18 ستمبر, 2014 | 22 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

قادری، وفاقی حکومت کے درمیان معاہدہ عدالت میں چیلنج

ڈاکٹر طاہرالقادری انتہائی بائیں جانب نظر آرہے ہیں جبکہ حکومتی مذاکراتی ٹیم کے اراکین میں سید مشاہد حسین، قمرزمان کائرہ اور فاروق ایچ نائیک نمایاں ہیں۔ اے ایف پی تصویر
ڈاکٹر طاہرالقادری انتہائی بائیں جانب نظر آرہے ہیں جبکہ حکومتی مذاکراتی ٹیم کے اراکین میں سید مشاہد حسین، قمرزمان کائرہ اور فاروق ایچ نائیک نمایاں ہیں۔ اے ایف پی تصویر

اسلام آباد: وفاقی حکومت اور تحریک منہاج القرآن کے سربراہ ڈاکٹر طاہرالقادری کے درمیان ہونے والے معاہدے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا گیا ہے۔

 یاد رہے کہ ڈاکٹر طاہرالقادری اور حکومتی وفد کے درمیان کامیاب مذاکرات کے بعد ایک معاہدہ طے پاگیا تھا جسکے بعد تحریک کے سربراہ نے لانگ مارچ ختم کرنے کا اعلان کیا تھا۔

 درخواست گزار شاہد اورکزئی نے مؤقف اختیار کیا ہے کہ ایک غیر ملکی کے ساتھ معاہدہ کرکے وفاق نے اپنے انتظامی اختیارات سے تجاوز کیا ہے۔

 انکا کہنا ہے کہ صدر پاکستان کی اجازت کے بغیر وفاق کو کسی معاہدے کی اجازت نہیں ہے۔

 شاہد اورکزئی نے استدعا کی ہے کہ عدالت معاہدے کو کالعدم قرار دے۔

 درخواست میں طاہرالقادری اور حکومت کو فریق بنایا گیا ہے۔

اس حصے سے مزید

دھرنوں کے شرکا کے تحفظ کے لیے مجسٹریٹ نظام بحال

جسٹس اطہر من اللہ نے یہ حکم پی ٹی آئی سیکرٹری جنرل کی جانب سے مظاہرین کے پرامن رہنے کی یقین دہانی کے بعد جاری کیا۔

رحمن ملک کا جہاز سے اتارے جانے پر دہشت گردی کے مقدمہ کا مطالبہ

پارلیمنٹ کےمشترکہ اجلاس میں انہوں نےمطالبہ کیاجبکہ دیگرارکان نےدھرنا دینے والوں کے ساتھ ساتھ حکومت پر بھی تنقید کی۔

عمران خان کو این اے 122 کے انتخابی ریکارڈ تک رسائی دینے کا فیصلہ

لاہور سے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 122 سے اسپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق نے عمران خان کو شکست دی تھی۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مزید جمہوریت

نظام لپیٹ دینے اور امپائر کی باتیں کرنے کے بجائے ہمارا مطالبہ صرف مزید جمہوریت ہونا چاہیے، کم جمہوریت نہیں۔

تبدیلی آگئی ہے

ملک میں شہری حقوق کی عدم موجودگی میں عوام اب وسیع تر بھلائی کا سوچنے کے بجائے اپنے اپنے مفاد کے لیے اقدامات کررہے ہیں۔

بلاگ

وارے نیارے ہیں بے ضمیروں کے

ماضی ہو یا حال، اربابِ اختیار و اقتدار کی رشوت اور بدعنوانی کے خلاف کھوکھلی بڑھکوں کی حیثیت محض لطیفوں سے زیادہ نہیں۔

کراچی میں فرقہ وارانہ دہشتگردی

کراچی ایک مرتبہ پھر فرقہ وارانہ دہشت گردی کی زد میں ہے اور روزانہ کوئی نہ کوئی بے گناہ سنی یا شیعہ اپنی جان گنوا رہا ہے۔

اجمل کے بغیر ورلڈ کپ جیتنا ممکن

خود کو ورلڈ کلاس باؤلنگ اٹیک کہنے والے ہمارے کرکٹ حکام کی پوری باؤلنگ کیا صرف اجمل کے گرد گھومتی ہے۔

کریچر - تھری ڈی: گوڈزیلا یا ڈیوی جونز کا کزن؟

یہ کہنا غلط نہ ہوگا بپاشا ہارر تھرلرز تک محدود ہوگئی ہیں جبکہ عمران عبّاس نے انکے گرد چکر کاٹنے کے سوا کچھ نہیں کیا۔