڈیا کو بریفنگ میں ڈی جی الیکشن کمیشن شیرافگن نے بتایا کہ بل میں ووٹوں کی خرید و فروحت، پولنگ سٹیشنوں پر قبضہ اور ووٹروں کو ہراساں کرنے میں ملوث افراد کیلئےایک لاکھ روپے جرمانہ اور پانچ سال قید کی سزا تجویز کی گئی ہے۔

قومی اسمبلی کے امیدوار کی سیکورٹی فیس 4ہزار سے 50 ہزار جبکہ صوبائی اسمبلی کے امیدوار کی سیکورٹی فیس 2ہزار سے بڑھاکر25ہزار روپے کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔

اجلاس میں سپریم کورٹ کے لازمی ووٹنگ اور واضح اکثریت سے متعلق  فیصلے پر عملدرامد کیلئے وزارت قانون کو قانون سازی کی سفارش کی گئی۔

ڈی جی الیکشن کمیشن نے بتایا کہ دوہری شہریت کی وجہ سے نااہل اور مستعفی ہونے والے اراکین کی تفصیلات سپریم کورٹ میں پیش کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

اجلاس میں گیارہ نئی سیاسی جماعتوں کی رجسٹریشن، سولہ جماعتوں کو انتخابی نشانات الاٹ کرنے اور انتخابی ضابطہ اخلاق کی حتمی منظوری بھی دی گئی۔

کراچی میں ووٹ شماری

 ڈی جی الیکشن کمیشن شیرافگن نے کہا کہ کراچی میں ووٹوں کی تصدیق کا عمل جاری ہے جو دس مارچ تک مکمل کرلیا جائےگا۔

انہوں نے کہا کہ آئین کی شق 218 کے تحت الیکشن کمیشن صاف وشفاف انتخابات کے انعقاد کیلئے ہرقسم کے اقدامات اٹھاسکتا ہے۔

 دوسری جانب سینیٹ کو وزارت قانون کی جانب سے تحریری جواب میں بتایا گیا کہ الیکشن کمیشن نے انتخابات کیلئے 5 ارب 9 کروڑ 99 لاکھ 62 ہزار روپے کی اضافی گرانٹ مانگی ہے۔

 انتخابات کے دوران الاوٴنسز کی مد میں 1 ارب 26 کروڑ روپے خرچ کئے جائیں گے، انتخابی سامان کی نقل و حمل پر 48 کروڑ روپے، تشہیری اخراجات 45 کروڑ جبکہ عملے کا اعزازیہ 9 کروڑ روپے ہوگا۔ انتخابی سامان کی خریداری پر 14 کروڑ 80 لاکھ روپے، بیلٹ باکس اور ووٹنگ اسکرین کی خریداری پر 21 کروڑ 50 لاکھ روپے خرچ کئے جائیں گے۔

اس حصے سے مزید

'وزیراعظم ممکنہ اندرونی بغاوت سے خبردار رہیں'

حکمران جماعت کی بھاری اکثریت کے باوجود پارٹی میں موجود 'میر جعفر و میر صادق' سے خطرہ ہے، جماعت اسلامی

پٹرولیم مصنوعات میں چار فیصد تک کمی کا امکان

سیاسی بحران میں عوامی حمایت حاصل کرنے کے لیے حکومت عالمی سطح پر قیمتوں میں کمی مکمل طور پر صارفین کو منتقل کرسکتی ہے۔

آئندہ 48 گھنٹے’حساس‘ ہیں، وفاقی وزیر داخلہ

چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ فوج کو اس آزمائش سے نکالیں اور آپریشن کی طرف ان کو لے کر جائیں جہاں ان کی ضرورت ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

کچھ جوابات

وزیر اعظم کا اعلان کردہ کمیشن مسئلے سلجھانے کے بجائے زیادہ الجھا دے گا۔

بڑھتی مایوسی

مایوسی تب اور بڑھتی ہے جب عوام دیکھتے ہیں کہ حکمران عوامی پیسے سے اپنے کام چلانے میں شرم بھی محسوس نہیں کرتے۔

بلاگ

پکوان کہانی : شاہی قورمہ

جو اکبر اعظم کے شاہی باورچی خانے کی نگرانی میں راجپوت خانساماؤں کے تجربات کا نتیجہ ہے۔

پاکستان ایک "ساس" کی نظر سے

68 سالہ جین والر کو پاکستان بہت پسند آیا، اتنا زیادہ کہ بقول ان کے مجھے پاکستان سے محبت ہوگئی ہے۔

مووی ریویو: گارڈینز آف گیلیکسی ایک ویژول ٹریٹ ہے

جو یادوں کے ایسے دور میں لے جاتی ہے جب ایکشن کے بجائے مزاح کسی کامک کا سرمایہ اور اسے بیان کرنے کا ذریعہ ہوا کرتا تھا۔

اب مارشل لاء کیوں ناممکن؟

ایوب، ضیاء اور مشرّف، تینوں ہی مغربی قوّتوں کے جغرافیائی سیاسی کھیلوں میں اسٹریٹجک کردار کے بدلے جیتے تھے۔