15 ستمبر, 2014 | 19 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

پی ٹی آئی، جماعت اسلامی ن لیگ کے دھرنے میں شامل

چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان۔ فوٹو اے ایف پی
چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان۔ فوٹو اے ایف پی

لاہور:جماعت اسلامی (جے آئی)، مسلم لیگ نون اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے پارلیمنٹ ہاؤس کے سامنے دھرنے کیلئے اکھٹے بیٹھنے پر اتفاق کرلیا ہے۔

اتوار کو لاہور میں ہونے والی قومی کانفرنس میں مسلم لیگ نون، پی ٹی آئی، جماعت اسلامی اور دیگر سیاسی و مذہبی جماعتوں کے قائدین نے شرکت کی۔

کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مسلم لیگ نون کے رہنماء خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ جماعت اسلامی اور مسلم لیگ نون کے راستے اور منزل ایک ہے۔

انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی کی آئیڈیل سیاسی بصیرت سے تمام جماعتوں کو سیکھنا چاہیے۔

جماعت اسلامی کے سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ نے نون لیگ کے دھرنے کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ ان کی جماعت اس میں بھرپور شرکت کرے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ طاہر القادری اور حکومت کے درمیان مذاکرات کی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے۔

اس موقع پر کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان نے کہا کہ جتنا پیسہ اس قوم سے لوٹا گیا ہے اس کی مثال تاریخ میں نہیں ملتی۔

ان کا کہنا تھا کہ کرپشن کرنے کیلئے تمام کرپٹ جماعتیں حکومت کی اتحادی بن گئی ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ ملک میں اصل جمہوریت لانے کے لیے مورثی سیاست کو ختم کرنا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن کی مضبوطی کے لئے جو بھی دھرنا دے گا ان کی پارٹی اس کا ساتھ دے گی۔

پی ٹی آئی کے چیرمین کا کہنا تھا کہ اگر نگران وزیراعظم ان کی مشاورت سے نہ بنا تو ملک گیر احتجاج کیا جائے گا۔

اس حصے سے مزید

وزیر قانون اور آئی جی پنجاب کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ

درخواست میں کہا گیا تھا کہ ہائی کورٹ کے حکم کے باوجود پی ٹی آئی کے کارکنان کی گرفتاریوں سے عدالتی حکم کی توہین ہوئی ہے۔

مذہبی مدرسوں کے خلاف سازش کی مزاحمت کی جائے گی: وفاق المدارس

یہ بیان ڈاکٹر طاہرالقادری کے اس بیان کے تناظر میں جاری ہوا ہے، جس میں انہوں نے کہا تھا کہ وہ مدارس کو سیکولر بنا دیں گے۔

پنجاب میں تباہی پھیلانے کے بعد سیلابی ریلا سندھ کی جانب

فلڈ کمیشن کا کہنا ہے دریائے سندھ میں گدو کے مقام پر منگل کی شام اونچے درجے کے سیلاب کا امکان ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

باغیوں کی ضرورت ہے

موجودہ حکومت انتہائی قابل سول سرونٹس کو بھی صرف اس لیے ناپسند کرتی ہے، کیونکہ وہ درباریوں کی طرح نیازمندی نہیں دکھاتے۔

چھوٹے باغیچوں کی اہمیت

غریب خواتین کو لیز پر چھوٹے پلاٹ دیے جاسکتے ہیں، جہاں وہ اپنے گھر والوں کے لیے کھانے کی چیزیں اگا سکیں۔

بلاگ

جب خاموشی بہتر سمجھی جائے

اس بات کو تسلیم کرنا ہو گا کہ برطانوی پاکستانیوں کے پاس جنسی استحصال پر بات کرنے کے لیے آزادی نہیں ہے۔

نائنٹیز کا پاکستان - 6

اندازے کے مطابق اس دور میں پاکستانی فوج ہر ماہ اوسط ساڑھے سات کروڑ ڈالر ’مجاہدین‘ پر خرچ کر رہی تھی۔

ماضی کی جھلکیاں، میرانِ تالپورکے مقبرے

یہ دیکھ کر بہت افسوس ہوتا ہے کہ مزارات کافی خراب حالت میں ہیں۔ یہ بھی نہیں کہا جا سکتا کہ کس وقت دیواریں منہدم ہوجائیں۔

ٹیم کو محمد حفیظ کی ضرورت ہے

ٹی-20 اور ون ڈے، دوںوں ہی میں وہ سب سے اچھے آل راؤنڈر ہیں، اور یہاں وہ پاکستان کے لیے اپنی خدمات انجام دے سکتے ہیں۔