24 جولائ, 2014 | 25 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

ووٹرز تصدیقی عمل میں فوج کی عدم شمولیت کیخلاف احتجاج

صوبائی الیکشن کے دفتر کے باہر اپوزیشن جماعتوں کا احتجاج پی پی آئی فوٹو

 ڈان نیوز کے مطابق بدھ کے روز کراچی میں صوبائی الیکشن کمیشن کے دفتر کے باہر جماعت اسلامی، ن لیگ،  تحریک انصاف، سنی تحریک، جے یو پی، عوامی تحریک سمیت دیگر اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے احتجاجی دھرنا دیا گیا۔

 اس موقع پر رہنماؤں کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ کے احکامات کو نظر انداز کرکے ووٹرز کے تصدیقی عمل کو مشکوک بنایا گیا ہ

 مظاہرین کا کہنا تھا کہ چیف الیکشن کمشنر فخر الدین جی ابراہیم نےکراچی میں حلقہ بندیاں نا ہونے کے متعلق بیان دیکر توہین عدالت کی ہے۔

 اپوزیشن جماعتوں کا کہنا ہے کہ شہر میں امن وامان کے قیام کے لئے شفاف انتخابات ناگزیر ہیں۔

 اسکے علاوہ رہنماؤں نے چھبیس جنوری سے تین روز تک الیکشن کمیشن کے دفتر کے باہر احتجاجی دھرنا دینے کا بھی اعلان کیا۔

اس حصے سے مزید

'این آر او کے تحت پندرہ سال تک مارشل لاء نافذ نہیں ہو سکتا'

شہلا رضا نے انکشاف کیا ہے کہ امریکہ، برطانیہ ، یواے ای اور جنرل پرویز اشفاق کیانی نےبھی اس کی گارنٹی دی تھی۔

کراچی: فائرنگ کے مختلف واقعات میں پانچ افراد ہلاک

دوسری جانب گودھرا میں ایک پولیس مقابلے میں مشتبہ ملزمان کی فائرنگ سے اے ایس آئی ہلاک ہوگیا۔

کراچی: مائی کولاچی روڈ پر ٹرالر اور ڈمپر میں تصادم، تین زخمی

بدھ کے روز علی الصبح ہونے والی ہلکی بارش سے سڑک پر پھسلن بڑھ جانے سے ڈمپر اور ٹرالر بے قابو ہوکر ایک دوسرے سے ٹکرا گئے۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (1)

Israr Muhammad
23 جنوری, 2013 18:42
آجکل ملک کے اندر مک مکا کا بڑا چرچا هے ممکن یہاں بھی مک مکا اثرانداز هوا هو سپریم کورٹ کے احکامات بڑے واضح هیں پھر بھی "مشکل هے" والا جملہ معنی خیز هے اور ساتھ میں یہی جملہ الیکشن کمیشن کی کمزوری بھی ظاہر کرتی هے پہلے سارے ملک میں خلقۂ بندی اور اب خاموشی کیوں
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بے وجہ پوائنٹ اسکورنگ

ہوسکتا ہے عمران خان پی ایم ایل-ن کی حکومت گرانا چاہتے ہوں لیکن کیا وہ واقعی ملک اور اسکے جمہوری اداروں کے لئے خطرہ ہیں؟

بلاگ

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔

شکایتوں کا بن جو میرا دیس ہے

شکایتی ٹٹو زنده قوم کی نشانی ہوتے ہیں۔ مستقل شکایت کرتے رہنا اب ہماری پہچان بن چکا ہے۔

کھیلنے دو: گراؤنڈز کہاں ہیں؟

سیدھی سی بات ہے، ملائی تبھی زیادہ اور بہترین ہوگی جب دودھ زیادہ ہوگا-